عبدالرشید ترابی قمرالزمان خان کا 28سال تک ملازم رہا ، اسے عوام سے کیا غرض ، وقاص نسیم
  20  مارچ‬‮  2017     |      کشمیر

باغ (روزنامہ اوصاف ) سابق وزیر تعمیرات عامہ کرنل راجہ نسیم مرحوم کے فرزند وتحریک انصاف آزاد کشمیر کے مرکزی رہنما کیپٹن ریٹائرڈ راجہ وقاص نسیم نے کہا ہے عبدالرشید ترابی قمرالزمان خان کا 28سال تک ملازم رہا اسے علقے کی عوام سے کیا غرض ہے مشتاق منہاس چھوڑو نمبر1ہے پہلے وزیر اعظم،پھر سنےئر وزیر،پھر وزیر تعمیرات عامہ،اور پھر نگران وزیر اعظم کے لیے دعوے کرتا رہاانہوں نے کہا کہ قمرالزمان بڑے لیڈر ہیں وہ مشتاق منہاس زنانی کے مقابلے میں کیا چوک چورائے میں آئیں گے انہوں نے کہا کہ وسطی حلقے سے منتخب ہونے والے وزیر اطلاعات مشتاق منہاس جو دو مارچ 2016کو مسلم لیگ ن میں داخل ہوا اور وسطی حلقے کی عوام کے ساتھ جھوٹے وعدے کر کے کامیاب ہوا آج تک باغ میں مشتاق منہاس کیطرف سے اعلان کردہ منصوبہ جات امراض قلب ہسپتال ، بنی منہاساں پل ، کھپدر پل اور وسطی حلقے میں سڑکوں کا جال بچھانے ، برادری ازم کے خاتمے اور باغ کی عوام کے لیے دودھ اور شہد کی نہریں بہانے کے اعلانات کے علاوہ انکا نعرہ نارمہ ملدیال ستیا ناس آ گیا مشتاق منہاس ریت کی دیوار ثابت ہوئے اور مشتاق منہاس فرعون بنا گیا لوگ اب انہیں تلاش کرتے ہیں مگر وہ فون تک نہیں اٹھا رہا ، سردار قمرالزمان خان نے باغ میں پریس کانفرنس کے دوران وسطی حلقے کی عورتیں جو ہماری ماں ، بہن اور بیٹیاں ہیں کا نام لیا جس کی میں پر زور مذمت کرتا ہوں ، سردار قمرالزمان نے اپنی شکست کا اعتراف کر دیا اور کہا کہ میں 1985کا قمرالزمان بنوں گا انہیں معلوم ہونا چاہیے کہ انہوں نے 1985میں وسطی حلقے سے صرف 18سو ووٹ حاصل کیے تھے قمرالزمان بھی برادری کے بت توڑنے کے بجائے برادری ازم کو ہوا دینے لگے ہیں انہیں یاد نہیں ہے کہ انہوں نے سردار میر اکبر خان کے بھائی کو قتل کروایا تھا اور آج اسی کو دعوت دے رہے ہیں کہ آؤ برادری کی خاطر ہم ملکر یونیورسٹی ہاڑی گہل نہ بنوانے دیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پر ہجو م پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر انکے ہمراہ سابق چیئرمین راجہ محمد عنایت خان ، رانا سرفراز ، سردار محمد اسلم و دیگر تحریک انصاف کے مرکزی رہنما بھی موجود تھے ، وقاص نسیم نے کہا کہ دنیا میں جتنی بھی یونیورسٹیز ہیں وہ شہر سے باہر بنائی جاتی ہیں باغ میں جہاں وویمن یونیورسٹی قائم ہے چھٹی کے وقت ایک گاڑی بھی ٹرن نہیں کر سکتی ، قائد اعظم یونیورسٹی اسلام آباد سے کتنی باہر ہے ، اکسفورڈ ، کیمبرج یونیورسٹیز یہاں تک کہ مظفر آباد کی یونیورسٹی بھی شہر سے پچاس کلو میٹر دور بن رہی ہے ، ایچ ای سی نے ٹیکنیکل بنیاد پر ہاڑی گہل یونیورسٹی کی تعمیر کو موضوع قرار دیا ہے اس پر برادری ازم کی بنیاد پر قمرالزمان خان اور میر اکبر خان کو اکھٹا نہیں ہونا چاہیے میں ان سے پوچھتا ہوں کہ کیا ہاڑی گہل میں ملدیال نہیں بستے ، سردار میر اکبر نے ہاڑی گہل سب ڈویژن میں محکمہ مال میں اپنے عزیزوں کا تقرر کر کے ان سے یونیورسٹی کے خلاف مہم چلوا رہے ہیں اور وہاں شہریوں کو کہلوا رہے ہیں کہ آپ کی زمین 2ہزار روپے مرلہ خریدیں گے اور بعد ازاں آپ کے مکان بھی گرا دیں گے تا کہ یہ لوگ عدالتوں میں جا سکیں ، انہوں نے کہا کہ سردار قمرالزمان خان کہتے ہیں کہ میں یونیورسٹی کے خلاف چوک اور چوہراؤں میں جا ؤں گا میں انہیں مشورہ دیتا ہوں کہ وہ ایک زنانی کے خلاف چوک اور چوہرائے میں جا کر کیا کریں گے ، انہوں نے کہا کہ سردار قمرالزمان خان نے اپنی پریس کانفرنس میں کہا کہ ملدیال 60فیصد اور نارمے 50 فیصد بک گئے میں ملدیالوں کے متعلق تو کچھ نہیں کہہ سکتا البتہ نارمہ ایک بھی نہیں بکا مشتاق منہاس نے جو پانچ ہزار نارموں کے ووٹ لیے ان میں سے 1200دوسرے قبائل کے ہیں جبکہ 38سو ووٹ نارموں کے ہیں اور وہ ووٹ جماعت اسلامی کا ہے اور یہ لوگ ریڈ فاؤنڈیشن سے تنخواہیں حاصل کرتے ہیں میں یہ کہہ سکتا ہوں کہ نارمہ برادری نہیں بلکہ ایک آدمی بکا اور وہ عبدالرشید ترابی ہے ، انہوں نے کہا کہ ایک مفاد پرست ٹولہ جو راجہ رفیق کی گاڑی میں تھا وہی ٹولہ راجہ سبیل کیساتھ رہا اور پھر کرنل نسیم کی گاڑی کے آس پاس رہا وہی مفاد پرست ٹولہ اب مشتاق منہاس کیساتھ ہے لیکن مشتاق منہاس نے بھی انہیں لفٹ دینا چھوڑ دیا ہے ، انہوں نے کہا کہ باغ میں انتقامی طور پر 22ایمپلائز کا تبادلہ کیا گیا ہے میں انتقامی طور پر تبدیل کیے جانے والوں کیساتھ ہوں اور ایک ہفتے کی ڈیڈ لائن دیتا ہوں کہ اگر انکا تبادلہ واپس نہ کیا تو میں ہڑتال کرؤں گا انہوں نے یہ بھی اعلان کیا کہ میں وسطی حلقے کی عوام کیساتھ ہوں اور میں حلفاً کہتا ہوں کہ میرا جینا مرنا وسطی حلقے کی عوام کیساتھ ہے میں مردوں کیطرح عوام کیساتھ کھڑا رہوں گا اور جنگ جیتوں گا اور اگر جنگ نہ جیت سکا تو میدان نہیں چھوڑوں گا قبر میں جانا پسند کرؤں گا انہوں نے کہا کہ آزاد کشمیر پولیس کیساتھ سوتیلی ماں کا سلوک کیا جا رہا ہے صوبہ پنجاب اور پختوانخواہ میں پولیس کی تنخواہیں دگنی کر دی گئی ہیں جبکہ آزاد کشمیر میں پولیس سے روز گار چھینا جا رہا ہے اور پرانی تنخواہوں پر ہی گزارا کرنے کو کہا جا رہا ہے میں چیف سیکرٹری اور آئی جی سے گزارش کرتا ہوں کہ وہ اس زیادتی کا ازالہ کریں ۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 
رپورٹر   :  


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

کشمیر

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved