پاکستان میں لاپتہ نظام الدین اولیا کے سجادہ نشین کہاں تھے؟ سشما سوراج کا حیران کن انکشاف
  19  مارچ‬‮  2017     |     پاکستان
اسلام آباد (روز نامہ اوصاف )بھارتی وزیر خارجہ سشما سوارج نے کہا ہے کہ پاکستان میں لا پتہ ہونے والے 2بھارتی شہریوں سے رابطہ ہوا ہے دونوں (آج ) پیر تک دہلی واپس آجائیں گے۔بھارتی میڈیا کے مطابق دہلی کی معروف نظام الدین اولیا کی درگاہ کے دو سجادہ نشین سید آصف علی نظامی اور ناظم علی نظامی 6 مارچ کو کراچی گئے تھے اور پھر اچانک 15 مارچ کو لاہور کے ایئر پورٹ سے لا پتہ ہوگئے تھے۔بھارتی وزیر خارجہ سشما سوارج نے ان کی بازیابی کے لیے پاکستانی حکام سے رابطہ کیا تھا۔اتوار کی صبح انھوں نے اپنے ٹویٹر کے صفحے پر لکھا کہ میں نے کراچی میں ناظم علی نظامی سے ابھی کچھ دیر پہلے بات کی۔ انھوں نے مجھے بتایا ہے کہ وہ محفوظ ہیں اور کل تک دلی واپس آجائیں گے۔اس سے قبل بھارتی خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی نے خبر دی تھی کہ پاکستان نے تصدیق کی ہے کہ دونوں سجادہ نشین کراچی پہنچ گئے ہیں۔ گذشتہ تین دنوں سے ان کا کچھ پتہ نہیں چل پا رہا تھا۔سید آصف علی نظامی اور ان کے بھتیجے ناظم علی نظامی دہلی سے پی آئی اے کی پرواز سے کراچی گئے تھے۔ 80 سالہ آصف نظامی حضرت نظام الدین اولیا کی درگاہ کے سربراہ(سجادہ نشین) ہیں۔ان کی سگی بہن کراچی میں رہتی ہیں جن کی عمر 90 سال کی ہے۔ آصف نظامی اپنی بہن سے ملاقات کے لیے کراچی گئے تھے۔ اس سے پہلے اپنی بہن سے ملاقات کے لیے وہ تقریبا 30 سال پہلے پاکستان گئے تھے۔کراچی میں ایک ہفتے کے قیام کے کے بعد 13 مارچ کو صبح کی فلائٹ سے دونوں لوگ لاہور گئے تھے۔ وہ وہاں نظام الدین اولیا کے استاد بابا فرید کی درگاہ اور ایک دوسری درگاہ داتا دربار پر چادر چڑھانے گئے تھے۔13 اور 14 مارچ کو انھوں نے دونوں درگاہوں پر حاضری دی۔ انھوں نے وہاں سے ساجد نظامی کو وہاٹس ایپ پر تصاویر بھی بھیجی تھیں۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
100%



 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





 انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مینں
loading...

  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

پاکستان

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved