ہمیں امت مسلمہ کوقرآن اورحضرت محمدۖ کے احکامات پرعمل کادرس دیناہوگا،علمائ
  16  مارچ‬‮  2017     |     یورپ

اولڈھم(فیاض بشیر) دنیا بھر میں جہاں بھی بدامنی پھیلی ہوئی ہے اور مظلوم، نہتے لوگ اذیت کی زندگی گزارنے کے ساتھ دہشت گردی کا شکار ہوکر خانہ جنگی کی وجہ سے مجبوراً خانہ بدوشی کی زندگی بسر کر رہے ہیں اور در در کی ٹھوکریں کھاکر بھیک مانگ کر اپنے خاندان اور بچوں کی پرورش کر رہے ہیں لمحہ فکریہ ہے اور اگر بغور جائزہ لیا جائے تو اکثریت مسلم ممالک میں ایسا ہو رہا ہے بنیادی وجہ اسلام کی تعلیمات سے دوری، تفرقہ بازی، اناپرستی اور جمہوری رویوں سے روگردانی ہے۔ عدم برداشت ایک دوسرے سے آگے نکلنے، اقتدار کو طول دینے، عوام کو جان بوجھ کر بنیادی سہولیات سے محروم رکھ کر اپنے مقاصد کو حاصل کیا جاسکتا ہے۔ عالم اسلام بے شمار وسائل کے باوجود کوئی متفقہ پالیسی بناکر امن پیدا کرنے کی کوشش کرنے کی بجائے دوسروں پر انحصار کرتا ہے کہ وہ ان مسائل کو حل کروائیں۔ ان خیالات کا اظہار اولڈھم کے علمائے کرام مولانا عبدالشکور قادری، قاری منظور احمد شاکر، مولانا شفیق الرحمن شاہین و دیگر نے مشترکہ طورپر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ دمشق میں دو خودکش حملے اسی طرح سیریا، عراق، مقبوضہ کشمیر میں بھارتی سیکورٹی اداروں کی نسل کش کارروائیاں اور دیگر مسلم ممالک میں جنگ اور انتہا پسندی کی شدت اس وقت دنیا بھر میں مختلف فرقوں سے تعلق رکھنے والے علمائے کرام سے توقع کرتی ہے کہ وہ صرف بحیثیت مسلمان اسلام کی بنیادی تعلیمات دے کر امن پیدا کرسکتے ہیں اس کے لئے ذاتیات کی جو چادر اوڑھی ہوئی ہے اس سے باہر نکل کر وسعت نظری کا عملی مظاہرہ کرنا ہوگا۔ بجائے یہ واویلا کرنے کہ اسلام دشمن طاقتیں مذہب کو نقصان پہنچانے کے درپے ہیں ہمیں اتحاد و اتفاق پیدا کرکے امت مسلمہ کو قرآن پاک اور حضرت محمدۖ کے بتائے ہوئے احکامات پر عمل کرنے کا درس دینا ہوگا۔ کوئی وجہ نہیں کہ بہت جلد دنیا بھر میں اسلام کا پھر غلبہ ہوگا۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved