اہم خبریں

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک )سپریم کورٹ میں پانامہ کیس کی سماعت کے دوران جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے کہ سمجھتا ہوں عدالت کے باہر جو کچھ کیا جاچکابہت ہے،اب سب لوگ انتظار کریں،جس نے جو برا بھلا کہنا تھا کہہ دیا،سڑکوں پر جو ہونا تھا ہوچکا،اب فیصلے کا انتظار کریں، حکومت پر الزام نہیں پھر بھی حکومت پانامہ کا دفاع کر رہی ہے،کیس کو چلنے دیں سب انتظار کریں،سارے لوگ کمنٹری خود تک رکھیں اور فیصلے کا انتظار کریں۔پیر کو سپریم کورٹ کے جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں جسٹس اعجاز افضل خان، جسٹس گلزار احمد، جسٹس شیخ عظمت سعید اور جسٹس اعجاز الاحسن پر مشتمل پانچ رکنی بینچ نے امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق، چیئرمین تحریک انصاف عمران خان، سربراہ عوامی مسلم لیگ شیخ رشید احمد اور طارق اسد ایڈووکیٹ کی جانب سے وزیراعظم نوازشریف اور ان کے خاندان کے افراد کی آف شور کمپنیوں کی تحقیقات کے لئے دائر درخواستوں پر سماعت کی۔سماعت شروع ہوئی تو جماعت اسلامی کے وکیل توفیق آصف نے کہا کہ گذشتہ سماعت کے سوالات سے میڈیا پر تاثر ملا جیسے عدالت فیصلہ کرچکی ہے۔جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ ہم سوالات صرف سمجھنے کیلئے پوچھتے ہیں سوالات فیصلہ نہیں ہوتے،کیا وزیراعظم کی تقریر پارلیمانی کارروائی کا حصہ تھی؟،توفیق آصف نے جواب دیا کہ وزیراعظم کی تقریر اسمبلی ایجنڈے کا حصہ نہیں تھی،استحقاق آئین اور قانون کے مطابق ہی دیا جاسکتا ہے،قواعد کے مطابق پرائیویٹ ممبر ڈے منگل کو ہوتاہے،اجلاس نہ ہوتو پرائیویٹ ممبر ڈے اگلے روز منتقل ہوجاتاہے۔جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہا کہ کیا اسپیکر کو اختیار نہیں کہ وہ ان قواعد کو معطل کرسکے؟،اسپیکر نے وزیراعظم کو تقریر کی اجازت نہیں دی تھی؟۔توفیق آصف نے کہاکہ وزیراعظم نے ذاتی وضاحت دینی تھی تو ایجنڈے میں شامل ہوناضروری تھا۔جسٹس گلزاراحمد نے پوچھا کیاوزیراعظم کی تقریر پر کسی نے اعتراض کیا؟،توفیق آصف نے کہاکہ اپوزیشن نے تقریر کے بعد واک آﺅٹ کیا۔جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہا کہ توفیق آصف آپ آرٹیکل 69پڑھیں اس پر دلائل دیں،اس معاملے کو آرٹیکل69مکمل کر رہاہے،جس پر توفیق آصف نے کہاکہ وزیراعظم کی تقریر آرٹیکل69کے زمرے میں نہیں آتی،وزیراعظم کی تقریر ذاتی الزامات کے جواب میں تھی۔جسٹس اعجازالحسن نے کہاکہ اگر قواعد کی خلاف ورزی ہوئی تو کیا آپ کے اراکین نے آواز اٹھائی تھی؟،توفیق آصف نے کہاکہ اپوزیشن نے خطاب کے بعد بائیکاٹ کیا تھا۔جسٹس گلزار احمد نے کہاکہ کیا وزیراعظم کی تقریر ریکارڈ سے حذف کی گئی،توفیق آصف نے کہا کہ وزیراعظم کی تقریر ریکارڈ کا حصہ ہے،تقریر کارروائی کا حصہ ہے لیکن اس کو استحاق حاصل نہیں،وزیراعظم نے تقریر پیر کے روز کی اسپیکر قواعد کو منگل کے روز معطل کرسکتا ہے۔جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہاکہ کیا جس دن گوشت کا ناغہ ہے اس دن تقریر نہیں ہوسکتی،توفیق آصف نے پارلیمانی استحقاق پر آسٹریلوی دانشور کا آرٹیکل پیش کیا۔جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہاکہ یہ کوئی بریگزٹ کی دستاویز ہے جو ہمیں پیش کی گئی،توفیق آصف نے وزیراعظم کی اسمبلی تقریر کا ریکارڈ طلب کرنے کی استدعا کی جس پر جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا تقریر کے متن سے کسی کا اختلاف نہیں تو ریکارڈ کیوں منگوایا جائے،توفیق آصف نے کہا کہ ممکن ہے ترجمہ کرتے وقت کوئی غلطی ہوگئی ہو،جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ وزیراعظم کی تقریر اردو زبان میں تھی،جماعت اسلامی کے وکیل توفیق آصف نے کہا کہ وزیراعظم کی تقریر اہم ثبوت ہے۔جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہا کہ کیا ہم یہاں شواہد ریکارڈ کر رہے ہیں؟،توفیق آصف نے کہا کہ عدالت چاہے تو شواہد ریکارڈ کرسکتی ہے۔ توفیق آصف نے کہا کہ وزیراعظم نے اسپیکر کو جودستاویزات دیں،وہ طلب کی جائیں،وزیراعظم نے خود کہا دودھ کا دودھ پانی کا پانی ہونا چاہیے۔جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ آپ عدالت کو بتادیں وزیراعظم نے کیا کیا چھپایا ہے۔جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ وزیراعظم نے اسپیکر کو تقاریر پیش کی تھیں۔جسٹس آصف سعیدکھوسہ نے کہا کہ وزیراعظم نے ایف بی آر کا ریکارڈ بھی پیش کیا تھا،وہ ریکارڈ عدالت کے سامنے آچکا ہے۔جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہا کہ آپ ایک نکتہ اٹھاتے ہیں پھر اسے خود ہی واپس لے لیتے ہیں۔توفیق آصف نے کہاکہ وزیراعظم نے تقریر میں منی ٹریل پیش نہیں کی۔جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ وزیراعظم کے وکیل نے کہا فلیٹس نوازشریف کے نہیں وکیل نے کہا اس لیے منی ٹریل نہیں دے سکتے،توفیق آصف نے کہا کہ وزیراعظم نے خود کہا دستاویزات میںٹھوس ثبوتوں کے انبار ہیں۔جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ وزیراعظم کے وکیل نے ثبوتوں کی جگہ قانونی نکات کا انبارلگادیا،وزیراعظم کے وکیل نے ثبوتوں کا ذکر ہی نہیں کیا،جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہا کہ لگتا ہے باتیں دہرا کر آپ سماعت میں تاخیر چاہتے ہیں،توفیق آصف نے کہا کہ عدالت اجازت دے تو تقریر کے کچھ نکات پڑھنا چاہتا ہوں۔




پاکستان عوامی تحریک نے صوبائی حکومت کے خلاف احتجاجی تحریک کا اعلان کر دیا
23 جنوری‬‮ 2017
لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان عوامی تحریک نے صوبائی حکومت کے خلاف احتجاجی تحریک کا اعلان کر دیا ۔تفصےلات کے مطابق پاکستان عوامی تحریک نے سانحہ ماڈل ٹا ﺅن پر صوبائی حکومت کیخلاف 27جنوری سے احتجاج کا علان کر دیا ہے احتجاجی تحریک کے دوران پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری کارکنوں سے خطاب بھی کریں گے خرم نواز گنڈا پور نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ کرپٹ حکمرانوں کو انجام تک پہنچانے کیلئے جدوجہد جاری رکھیں گے ۔


پریانکا کا عملی سیاست میں حصہ لینے کا اعلان
23 جنوری‬‮ 2017
نئی دہلی (روزنامہ اوصاف ) سابق بھارتی وزیراعظم راجیو گاندھی کی بیٹی پریانکا گاندھی نے عملی سیاست میں حصہ لینے کا فیصلہ کرلیا۔بھارتی ذرائع ابلاغ میں جاری خبروں کے مطابق سابق بھارتی وزیراعظم راجیو گاندھی کی بیٹی پریانکا گاندھی نے عملی سیاست میں حصہ لینے کا فیصلہ کیا ہے۔بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ حال ہی میں اترپردیش میں کانگریس اور سماج وادی پارٹی کے درمیان کامیاب انتخابی اتحاد کے پیچھے بھی پریا نکا گاندھی کا نام لیا جارہاہے۔پارٹی ذرائع کے مطابق اس اتحاد کیلئے مذاکرات میں پریانکا گاندھی نے کلیدی کردار ادا کیاہے اوریوں انہوں نے عملی سیاست میں باضاطہ طورانٹری کیلئے گرین سگنل دیدیاہے۔کانگریس اس وقت مشکل صورتحال سے دوچار ہے اورکسی بھی ریاست میں وہ اکیلے الیکشن لڑنے کی پوزیشن میں نہیں۔ ذرائع کے مطابق آئندہ انتخابات میں پریانکا گاندھی فعال کردار ادا کریں گی۔واضح رہے کہ پریانکا کا بھائی راہول بھی پارٹی کے پلیٹ فارم سے عملی سیاست کررہے ہیں تاہم ابھی تک وہ کانگریس کی نیا پار کرانے میں کامیاب نہیں ہوسکے ہیں۔


پاکستان سپورٹس بورڈ نے دوسری قائد اعظم بین الصوبائی گیمز کے انعقاد کیلئے وفاقی حکومت سے 169ملین روپے کا بجٹ مانگ لیا
23 جنوری‬‮ 2017
اسلام آبادٟسپورٹس رپورٹرٞپاکستان سپورٹس بورڈ نے دوسری قائد اعظم بین الصوبائی گیمز کے انعقاد کیلئے وفاقی حکومت سے 169ملین روپے کا بجٹ مانگ لیا ، رواں سال اپریل میں منعقد ہونیوالی گیمز میں مردوں کے 15اور خواتین کی 12کھیلوں کو رکھا گیا ہے جس میں ملک بھر سے تین ہزار سے زائد اتھلیٹس اور آفیشلز شرکت کرینگے ۔ دوسری قائد اعظم بین الصوبائی گیمز کی تیاریوں کے حوالے سے گزشتہ روز اجلاس پاکستان سپورٹس بورڈ کے ڈائریکٹرجنرل اختر نواز گنجیرا کی صدارت میں سپورٹس بورڈ میں ہوا جس میں مختلف شعبوں کے ڈپٹی ڈائریکٹر جنرلز، ڈائریکٹرز اور دیگر افسران نے شرکت کی ۔ اجلاس میں ڈائریکٹر نیشنل فیڈریشنز اور کوارڈنیشن اعظم ڈار نے قا ئد اعظم گیمز کے کے انعقاد کے حوالے سے شرکا کو تفصیلی بریفنگ دی جس کی روشنی میں گیمز کے انعقاد کیلئے پلان آف ایکشن ترتیب دیا گیا ۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ قائد اعظم گیمز کے کامیاب انعقاد کے لئے صوبائی سپورٹس بورڈز کے حکام کا بھی رواں ماہ اجلاس بلایا جائیگا اور انہیں گیمز کے انتظامات اور تیاریوں کے حوالے سے بریفنگ دی جائے گی جبکہ اسی اجلاس میں کھیلوں کے ڈسپلنز ، ایونٹس ، وینوز ، شیڈول اور دستے کی تعداد کو حتمی شکل دی جائے گی ۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں گیمز کے انعقاد کیلئے اٹھنے والے اخراجات کا بھی جائزہ لیا گیا ، شرکا کو بتایا گیا کہ گیمز پر 16کروڑ90لاکھ روپے کے اخراجات آئیں گے جس پر فیصلہ کیا گیا کہ پاکستان سپورٹس بورڈ کا ایک وفد پاکستان سپورٹس بورڈ کے ڈائریکٹر جنرل اختر نواز گجیرا کی سربراہی میں جلد وفاقی وزیر منصوبہ بندی ڈاکٹر احسن اقبال سے ملاقات کرئے گا اور انہیں قائد اعظم گیمز کے انتظامات اور اٹھنے والے اخراجات پر تفصیلی بریفنگ دے گا ۔گیمز میں مردوں اور خواتین کی کھیلوں میں اتھلیٹکس، بیڈمنٹن ، باسکٹ بال ، فٹ بال ، ہاکی ، جوڈو، کراٹے ، سکواش، ٹیبل ٹینس، تائیکوانڈو، ٹنس اور والی بال رکھے گئے ہیں جبکہ باسکٹ بال ، ویٹ لفٹنگ اور ریسلنگ میں صرف مینز ایونٹ ہی منعقد کئے جائینگے ۔اس ضمن میں رابطہ کرنے پر ڈائریکٹر نیشنل فیڈریشنز اور کوارڈنیشن اعظم ڈار کا کہنا تھا کہ دوسری قائد اعظم گیمز کے حوالے سے تمام معاملات کو جلد حتمی شکل دیدی جائے گی ، گیمز میں شاندار کارکردگی دکھانے والے اور نمایاں پوزیشنز حاصل کرنیوالے اتھلیٹس کو کیش انعامات دینے کیساتھ ساتھ ان کی حوصلہ افزائی کیلئے با صلاحیت اتھلیٹس کو مختلف کھیلوں کے قومی کیمپس میں بھی مدعو کیا جائیگا تاکہ ان کی صلاحیتوں کو مزید نکھارا جا سکے ۔ اعظم ڈار کا کہنا تھا کہ قائد اعظم گیمز کے شاندار انعقاد کیلئے پاکستان سپورٹس بورڈ کے ڈائریکٹر جنرل اختر نواز گنجیرا کی سربراہی میں مختلف کمیٹیاں بھی تشکیل دی گئیں ہیں جبکہ گیمز میں مردوں کے 15اورخواتین کی 12کھیلیں گیمز میں شامل کرنے پر غور کیا گیا ہے۔


”کون بنے گا کروڑ پتی“ امیتابھ آو¿ٹ رنیبر اِن
23 جنوری‬‮ 2017
ممبئی(مانیٹرنگ ڈیسک ) بھارت کے مشہور رئیلٹی شو”کون بنے کا کروڑ پتی“ کے سیزن 9 میں میگا اسٹار امیتابھ بچن کی جگہ نوجوان اداکار رنبیر کپور میزبانی کے فرائض سر انجام دیں گے۔کوئز پروگرام ”کون بنے گا کروڑ پتی“ بھارت سمیت دنیا بھر میں مشہور ہے جس میں مشہور اداکاروں کے علاوہ عام افراد بھی شرکت کرتے ہیں جب کہ شو کی میزبانی کے فرائض میگا اسٹار امیتابھ بچن اور شاہ رخ خان بھی سر انجام دے چکے ہیں لیکن اب شو میزبانی کے لیے نوجوان اداکار کا نام سامنے آیا ہے۔بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق نجی ٹی وی چینل کی انتظامیہ مشہور شو”کون بنے گا کروڑ پتی“ کو ایک بار پھر شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے جب کہ شو کی میزبانی امیتابھ بچن کی بجائے رنبیر کپور کریں گے تاہم رنبیر کی فلمی مصروفیات کے باعث شو رواں سال کے اواخر میں شروع کیا جائے گا۔


دو شخصیات کی دولت 11 ملین غریبوں کے برابر
20 جنوری‬‮ 2017
ٹورنٹو(روزنامہ اوصاف)انٹرنیشنل ایڈ آرگنائزیشنز کے ایک گروپ آکس فیم کے مطابق کینیڈا کی صرف دو کاروباری شخصیات ڈیوڈ ٹھامسن اور گیلن ویسٹن سینےئر کی مجموعی دولت کا تخمینہ 11 ملین کینیڈین غریبوں کی مجموعی دولت کے برابر لگایا گیا ہے۔اسی رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ دنیا کی آٹھ امیر ترین شخصیات کی مجموعی دولت دنیا کی نصف غریب ترین آبادی کی مجموعی دولت کے برابر ہے، اس رپورٹ میں دولت اور آمدنی کے فرق کو بھی واضح کیا گیا ہے۔اس کے مطابق دولت تمام قرضوں اور واجب الادا رقوم کو منہا کرنے کے بعد بچ جانے والی رقم ہے جو بینکوں میں محفوظ رہتی ہے۔ جب کہ آمدنی کسی شخص کے ایک مخصوص عرصہ میں بنائے گئے یا حاصل کئے گئے تمام اثاثوں پر مشتمل ہوتی ہے۔کسی شخص کا روزگار چلے جانے سے اس کی گزر اوقات اس کے لئے مسئلہ بن جاتی ہے جبکہ دولت کے سلسلہ میں ایسا نہیں ہوتا۔؎ایسے ممالک جہاں امیر اور غریب میں تفاوت زیادہ ہو وہاں جرائم کی شرح بھی زیادہ ہوتی ہے۔ دولت مند لوگ حکومت کی ترجیحات تبدیل کرنے کی طاقت رکھتے ہیں۔ سماء / اے پی پی


انٹرنیٹ استعمال کرنے میں بھی چینی پہلے نمبر پر
23 جنوری‬‮ 2017
بیجنگ (مانیٹرنگ ڈیسک ) چین کے 695ملین افراد نے گذشتہ سال موبائل فون کے ذریعے انٹرنیٹ تک رسائی حاصل کی ، یہ تعداد چین کی کل آبادی کے نصف سے زیادہ ہے ، آن لائن فون استعمال کرنیوالے چینیوں کی تعداد میں گذشتہ تین سال کے مقابلے میں دس فیصد کااضافہ ہوا ہے ، چائنا نیٹ ورک انفارمیشن سینٹر ( سی آئی این آئی سی)کے مطابق گذشتہ سال ادائیگیوں کیلئے موبائل فون استعمال کرنے والوں کی تعداد 469ملین تک پہنچ گئی ، یہ 2015ءکے مقابلے میں 31.2فیصدزیادہ ہے ،چین میں نیٹ استعمال کرنیوالوں کی تعداد 731ملین ہے جو چین کی کل آبادی کا 53.2فیصد ہے ، یہ تعداد دنیا بھر میں انٹر نیٹ استعمال کرنیوالوں کی تعداد سے 3.1فیصد اور ایشیاءمیں نیٹ استعمال کرنیوالوں کے مقابلے میں 7.6فیصد زیادہ ہے ۔


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

تازہ ترین خبریں

کالم /بلاگ

مقبول ترین

دلچسپ و عجیب


اب آپ بھی اپنے کالمز ڈیلی اوصاف پر شیئر کر سکتے ہیں



     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved