جاپانی شہنشاہ بارے میں دلچسپ حقائق
  19  مئی‬‮  2017     |     دلچسپ و عجیب

لاہورر:(ویب ڈیسک) 1945ء میں جاپان جمہوریہ بنا تھا۔یہ ان دنوں کا ذکر ہے جب دوسری جنگِ عظیم کے بعد اسے شکست ہوئی تھی اور وہ دو ایٹم بموں کے زخم کھا چکا تھا،اس وقت شہنشاہ ہیروہیٹو نے اپنے ملک کی جانب سے ہتھیار ڈالنے کا اعلان کیا تھا،ان کے بیٹے اِکی ہیٹو آئین کے مطابق "عوام کو متحد رکھنے"کا کردار ادا کر رہے ہیں،جاپانی آئین میں بادشاہ کی حیثیت کافی حد تک نمائشی ہے تاہم شاہی خاندان کو ملک کے ذرائع ابلاغ میں خاصی اہمیت دی جاتی ہے۔ آئیے جاپانی شہنشاہ کی زندگی کے 6 دلچسپ حقائق پر نظر دوڑاتے ہیں۔ جاپان کا شاہی خاندان ایک بار پھر خبروں کی زد میں ہے،اس شاہی خاندان کی ایک شہزادی نے ایک عام شہری سے شادی کا فیصلہ کیا ہے لیکن اس کے بعد وہ شاہی خاندان کا حصہ نہیں رہیں گی،شاہی خاندان کے قواعد و ضوابط کے مطابق شادی کرنے کے لیے 25 سالہ شہزادی ماکو کو شاہی خاندان کو چھوڑنا ہو گا۔ جس سے شادی ہو رہی ہے اس سے شہزادی کی ملاقات کم و بیش 5 سال قبل ہوئی تھی جب وہ زیر تعلیم تھیں،منگنی کی تیاریاں ہو چکی ہیں اور شہنشاہ اور ملکہ کو اس بارے میں آگاہ کر دیا جائے گا۔یہ پہلی بار نہیں ہو رہا،شہزادی ماکو کی آنٹی شہزادی سیاکو نے 2015 میں ایک عام شہری سے شادی کی تھی اور شاہی خاندان میں یہ پہلی بار ہوا تھا۔ اس کے بعد سیاکو نے پرآسائش کی بجائے عام زندگی گزارنا شروع کردی،جاپان میں روایتی بادشاہت کب کی ختم ہو چکی لیکن شاہی خاندان موجود ہے۔ طویل خاندانی تاریخ وہ 23دسمبر 1933ء کو پیدا ہوئے,وہ 125 ویں شہنشاہ ہیں اور اس شہنشاہیت کی تاریخ 26 سو سال سے بھی قدیم ہے،یہ وراثت میں چلنے والی دنیا کی قدیم ترین بادشاہت ہے،شاہی خاندان کی روایت کے مطابق دو سال کی عمر کے بعد ان کی تربیت والدین سے علیحدہ شاہی نرسری میں کی گئی۔ غیر روایتی شادی 1959ء میں شہزادہ اکی ہیٹو نے ایک عام شہری خاتون سے شادی کی جو کہ شاہی خاندان کی روایت سے ہٹ کر تھی،ایسی شادی اس خاندان میں 15سو سال بعد ہوئی تھی۔ ان کے تین بچے ہیں۔ شہنشاہ کا تخت اکی ہیٹو کو تخت پر 1989ء میں بٹھایا گیا جب ان کے والد ہیروہیٹو کی وفات ہوئی،تخت پر بٹھانے کی تقریبات دو سال بعد مکمل ہوئیں،جاپانی روایت کے مطابق شہنشاہ سورج سے اترے ہیں اس لیے یہ تقریبات ایک ایسے مقام پر ہوئی جسے سورج کی دیوی "اماترسو" سے منسوب کیا جاتا ہے۔ دیوتا ہونے سے انکار ہیروہیٹو نے دوسری جنگ عظیم کے خاتمے پر جاپان کی شکست کے ساتھ ہی اعلان کر دیا تھا کہ وہ آسمان سے نہیں آئے،تاہم جاپانیوں کی ایک مختصر تعداد آج بھی اپنے شہنشاہ کو دیوتا مانتی ہے۔ عوامی انداز ماضی کے شہنشاہوں کے برخلاف اکی ہیٹو کا طرز زندگی زیادہ عوامی ہے اور وہ ملک بھر میں سفر کر کے لوگوں سے ملتے جلتے رہتے ہیں۔ آبی حیات سے دلچسپی جاپانی شہنشاہ کو آبی حیات سے خصوصی دلچسپی ہے،وہ گوبی مچھلی کے بارے میں مہارت رکھتے ہیں ۔ اسی بنا پر اس مچھلی کا نام "ایکسیریس اکی ہیٹو" رکھا گیا۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
100%
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

دلچسپ و عجیب

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved