دہشت گردی کے خاتمہ کیلئے مضبوط لائحہ عمل اپناناہوگی،برٹش مسلم سکالرز
  17  فروری‬‮  2017     |     یورپ
ہیلی فیکس(پ ر) داعشی نظریات کی حامل دہشت گرد جماعت پاکستانی طالبان نے سیہون شریف مزار پر ہونے والی دہشت گردی کی کارروائی کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ برٹش مسلم سکالرز، یو کے نے اس بربریت اور سفاکی کی شدید مذمت کی ہے جس میں 80کے قریب بے گناہ شہری لقمہ اجل بن گئے ہیں اور سینکڑوں شدید زخمی اور معذور ہوگئے ہیں۔ معروف صوفی درگاہ، سیون شریف میں حضرت لال شہباز قلندر پہ آنے والے زائرین میں کی جانے والی سنگین دہشت گردی کے نتیجہ میں سینکڑوں گھر برباد ہوگئے اور ناقابل تلافی جانی نقصان ہوا، یہ دھماکے حال ہی میں پاکستان کے اندر تازہ شدت پسندی اور دہشت گردی کی لہر کا تسلسل ہیں جن میں اس سے قبل بھی بہت نقصان ہوچکا ہے۔ اہل سنة اور اہل تشیع کے مقدس مقامات پہ ایسی ہولناک کارروائیاں داعش سے نظریاتی متفق جماعت پاکستانی طالبان کی شدت پسندی پہ مشتمل ہے، کے ذریعے زور پکڑ رہی ہیں۔ امام قاری عاصم کا کہنا تھا کہ صوفی از صدیوں سے اس علاقے میں امن اخوت اور بھائی چارے کی فضا لئے، انسانی ہدایت کا سرچشمہ رہا ہے جو خارجیت کو پسند نہیں اور وہ من پسند نظریات اس خطہ میں مسلط کرنا چاہتے ہیں۔ حالانکہ اہل تصوف نے ہمیشہ نہ صرف دلوں کے دروازے لوگوں کیلئے کھولے بلکہ بلکتی تڑپتی انسانیت کو دامن محبت میں پناہ دی۔ امام عمر حیات قادری کا کہنا تھا کہ اپنے سوا دوسرے تمام لوگوں کو کافر قرار دینا خارجیوں کی خاص پہچان رہا ہے اور آج بھی یہ لوگ اپنے سابقہ ایجنڈے پر کام کر رہے ہیں اپنے مخالفین پہ شرمناک اور کالا جادو کے الزامات لگاکر انہیں دائرہ اسلام سے خارج قرار دیتے ہیں اور پھر انہیں واجب القتل سمجھتے ہیں ان کے اسے تکفیری نظریات کی روک تھام کیلئے مضبوط لائحہ عمل اپنانے کی ضرورت ہے۔ امام علامہ محمد سجاد رضوی کے مطابق من پسند عقائد کی ترویج اور جہالت و کم عقلی نے تشدد پسندانہ رویے کو فروغ دیا ہے اور اب یہ پاکستان میں باقاعدہ جڑیں پکڑ چکا ہے، حکومت پاکستان کو ایسے افراد اور گروپ پر نہ صرف مکمل پابندی لگانی چاہئے بلکہ مؤثر، مضبوط اور دیر پا علاج بھی کرنا چاہئے، ضرب عضب جیسے پروگرام اور آپریشن بلاتفریق ہر جگہ جہاں ایسے لوگوں کا شبہ ہو، کرنے چاہیں۔ امام اطہر حسین، امام ظہور احمد چشتی اور دیگر نے اپنے پیغام میں خارجیت کے اس سفاکانہ عمل کی شدید مذمت کی اور اسے اسلام دشمن جارحیت قرار دیا۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
100%
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 



 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

اہم خبریں

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved