چلتی بس میں نکاح
  8  اپریل‬‮  2017     |     اوصاف سپیشل
لاہورسے بس کراچی جارہی تھی جب بس سٹیشن سے چل پڑی توفرنٹ سیٹ پربیٹھے ایک بزرگ جوبہت اچھے کپڑے پہنے ہوئے تھے کھڑے ہوگئے اورباقی مسافروں سے مخاطب ہوکرکہامیرے بھائیواوربہنو،میں کوئی بھکاری یاگداگرنہیں ہوں اللہ تعالیٰ نے مجھے اپنی نعمتوں سے نوازاہے مگرمیری بیوی ایک موذی مرض سے اللہ کوپیاری ہوگئی ،کچھ دن گزرے اورمیری فیکٹری میں آگ لگ گئی میں درآمداوربرآمدکاکاروبارکرتاہوں میراتیارشدہ سارامال جل کرخاکسترہوگیا۔پھرکچھ مدت گزری کہ مجھے دل کادورہ پڑارشتہ داروں نے جب یہ محسوس کیاکہ اس کے برے دن آنے لگے انہوں نے ہم سے رابطہ منقطع کرلیا۔ڈاکٹروں نے میرے بچنے کی ضمانت کم ہی دی ہے میری یہ جوان بیٹی ہے اس کاکوئی وارث نہیں رہے گاکوئی اس کے دامن عصمت کوتاتارنہ کرے یہی غم زیادہ کھائے جارہاہے اوراس شخص کی ہچکی بندھ گئی یہ جوانسال لڑکی جوپاس میں بیٹھی تھی اٹھی اورباپ کوسہارادے کرسیٹ پربٹھادیا۔بس کی پچھلی سیٹ سے آدمی کھڑاہوگیااورکہنے لگا،میرے 2بیٹے ہیں ایک ڈاکٹرہے اس کانکاح ہوچکاہے اوردوسرایہ جواس شخص کے آگے بیٹھاہواہے ۔انجینئرہے اس کے لیے دلہن کی تلاش ہے ۔میں اس بزرگ سے درخواست کرتاہوں کہ یہ اپنی بیٹی کانکاح میرے اس بیٹے سے کردے میں وعدہ کرتاہوں کہ اس بچی کوکبھی باپ کی کمی محسوس نہیں ہونے دوں گا۔لڑکاکھڑاہوگیااورکہاکہ مجھے رشتہ قبول ہے۔بس میں موجودایک مولوی صاحب کھڑے ہوکرکہنے لگے ’’یہ سفربہت مبارک سفرہے‘‘نکاح جیسامقدس عمل ہوجائے وہ بھی سفرمیں اس سے اچھی بات کیاہوگی؟؟اگرلوگوں کواعتراض نہ ہوتومیں نکاح پڑھادوں ’’سب کہنے لگے ‘‘ماشااللہ۔سبحا ن اللہ ۔الحمدللہ ۔وغیرہ وغیرہ‘‘اورمولوی صاحب نے نکاح پڑھادیا۔ ایک اورصاحب کھڑے ہوگئے اورکہنے لگے ،میں چھٹی پہ جارہاتھااپنے گھروالوں کے لیے لڈولے کرمگراس مبارک عمل کودیکھ کرسمجھتاہوں کہ لڈوادھرہی تقسیم کردیں ۔دلہن کے باپ سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا۔دلہن کے باپ نے ڈرائیورسے کہاڈرائیورمیاں 5منٹ کسی جگہ بس روک دیناتاکہ سب مل کرمنہ میٹھاکرلیں ،ڈرائیورنے کہاٹھیک ہے باباجی ۔مغرب کی نماز کے بعدجب اندھیراہونے لگاتولڑکی کے باپ نے ڈرائیورسے بس روکنے کوکہااورسب مسافرمل کرلڈوکھانے لگے ۔لڈوکھاتے ہی سب مسافرسوگئے ڈرائیوراورکنڈیکٹرجب نیندسے جاگے تواگلی صبح کے 8بجے تھے مگردلہن اوردولہاان کے دوباپ ،مولوی صاحب اورلڈوبانٹنے والابس سے غائب تھے اتناہی نہیں بلکہ کسی مسافرکے پاس گھڑی تھی نہ چین اورنہ ہی پیسے بلکہ کچھ بھی نہیں تھاان کویہ 6ممبرز کاگروپ مکمل طورپرلوٹ چکاتھا۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
71%
ٹھیک ہے
10%
کوئی رائے نہیں
1%
پسند ںہیں آئی
18%



 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





 انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مینں
loading...


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

اوصاف سپیشل

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved