’’عورت بغیر طلاق کے دوسری شادی بھی کر سکتی ہے ‘‘ اس کی شرط کیا ہوگی ؟ اہم ترین فتویٰ سامنے آگیا
  17  جون‬‮  2017     |     اوصاف سپیشل
اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) جس عورت کا خاوند مفقود الخبر(غائب)ہو وہ امام مالکؒ کے فتویٰ کے مطابق چار سال کے بعد بغیر طلاق کسی اور جگہ حسب منشا عقد نکاح کر سکتی ہے، معروف عالم دین نے فتویٰ جاری کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق منہاج القرآن کی فتویٰ ویب سائٹ پرایک سوال کا جواب دیتے ہوئے مفتی محمد شبیر قادری کا کہنا تھا کہ جس عورت کا خاوند مفقود الخبر (غائب) ہو وہ امام مالک ؓ کے فتویٰ کے مطابق چار سال تک شوہر کا انتظار کر کے کسی اور جگہ حسب منشاء عقد نکاح کر سکتی ہے۔مذکورہ عورت کو مجسٹریٹ کے روبرو پیش ہو کر اور اپنے خاوند کے مفقود الخبر ہونے کا ثبوت دے کر، دوسری شادی کا اجازت نامہ حاصل کر کے دوسری شادی کر لینی چاہیے۔ جب شادی کا حکم بھی معلوم ہو گیا اور مجسٹریٹ کا اجازت نامہ بھی مل گیا تو پہلے شوہر کے واپس آنے کی صورت میں بھی کوئی مسئلہ پیدا نہیں ہو گا۔ کیونکہ اس طرح شرعی مسئلہ کو ریاستی تحفظ حاصل ہو گا،پہلے خاوند کے آنے پر یہ عورت دوسرے خاوند کی ہی بیوی رہے گی، پہلے سے کوئی تعلق نہ ہو گا۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
55%
ٹھیک ہے
36%
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
9%




  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

اوصاف سپیشل

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved