کوفہ میں جب ایک سید زادہ فوت ہوگیا
  1  جنوری‬‮  2017     |     اوصاف سپیشل
کوفہ میں ایک سید زادہ فوت ہوگیا - ﺟﻨﺎﺯﮦ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻓﮧ ﮐﮯ ﺑﮍﮮ ﺑﮍﮮ ﻟﻮﮒ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﮯ۔ ﺳﺐ ﺳﺎﺗﮫ ﭼﻞ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﺭﮎ ﮔﯿﺎ۔ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﭼﻼ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻟﮍﮐﮯ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﺑﯿﺘﺎﺏ ﮨﻮ ﮐﺮ ﻧﮑﻞ ﭘﮍﯼ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﭙﮍﺍ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﺮ ﮐﮭﻮﻝ ﺩﯾﺎ۔ ﻋﻮﺭﺕ ﺷﺮﯾﻒ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺱ ﻣﯿﺖ ﮐﮯ ﺑﺎﭖ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﻧﮯ ﭼﻼ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﯾﮩﯿﮟ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﭼﻠﯽ ﺟﺎﺅ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﺑﺎﭖ ﻧﮯ ﻗﺴﻢ ﮐﮭﺎ ﻟﯽ ﮐﮧ"ﻟﻮﭦ ﺟﺎﺅ ﻭﺭﻧﮧ ﺗﺠﮭﮯ ﻃﻼﻕ۔" ﺟﺐ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﮭﺎﻟﯽ ﮐﮧ" ﺍﮔﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﻤﺎﺯ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻟﻮﭨﻮﮞ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺭﮮ ﻏﻼﻡ ﺁﺯﺍﺩ۔ ﻗﺴﻢ ﮐﮭﺎﺗﮯ ﮨﯽ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﺑﮍﯼ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﯽ ﮨﮯ ۔ ﺍﺏ ﺍﮔﺮ ﻋﻮﺭﺕ ﻣﯿﺖ ﮐﮯﺳﺎﺗﮫ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﮔﺎﮦ ﺗﮏ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﻃﻼﻕ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﻭﮦ ﻭﮨﯿﮟ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﻏﻼﻡ ﺁﺯﺍﺩ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ۔ ﺳﺐ ﻟﻮﮒ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﮨﻮﮔﺌﮯ ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺑﮍﮮ ﺑﮍﮮ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﺳﮯ ﺩﺭﺧﻮﺍﺳﺖ ﮐﯽ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﺴﺌﻠﮯ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﻞ ﺑﺘﺎﺋﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺳﺐ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺻﻮﺭﺕ ﺗﻮ ﺿﺮﻭﺭ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﯽ ۔ ﻣﺠﻤﻌﮯ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺍﺳﯽ ﻭﻗﺖ ﺍﯾﮏ ﻋﺎﻟﻢ ﺳﮯ ﺳﺎﺭﯼ ﺻﻮﺭﺕ ﺣﺎﻝ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﯽ ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﯿﺖ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁ ﮐﺮ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮧ ﻗﺴﻢ ﮐﺲ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﮐﮭﺎﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ﭼﺎﻧﭽﮧ ﻣﯿﺖ ﮐﮯ ﺑﺎﭖ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﺴﻢ ﺑﺘﺎﺩﯼ ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﺖ ﮐﻮ ﯾﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺎ ﺭﮨﻨﮯ ﺩﻭ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﻟﻮﮒ ﺍﺳﯽ ﺟﮕﮧ ﭘﺮ ﺻﻔﯿﮟ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﻧﻤﺎﺯ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﭘﮍﮪ ﻟﻮ ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﺱ ﺳﯿﺪ ﺯﺍﺩﮦ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﻭﮨﯿﮟ ﭘﺮ ﺍﺩﺍ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﻋﻮﺭﺕ ﯾﮩﯿﮟ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﮔﮭﺮ ﻟﻮﭦ ﺟﺎﺋﮯ ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻗﺴﻢ ﭘﻮﺭﯼ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻧﻤﺎﺯ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﺍﭘﺲ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﺩ ﮐﯽ ﻗﺴﻢ ﺑﮭﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮐﮧ ﺍﺳﮑﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﻭﮨﯿﮟ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮨﮯ ۔ ﺳﺐ ﻟﻮﮒ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺫﮨﺎﻧﺖ ﭘﺮ ﺍﺵ ﺍﺵ ﮐﺮ ﺍﭨﮭﮯ ﯾﮧ ﻋﺎﻟﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﮮ ﺍﻣﺎﻡ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﺩﻧﯿﺎ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﺑﻮ ﺣﻨﯿﻔﮧ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﺘﯽ ﮨﮯ

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
100%
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 




 انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مینں
loading...
loading...


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved