عابدہ طوسی: جنگ ستمبر کی پہلی سویلین شہید
  17  اپریل‬‮  2017     |     اوصاف سپیشل
گوجرانوالہ (ویب ڈیسک ) عابدہ طوسی ستمبر 1965ء کی پاک بھارت جنگ کی پہلی سویلین شہید تھیں۔ 6 ستمبر 1965ء کے معرکہ حق و باطل کے اولین لمحوں کا ذکر ہے کہ وزیر آباد سے لاہور جانے والی ٹرین ابھی دھونکل کے ریلوے اسٹیشن پر پہنچی ہی تھی کہ آسمان پر بھارت کے جنگی طیارے نمودار ہوئے ، ٹرین کے مسافر بھارتی حملے سے بے خبر تھے ۔ وہ یہ بھی نہیں جانتے تھے کہ وہ بھارتی جنگی طیاروں کے نشانے پر ہیں ۔ اتنے میں بھارتی طیاروں نے غوطہ لگا کر پلیٹ فارم پر کھڑی مسافر گاڑی پر مشین گنوں سے گولیاں برسانا شروع کر دیں جس سے کئی بوگیوں میں سوراخ ہو گئے اور متعدد مسافر زخمی ہو گئے ۔ دشمن نے اسی پر بس نہ کی بلکہ ٹرین پر بم بھی برسائے جس سے متعدد بوگیاں تباہ ہوگئیں۔ ایک بھارتی طیارے نے بہت کم بلندی سے ٹرین پر بم پھینکا جو زبردست دھماکے کے ساتھ پھٹا۔ ٹرین کو اس طرح ہچکولا لگا جیسے زلزلہ نے زمین کا سینہ شق کر دیا ہو ۔ بم پھٹنے سے ٹرین ٹوٹ پھوٹ کا شکار جبکہ بہت سے مسافر زخمی ہو گئے ۔ اس حملے میں کنگ ایڈورڈ میڈیکل کالج لاہور کے فائنل ایئر کی طالبہ مس عابدہ طوسی بھی زخمی ہوئیں ۔ وہ وزیرآباد کے ماہر تعلیم محمد شریف طوسی کی صاحبزادی تھیں ۔ میڈیکل کالج کی سالانہ تعطیلات ختم ہونے کے بعد اپنی بڑی ہمشیرہ کے ساتھ بذریعہ ٹرین لاہور جا رہی تھیں ۔ دونوں بہنیں آپس میں ہنس کھیل رہی تھیں کہ آسمان پر زبردست گڑگڑاہٹ ہوئی ۔ اور بھارتی طیاروں کی بر بریت کا شکار ہو کر جام شہادت نوش کر گئیں۔ چھ ستمبر 1965ء کی صبح کو ملک و ملت پر جان نثار کر دینے والی گوجرانوالہ کی ایک بیٹی کا یہ پہلا گل رنگ نذرانہ تھا ۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
80%
ٹھیک ہے
20%
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 





آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

اوصاف سپیشل

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved