ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ایک بچے نے اپنے دادا سے پوچھ
  22  فروری‬‮  2017     |     اوصاف سپیشل

ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ایک بچے نے اپنے دادا سے پوچھا _"ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﮐﯿﺎ ﻗﯿﻤﺖ ﮨﮯ؟" ﺩﺍﺩﺍ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﭘﺘﮭﺮ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ... ﺍﺳﮑﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﺮﻭ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺳﮯ ﺑﯿﭽﻨﺎ ﻣﺖ... ﺑﭽﮯ ﻧﮯ ﻭﮦ ﭘﺘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﭘﮭﻞ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ ﺩﮐﮭﺎ ﮐﺮ ﻗﯿﻤﺖ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﯽ ﺗﻮ ﭘﮭﻞ ﺑﯿﭽﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﮯ ﭼﻤﮑﺪﺍﺭ ﭘﺘﮭﺮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﺗﻢ ﺑﺎﺭﮦ ﮐﯿﻨﻮ ﻟﮯ ﻟﻮ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﭘﺘﮭﺮ ﺩﮮ ﺩﻭ..... ﺑﭽﺎ ﺁﮔﮯ ﭼﻞ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﺳﺒﺰﯼ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﯿﺎ. ﺳﺒﺰﯼ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﺪﻟﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﻟﻮ ﮐﯽ ﺑﻮﺭﯼ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ...... ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺑﭽﺎ ﺍﯾﮏ ﺳﻨﺎﺭ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮔﯿﺎ. ﺳﻨﺎﺭ ﻧﮯ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﭻ ﭘﮍﺗﺎﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﯾﮏ ﻣﻠﯿﻦ ﮐﯽ ﭘﯿﺸﮑﺶ ﮐﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﭽﮯ ﻧﮯ ﭘﺘﮭﺮ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﺳﻨﺎﺭ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ... ﮐﮧ ﭼﻮﺑﯿﺲ ﻗﺮﺍﺕ ﮐﮯ ﺩﻭ ﺳﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﯿﭧ ﻟﮯ ﻟﻮ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﯾﮧ ﭘﺘﮭﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﮮ ﺩﻭ.... ﺑﭽﮯ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﺳﮯ ﺑﯿﭻ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ. ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺁﮔﮯ ﺑﭽﮯ ﮐﻮ ﻧﺎﯾﺎﺏ ﭘﺘﮭﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺩﮐﺎﻥ ﻧﻈﺮ ﺁﺋﯽ. ﺟﻮﮨﺮﯼ ﻧﮯ ﺑﭽﮯ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ "ﺗﻢ ﯾﮧ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺗﺮﯾﻦ ﺭﻭﺑﯽ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻟﯿﮯ؟" ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ ﺑﯿﭻ ﮐﺮ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﮑﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﺍﺩﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ... ﺑﭽﮧ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﭘﺲ ﺟﺎ ﮐﺮ ﺩﺍﺩﺍ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﺑﺘﺎﺋﯿﮟ؟ ﺩﺍﺩﺍ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ " ﺟﻮ ﺟﻮﺍﺏ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﯿﻨﻮ ﻓﺮﻭﺧﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ، ﺳﺒﺰﯼ ﻓﺮﻭﺧﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ، ﺳﻨﺎﺭ ﺍﻭﺭ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﭘﺘﮭﺮﻭﮞ ﮐﺎ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﮯ ﺩﯾﮯ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﭼﮭﭙﯽ ﮨﮯ." ﺗﻢ ﺍﯾﮏ ﻧﺎﯾﺎﺏ ﭘﺘﮭﺮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﻮ ﻟﯿﮑﻦ ﻟﻮﮒ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﻗﯿﻤﺖ ﺍﭘﻨﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﻟﮕﺎﯾﻨﮕﮯ. ﻟﯿﮑﻦ ﺗﻢ ﮔﮭﺒﺮﺍﻧﺎ ﻣﺖ، ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺿﺮﻭﺭ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ ﺟﻮ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﺍﺻﻞ ﻗﯿﻤﺖ ﺟﺎﻥ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ. ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭘﮑﻮ ﮐﻤﺘﺮ ﻣﺖ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ. ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﺟﮕﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮯ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
94%
ٹھیک ہے
6%
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

اوصاف سپیشل

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved