اسلامائزیشن کو درپیش خطرات اور آل پارٹیز کانفرنسیں
  4  ستمبر‬‮  2017     |     کالمز   |  مزید کالمز

(گزشتہ سے پیوستہ) * کسی کی ذات اور مخصوص جماعت کے سیاسی مستقبل کے لیے آئینِ پاکستان میں موجود اسلامی دفعات میں کسی طرح کی تبدیلی کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔ اسلامی دفعات اور آئین پاکستان میں تبدیلی ملک دشمن قوموں کا ایجنڈہ ہے۔ نام نہاد عالمی برادری تحفظ ناموس رسالت، عقیدہ ختم نبوت، قرآن و سنت کی بالادستی، اور شریعت اسلامیہ کے مطابق قانون سازی کی دفعات کو آئین پاکستان سے نکالنے کے لیے مسلسل کوشش کر رہی ہے، ہم اس کو مسترد کرتے ہیں۔ * عدلیہ اور آئین پاکستان پر مسلم لیگ (ن) خودکش حملہ کرنے جا رہی ہے۔ ان دونوں کا تحفظ ہماری ذمہ داری ہے اور ہم ہر قیمت پر اس ذمہ داری کو پورا کریں گے۔ اس مقصد کے لیے قومی قائدین اور تمام مذہبی و سیاسی جماعتوں کے نمائندوں پر مشتمل کمیٹی تشکیل دی جائے گی جو قوم کی ذہن سازی کے لیے بروقت رہنما اصول پیش کرتی رہے گی، اور قومی جذبہ کے ساتھ آئین پاکستان پر پہرہ دیا جائے گا۔ * مسلم لیگ (ن) پانامہ کیس کے فیصلہ کے بعد اداروں کے درمیان تصادم، سیاسی بحران، ملکی عدم استحکام اور قوم کو خانہ جنگی کی طرف دھکیلنے کے راستے پر گامزن ہے، ہم اس طرز عمل کی مذمت کرتے ہیں۔ * امریکی صدر کی طرف سے پاکستان، افغانستان اور خطے کے لیے نئی پالیسی کا اعلان ملکی خودمختاری اور قومی وقار پر حملہ ہے اور پاکستانی قوم کے ساتھ اعلانِ جنگ ہے۔ * امریکہ پاکستان کا ازلی دشمن ہے، وہ بھارت کو خطے میں بالادست حیثیت دے کر ہماری نظریاتی مملکت، ایٹمی قوت، آزادی، خودمختاری اور سالمیت کو نقصان پہنچانا چاہتا ہے۔ * پوری قوم بشمول پاکستان کے عسکری ادارے اور محب وطن سیاسی و مذہبی قیادت امریکی پالیسی کو مسترد کرتی ہے اور واشگاف الفاظ میں واضح کرنا چاہتی ہے کہ ملکی سالمیت کا تحفظ اپنی جانوں پر کھیل کر کیا جائے گا۔ * اگر امریکہ نے بھارت یا افغانستان کی کٹھ پتلی حکومت کے ذریعہ پاک سرزمین پر اپنے ناپاک قدم رکھنے کی حماقت کی تو اس کا جہادی جذبہ کے ساتھ مقابلہ کیا جائے گا اور امریکی رعونت کو خاک میں ملا کر اس کے وجود کو عبرتناک بنا دیا جائے گا۔ * امریکی صدر کی طرف سے پاک فوج کو دہشت گردی کے خلاف جنگ میں امریکی امداد دینے کا بیان گمراہ کن ہے۔ پاکستان کی زمینی اور فضائی حدود کے استعمال پر عالمی قوانین کے مطابق کرایہ کی ادائیگی امداد نہیں ہے۔ * پاکستانی قوم اپنے خون سے پاک فوج کی آبیاری کر رہی ہے اور اس کی ضروریات پوری کرنے کے لیے بڑی سے بڑی قربانی دینے کے لیے تیار ہے۔ * مسلح افواج نے مملکت خداداد پاکستان کی سالمیت و تحفظ کے لیے جو پالیسی طے کر رکھی ہے ہم اس کی مکمل تائید کرتے ہیں۔ * موجودہ حکومت کی خارجہ پالیسی بالعموم، اور امریکی دھمکیوں کے مقابلہ میں مجرمانہ خاموشی بالخصوص، قومی وقار کے منافی ہے۔ ایک آزاد خودمختار مملکت اور ایک غیرت مند قوم کی ترجمانی کے لیے حکومت کو امریکی بالادستی سے باہر نکال کر پالیسی ترتیب دینی چاہیے۔ * چین، روس اور ایران کی طرف سے پاکستان کی غیر مشروط حمایت اور امریکہ کو منہ توڑ جواب دینے پر چینی حکومت کے شکر گزار ہیں، اور اقتصادی راہداری منصوبہ کی تکمیل کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتے ہیں۔ * افغان مہاجرین کی مہمان نوازی کا اعزاز پاکستانی قوم کو حاصل ہے۔ ایک عرصہ پاکستان کی سرزمین پر گزارنے والے افغان مہاجرین اشرف غنی کے افغانستان میں اپنے آپ کو اعتقادی اور جسمانی طور پر غیر محفوظ سمجھتے ہیں۔ حکومت پاکستان اشرف غنی اور امریکہ کے ایما پر افغان مہاجرین پر پاکستان کی سرزمین تنگ کرنے کی بجائے باوقار اور محفوظ واپسی کے لیے پالیسی مرتب کرے۔ * حافظ محمد سعید کی بے جا نظر بندی کو فی الفور ختم کیا جائے۔

* شریعت کورٹ آزاد کشمیر کو ختم کر کے ستر سالہ جدوجہد کو سبوتاژ کر دیا گیا ہے۔ کل جماعتی کانفرنس حکومت آزادکشمیر کے اس عمل کی شدید مذمت کے ساتھ شریعت کورٹ کو بحال کرنے اور آزادکشمیر کے دستور میں قادیانیوں کے حوالہ سے دستوری تقاضوں کو ملحوظ رکھ کر قادیانیوں کو مسلم فہرست سے الگ فہرستوں میں شامل کرنے کا مطالبہ کرتی ہے۔ * پنجاب میں مدارس اسلامیہ کے گرد گھیرا تنگ کرنے کے لیے پنجاب حکومت چیریٹی ایکٹ کے نام سے کالا قانون لانے کی کوشش کر رہی ہے، اسے مسترد کرتے ہوئے اس کا راستہ روکنے کے لیے پر امن آئینی جدوجہد کا اعلان کرتے ہیں۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved