دودرجن ٹوری ایم پیز کی ممکنہ نااہلی قبل ازوقت الیکشن کی وجہ ہوسکتے ہیں
  19  اپریل‬‮  2017     |     یورپ
بریڈ فورڈ(تجزیاتی رپورٹ: اعجاز فضل سے) ٹوری حکومت کے دو درجن سے زائد ممبران پارلیمنٹ کو سال 2015ء کے انتخابات کے دوران چلائی جانے والی الیکشن مہم کے دوران مقررہ حد سے مبینہ طورپر زیادہ انتخابی اخراجات کرنے پر مقدمے کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے۔ بعض سیاسی تجزیہ نگاروں کا یہ خیال بھی ہے کہ قبل از وقت انتخاب کا اعلان بھی شاید اسی وجہ سے کیا گیا ہے چونکہ الزامات ثابت ہونے کی صورت میں حکومتی ممبران کو بڑی تعداد میں پارلیمنٹ سے مستعفی ہونا پڑسکتا ہے جس سے ٹوری حکومت کمزور پڑسکتی ہے جسکی وجہ سے وزیراعظم نے قبل از وقت انتخابات کا اعلان کیا ہے جبکہ ٹوری حکومت کا مؤقف اسکے برعکس ہے دوسری طرف ذرائع کے مطابق جن ممبران پارلیمنٹ جنکا تعلق حکومتی بینچوں سے ہے کے خلاف باقاعدہ الیکشن رولز کی خلاف ورزی پر 8جون سے قبل کیس کھولا جاسکتا ہے اس سلسلے میں پولیس نے ایسے ممبران پارلیمنٹ کی فائلیں کراؤن پراسیکیوشن کو فارورڈ کردی ہیں۔ ذرائع کے مطابق سی پی ایس، اس ضمن میں تمام تر ثبوت کے پیش نظر پر ارادہ بھی رکھتی ہے کہ ایسے ممبران پارلیمنٹ کو باقاعدہ چارج کیا جائے جنہوں نے برطانوی انتخابی قوانین کی خلاف ورزی کی ہے۔ کراؤن پراسیکیوشن سروس کے ترجمان نے گزشتہ روز ایک معتبر برطانوی جریدے کو بتایا ہے کہ 8 جون سے قبل انتخابی رولز کی خلاف ورزی کرنے والے ممبران پارلیمنٹ کو چارج کیا جاسکتا ہے جس سے برطانوی سیاسی ماحول میں مزید تیزی پیدا ہوسکتی ہے جبکہ ابھی تک کسی ایک ممبر پارلیمنٹ کو انتخابی رولز کی خلاف ورزی جیسے الزامات کا سامنا ہے جنہوں نے 2015ء میں دوران الیکشن مہم مقررہ حد سے بڑھ کر اخراجات کئے۔ برطانوی پولیس نے جن انتخابی حلقوں سے کراؤن پراسیکیوشن کو کیس فارورڈ کئے ہیں ان میں ایون اینڈ سمر سیٹ، کمبریا، ڈربی شائر، ڈیون اینڈ کراؤن وال، گلوسٹر شائر، گریٹر مانچسٹر، لنکا شائر، میٹرو پولیٹن، ناٹنگھم شائر اور ویسٹ یارکشائر شامل ہیں۔ ان تمام تر الزامات کی روشنی میں ٹوری پارٹی کے ترجمان کا کہنا ہے کہ ٹوری پارٹی اس سلسلہ میں مکمل تعاون کر رہی ہے جبکہ ہمارے مخالف سیاسی جماعتیں اس سلسلہ میں اپنے متعلقہ حلقوں میں اخراجات کے حوالے سے تفصیلات فراہم کرنے میں ناکام رہی ہیں۔ برطانوی سیاسی تجزیہ نگاروں کے مطابق اگر دو درجن سے زائد ممبران پارلیمنٹ انتخابی قوانین کی خلاف ورزی ثابت ہوجاتی ہے اور وہ 8 جون کو دوبارہ ممبر پارلیمنٹ منتخب ہوجاتے ہیں اس سے ایک نیا سیاسی بحران بھی جنم لے سکتا ہے جس سے ٹوری پارٹی کیلئے مستقبل میں مزید کھڑے ہوسکتے ہیں۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 




  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved