نئی نسل مولانامودودی کے لٹریچرسے فائدہ اٹھائے،محمدغالب
  19  مارچ‬‮  2017     |     یورپ
برمنگھم(پ ر) سید مودودی نے اسلام کے حقیقی تصور کو جس اعتدال کے ساتھ پیش کیا اس سے مسلمانوں کو انتہا پسندی سے دور رکھا جاسکتا ہے ان کی تحریروں اور فکر سے غیر مسلموں نے بھی استفادہ کیا ہے بہت سارے لوگ مسلمان ہوئے اعلیٰ تعلیم یافتہ اور دانشور طبقہ متاثر ہوا ہے یورپ میں آباد مسلمانوں کی نئی نسل کو ان کے لٹریچر سے فائدہ اٹھانا چائے تا کہ اسلام کے بارے میں جو غلط فہمیاں پیدا کی گئی ہیں انہیں دور کیا جاسکے۔ ان خیالات کا اظہارسید مودودی فائونڈیشن کے چیئرمین محمد غالب نے فائونڈیشن کی مرکزی ایگزکٹیو کونسل کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ عالمی حالات میں مسلمانوںکی نئی نسل کو جس رہنمائی کی ضرورت ہے اس کا بہت بڑا فقدان ہے سید مودودی نے اسلام کے ہر پہلو پر تحقیق کی ہے آسان زبان میں سمجھانے کی کوشش کی ہے یورپین ممالک نے قران اور سنت رسول ۖ کو ریسرچ کر کے سیاسی معاشی نظام کو قائم کرنے میں رہنمائی حاصل کی اور مسلمانوں نے اس سے کوئی فائدہ نہیں اٹھایا اور یہی وجہ ہے کہ آج مسلم دنیا سیاسی معاشی بحرانوں کا شکار ہے ۔ ممتاز ماہر تعلیم علامہ سرفراز مدنی نے کہا کہ یورپین ممالک میں آبامسلمانوں کو حکمت اور مذاکرات سے اسلام کی دعوت دینی چاہے مغرب میں جو نظام قائم ہے اس میں مذید بہتری کے لیے اسلام کے اخلاقی اور معاشرتی پیغام کو عام کرنے کی ضروت ہے دلائل کے ساتھ اپنا نکتہ نظر پیش کرنا چاہے اور کسی پر اپنا موقف مسلط کرنے کی کوشش نہ کی جائے۔ اجلاس سے ڈاکٹر خرم بشیر، عبد ا لکریم ثاقب، حافظ محمد ادریس اور دیگر رہنماوں نے بھی خطاب کی۔ اجلاس میں فائونڈیشن کے زیر اہتمام عالمی خواتین کا دن منانے اور کثیر تعداد میں خواتین کی شرکت کو حوصلہ افزا قرار دیا گیا ہے اور وزیر اعظم ٹریسامے کے اس بیان کا خیر مقدم کیا گیا کہ حکومت خواتین کے لباس پر کوئی اپنا فیصلہ مسلط نہیں کرے گی۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 




 انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مینں
loading...


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved