عہد توڑنے کی سزا
  27  دسمبر‬‮  2016     |     اوصاف سپیشل

یہودیوں نے اللہ تعالیٰ کے ساتھ وعدہ کیا تھا کہ وہ ہفتے کے روز مچھلی کے شکار سے پرہیز کریں گے لیکن وہ اپنا وعدہ نبھانہ سکے تھے اور عہد شکنی کے مرتکب ہوئے تھے۔ انہوں نے عہد توڑ دیا تھا اور اللہ تعالیٰ نے ان کی شکلیں مسخ کر دی تھیں۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے صدقے میں ان کی امت کی ظاہرہ شکلیں مسخ نہیں کی جاتیں لیکن ان کا باطن ضرور مسخ کیا جاتا ہے۔ ایک انسان کا دل اگر بندر بن جائے تب اس کا جسم بندر کے جسم سے بھی بد تر ہو گا۔ دل ظاہرہ حسن و جمال اور خوبصورتی سے بڑھ کر معتبر حیثیت کا حامل ہے۔ شکلوں کو مسخ کرنے میں یہ حکمت کار فرما تھی کہ ایسے لوگ دوسروں کے لئے سامان عبرت بنتے تھے۔ عہد شکنی کی وجہ سے لاکھوں لوگوں کے باطن مسخ ہو چکے ہیں اور وہ گدھے اور سور بنے ہمارے ارد گرد موجود ہیں۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
80%
ٹھیک ہے
20%
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

اوصاف سپیشل

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved