ایک ہزار پچھہتر ٹن کھجوروں کا تحفہ
  19  مئی‬‮  2017     |     کالمز   |  مزید کالمز
آقاء مولیٰ حضرت محمد کریمۖ کا ارشاد گرامی ہے کہ جس گھر میں کھجور نہ ہو اس گھر والے بھوکے رہ جائیں گے (صحیح مسلم) دراصل کھجور گھر میں ہو تو ہر وقت بھوک مٹائی جاسکتی ہے … خاتم الانبیاء ۖ نے ایک دوسرے مقام پر ارشاد فرمایا کہ مومن کی بہترین سحری کھجور ہے۔ (سنن ابی دائود) رسول اکرمۖ نے امت کو روزہ کی افطاری کی ترغیب بھی کھجور سے دی … ارشاد فرمایا کہ ''جب تم میں سے کوئی شخص روزہ افطار کرے تو کھجور سے کرے کیونکہ کھجور باعث برکت ہے' اگر کھجور نہ ملے تو پانی سے افطار کرے … بے شک وہ پاکیزہ ہے۔ (جامع ترمذی) کھجور کی افادیت' برکت اور غذائیت کے حوالے سے قرآن مجید میں ارشاد خداوندی ہے کہ ''اور بلند و بالا کھجور کے درخت پیدا کر دیئے ہیں جن پر پھلوں سے لدے ہوئے خوشے تہہ بہ تہہ لگتے ہیں'' (ق10 ) کھجور صرف مٹھا س ہی نہیں دیتی … بلکہ حضرت محمد کریمۖ ارشاد فرماتے ہیں کہ کھجور میں زہر اور جادو کا علاج بھی موجود ہے' فرمایا آقاء مولیٰۖ نے ''جو شخص صبح کے وقت سات عجوہ کھجوریں کھالے … اسے اس دن کوئی زہر یا جادو نقصان نہیں دے گا۔ (صحیح مسلم)عرب کا مشہور شاعر احمد جوکی کھجور کے بارے میں کہتا ہے کہ ''کھجور غریب آدمی کا کھانا ہے' یہ امیر آدمی کی مٹھائی ہے' اور یہ مسافر کا زاد راہ ہے''۔ حکماء اور اطباء نے ''کھجور'' کے بارے میں جسمانی صحت کے حوالے سے عجیب و غریب حکمتیں بیان کی ہیں … جنہیں اگر یہاں لکھنا شروع کروں تو پوری کتاب بن جائے گی ' سردست ان سب سے صرف نظر کرتے ہوئے اس طرف آتے ہیں کہ آخر ''کھجور ''کو آج میں نے کالم کا موضوع کیوں بنایا؟ اس کی وجہ بدھ کے دن سعودی عرب کے سفارت خانے میں منعقدہ وہ تقریب تھی کہ جس میں سعودی عرب کے قائم مقام سفیر شیخ مروان بن رضوان بن محمدمرداد اور ڈائریکٹر انفارمیشن ڈیپارٹمنٹ حبیب اللہ بخاری نے سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبد العزیز کے امدادی سینٹر کی طرف سے 150 ٹن کھجوروں کا پاکستانی عوام کے لئے تحفہ حکومتی نمائندے کے سپرد کیا' اس تقریب میں میڈیا کے چیدہ چیدہ نمائندوں کے علاوہ سعودی عرب کے سفارت خانے کی تمام نمائندہ شخصیات شریک تھیں' اس موقع پر قائم مقام سعودی سفیر مروان بن رضوان صحافیوں کے ساتھ گھل مل گئے' اور انہوں نے میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سعودی عرب اور پاکستان یک جان دو قالب ہیں … سعودی عرب کی ہمیشہ سے کوشش رہی ہے کہ اپنے پاکستانی بھائیوں کی خدمت کا کوئی موقع بھی ضائع نہ کیا جائے بلکہ ہر مشکل موقع پر سعودی حکمرانوں اور سعودی عوام نے اپنے پاکستانی بھائیوں کے کام آنے کی کوشش کی اور انشاء اللہ یہ سلسلہ جاری و ساری رہے گا۔ اس موقع پر ڈائریکٹر انفارمیشن الشیخ حبیب اللہ بخاری نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ''وقت اس بات کا گوا ہ ہے کہ سعودی عرب نے پاکستان کے ساتھ ہر قسم کے حالات میں اپنی والہانہ محبت اور دوستی کو ثابت کیا ہے … میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ خوش قسمتی سے پاکستان اور سعودی عرب کی دوستی مضبوط سے مضبوط تر ہوتی جارہی ہے' ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ ہفتےUN کے عالمی خوراک پروگرام کے ذریعہ878 ٹن کھجوروں کا تحفہ اور آج 150 ٹن کھجوروں کا تحفہ درحقیقت سعودی عرب کی پاکستانی عوام سے محبت کا حقیقی مظہر ہے ' انہوں نے بڑے جذباتی انداز میں کہا کہ میں اپنے پاکستانی بھائیوں کو اس بات کی یقین دہانی کروانا چاہتا ہوں کہ خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبد العزیز کی قیادت میں سعودی حکام اور سعودی عرب کے عوام ہمیشہ پاکستانی بھائیوں کے شانہ بشانہ کھڑے رہیں گے تاکہ دوستی کے اس خوبصورت رشتے کو نئی بلندوں تک پہنچایا جاسکے۔ سعودی عرب کی حکومت کی طرف سے پاکستان کے غریبوں 'ناداروں' مفلسوں اور مہاجرین کیلئے رمضان المبارک کی آمد سے صرف دو ڈھائی ہفتے قبل ایک ہزار پچھتہر ٹن کھجوروں کا تحفہ یقینا اخوت و ہمدردی کی ایک عمدہ مثال ہے۔ اب اللہ کرے کہ یہ ایک ہزار سے زائد ٹن غذائیت سے بھرپور کھجوریں ' ادھر اُدھر ' دائیں بائیں بٹنے کی بجائیں اس کے اصل وارثین یعنی مستحقین تک پہنچ جائیں تو یقین کریں کہ ان پاکستانیوں کی رمضان المبارک کی خوشیاں دوبالا ہو جائیں گی۔ قائم مقام سفیر الشیخ مروان بن رضوان بن مرداد صحافیوں سمیت تمام مہمانوں سے فرداً فرداً مل تو رہے تھے مگر اس احتیاط کے ساتھ کہ ان کی تصویر نہ بننے پائے' سچی بات ہے کہ یہ دیکھ کر مجھے بہت خوشی ہوئی کہ کوئی تو ہے کہ جو خوامخواہ کی تصویر کشی سے بچنے کی کوشش کرتا ہے' ڈپلومیٹک سیکرٹری رائدبن عبد اللہ الغامدی بھی مہمانوں پر بھرپور محبتیں نچھاور کررہے تھے' جبکہ میڈیا کوارڈینٹرمیڈم ریحانہ صحافیوں کا ان سے تعارف کروا رہی تھیں' کھجوروں میں چونکہ غذائیت' برکت اور مٹھاس ہوتی ہے… انشاء اللہ پاک سعودی تعلقات میں اسی طر ح مٹھاس اور چاشنی بڑھتی ہی چلی جائے گی۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
100%
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 



 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved