بھارت زیادہ دیرکشمیریوںکی جدوجہدکودبانہیں سکتا،ڈاکٹرمسفرحسن
  18  اپریل‬‮  2017     |     یورپ
اولڈہم (فیاض بشیر) بھارت سرکار کے سکیورٹی اداروں کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں طلباء پر تشدد انسانیت سوز کارروائیوں کی بدترین مثال ہے آخر کب تک بین الاقوامی طاقتوں' انسانی حقوق کے علمبرداروں اور اقوام متحدہ کا مردہ ضمیر جاگے گا اور اس ظلم و بربریت کے خلاف صدائے حق بلند کرتے ہوئے بھارت کے خلاف انتہائی اقدامات اٹھا کر مجبور کیا جائے گاکہ وہ ان وحشیانہ کارروائیوں کو مجبوراً بند کرنے پر تیار ہوجائیں گے۔ اس سے زیادہ ستم ظریفی کا عالم یہ ہے کہ آئے روز لائن آف کنٹرول کی کھلم کھلا خلاف ورزی کرتے ہوئے آزاد کشمیر سماہنی سیکٹر کے رہائشیوں کا جانی و مالی نقصان پہنچا کر ذہنی اذیت دی جارہی ہے اور ہماری قیادت لب کشائی کئے سب کچھ خاموشی سے برداشت کرکے ذاتی مشغلوں میں مگن ہے۔ یہ باتیں لبریشن لیگ برطانیہ کے چیف آرگنائزر و صدر ڈاکٹر مسفر حسن نے خصوصی طور پر کشمیر کی تازہ ترین صورتحال پر بات چیت کرتے ہوئے کیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ حالات انتہائی کشیدہ صورتحال اختیار کرچکے ہیں اب بھارت زیادہ دیر تک کشمیریوں کی جدوجہد کو دبا نہیں سکتا اس کا واحد حل کشمیریوں کو استصواب رائے کا حق دینا ہے تاکہ وہ اپنے مستقبل بارے فیصلہ کرسکیں طاقت و جبر سے آزادی کی تحریکیں دبائی نہیں جاسکتیں اور اگر کوئی شک ہے تو تاریخ کا مطالعہ کرلیں کہ ماضی میں کیا ہوا بھارت کے بہترین مفاد میں ہے کہ وہ پاکستان کے ساتھ مذاکرات کے میز پر بیٹھ کر اور کشمیری جو کہ اس کے اصل فریق ہیں شامل کرکے حل نکالا جائے وگرنہ خطے میں کبھی بھی امن قائم نہیں ہوسکتا لبریشن لیگ برطانیہ بھارت کی جانب سے تازہ ترین تشدد کے واقعات کی بھرپور مذمت کرتے ہوئے ایسی کارروائیوں کو فی الفور روکنے کا مطالبہ کرتی ہے۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 



 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





 انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مینں
loading...
loading...


آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved