پانامہ کیس ۔۔ سپریم کورٹ کے معزز جج کو نواز شریف اور پاکستانی سیاستدانوں کا پردہ فاش کرنا مہنگا پڑ گیا ، سپریم کورٹ میں وہ ہو گیا جس کا سوچا بھ
  10  جنوری‬‮  2017     |     پاکستان

اسلام آباد(روزنامہ اوصاف)سپریم کورٹ آف پاکستان میں پاناما لیکس کے معاملے پر وزیراعظم نواز شریف کے خلاف دائر درخواستوں کی سماعت کے دوران 5 رکنی لارجر بینچ کے سربراہ جسٹس آصف کھوسہ نے عوامی نمائندوں کی اہلیت اور نااہلی سے متعلق آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 کے اطلاق پر گذشتہ روز کی آبزرویشن واپس لے لی اور ندامت کا اظہار کیا۔جسٹس آصف کھوسہ نے کہ اکہ انھیں آرٹیکل 62 اور 63 سے متعلق آبزویشن نہیں دینی چاہیے تھی، انہیں اپنے الفاظ پر ندامت ہے اور وہ اپنے الفاظ واپس لیتے ہیں۔یاد رہے کہ گذشتہ روز کیس کی سماعت کے دوران جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہاتھا کہ پاناما پیپر کیس میں شریف خاندان کی جانب سے لندن فلیٹس کی خریداری یا خریداری کے وقت کے مقابلے میں بنیادی مسئلہ ایمانداری ہے۔جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا تھا کہ اگر آرٹیکل 62 اور 63 لاگو دیا جائے تو پارلیمنٹ میں صرف امیر جماعت اسلامی سراج الحق ہی بچیں گے۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
41%
ٹھیک ہے
7%
کوئی رائے نہیں
7%
پسند ںہیں آئی
44%


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

پاکستان

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved