بینظیرکاقتل نہ ہوتاتوزرداری پاکستان کے صدرنہ بنتے،خالدمحمود
  17  مارچ‬‮  2017     |     یورپ

بلیک برن(پ ر) پاکستان رابطہ کونسل بلیک برن کے کنوینر خالد محمود نے کہا ہے کہ بے نظیر بھٹو کا قتل نہ ہوتا تو آصف علی زرداری پاکستان کے صدر نہیں بن سکتے تھے۔ اس کے بعد ایبٹ آباد آپریشن اور میمو سیکنڈل سامنے آگئے۔ پاکستان کی سالمیت کو خطرے میں ڈال دیا، ہزاروں امریکیوں کو ویزے جاری کئے گئے اور اس میں کس نے کتنے ڈالر وصول کئے اس کی کوئی تحقیقات کرے گا اور غدار وطن کو کوئی سزا دینے والا ہے اور ان لوگوں کو فوجی عدالتوں میں پیش کرنا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ آصف علی زرداری اور رحمان ملک کی رضامندی سے یہ سب کچھ ہوا ہے۔ کسی سفیر کو اتنی جرأت نہیں ہوسکتی کہ وہ اتنی بڑی تعداد میں اپنی مرضی سے ویزے جاری کرے۔ پیپلزپارٹی کی ملک دشمنی میں انتہا ہوچکی ہے جہاں پاناما لیکس پر میاں نواز شریف پر کیس سپریم کورٹ میں ہے کہ پیپلزپارٹی کو بھی عدالت کے کٹہرے میں کھڑا کیا جائے پہلے بھی ملک توڑنے کی پاداش میںبچ نکلے ہیں اب انہیں معاف کرنا پاکستان کے لئے مزید مشکلات پیدا کرنے کے مترادف ہے۔ خالد محمود نے کہا کہ پیپلزپارٹی وڈیروں کی جماعت ہے۔ الیکشن میں کرپشن کی دولت اور بدمعاشوں کے زور پر عام غریب لوگوں کو ڈرا دھمکا کر اقتدار میں یہ لوگ آجاتے ہیں اس لئے یہ ملک کے خلاف سازشیں کرتے ہیں ملک میں عدل و انصاف نہ ہونے کی وجہ سے یہ ہمیشہ بچ جاتے ہیں انہیں فوجی عدالتوں میں پیش کیا جائے تاکہ ان کے ظلم کی داستانیں دنیا کے سامنے واضح ہوجائیں اور یہ ملک اور قوم ان ظالموں کے جبر سے آزاد ہوسکے۔ انہوں نے کہا کہ پاناما لیکس کا فیصلہ حق اور انصاف پر مبنی ہو تو پھر باقی کے لٹیرے بھی ڈریں گے۔ ججز اگر جاگیرداروں اور وڈیروں کے خوف کی وجہ سے کوئی انصاف نہ کرسکے تو پھر اس ملک کا اللہ ہی حافظ ہے۔ خالدمحمود


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
100%
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved