کرکٹ کے معاملات ایک بار پھر نان کرکٹرز چلائیں گے
  7  اگست‬‮  2017     |      سپورٹس

کراچی(اوصاف نیوز) کرکٹ کے معاملات ایک بار پھر نان کرکٹرز چلائیں گے، نئے پی سی بی گورننگ بورڈ میں بھی کوئی سابق کھلاڑی شامل نہیں۔ پی سی بی میں گزشتہ کئی برسوں سے اہم معاملات نان کرکٹرز ہی سنبھال رہے ہیں، شہریار خان کے دور میں گورننگ بورڈ میں کوئی سابق کھلاڑی شامل نہ تھا، جب اس حوالے سے میڈیا میں تنقید ہوئی توسابق کرکٹر مدثر نذر کی سربراہی میں ایک کرکٹ کمیٹی بنا دی گئی جس کے ارکان اقبال قاسم، ندیم خان اور سابق ویمن کھلاڑی عروج ممتاز تھیں، دلچسپ بات یہ ہے کہ ایک برس سے زائد وقت گزرنے کے باوجود اس کمیٹی کے دو ہی اجلاس ہو سکے۔ ذرائع نے بتایا کہ ہر دور میں کرکٹ بورڈ میں ایڈجسٹ ہونے والی ایک شخصیت نے ناقدین کی توپوں کا رخ موڑنے کیلیے سابق کھلاڑیوں کی یہ ڈمی کمیٹی تشکیل دی تھی، اسے دانستہ غیرفعال رکھا گیا، میٹنگز میں بھی گیندوں، پچز وغیرہ کے معاملات سے آگے نہ بڑھنے دیا گیا۔ اسی کے ساتھ نان ٹیسٹ کرکٹر شکیل شیخ کی زیرسربراہی ڈومیسٹک افیئرزکمیٹی بنائی گئی جس میں امجد لطیف، گل زادہ، علی ضیا اور ثاقب عرفان شامل تھے، فرسٹ کلاس ریجنل ٹیموں میں ڈرافٹنگ سمیت تمام تجاویز اسی کمیٹی نے پیش کیں، گوکہ مدثر نذر ڈائریکٹر اکیڈمیز ہیں لیکن اس فیصلے سے قبل انھیں بھی اعتماد میں نہیں لیا گیا جس کا وہ خود اعتراف بھی کر چکے ہیں، اب نئے گورننگ بورڈ میں بھی کوئی کرکٹر شامل نہیں اور پی سی بی کی سربراہی بھی ممکنہ طور پر نجم سیٹھی سنبھالنے والے ہیں، یوں ایک بار پھر بڑے فیصلے نان کرکٹرز ہی کیا کریں گے۔ ذرائع نے بتایا کہ مصباح الحق اور یونس خان کو ماضی میںبھی بورڈ میں پوزیشنز دینے کی باتیں ہوئیں مگر عمل نہ کیا گیا،دونوں کیلیے تقریب تک نہ سج سکی اور شہریارخان کے عہدے کی معیاد ختم ہو گئی،سابقہ گورننگ بورڈ کے ساتھ ایچ آر،آڈٹ، ڈومیسٹک افیئرز اور گیم ڈیولپمنٹ سمیت پی سی بی کی تمام کمیٹیز بھی ختم ہو گئیں اور اب نئے ممبران سے چناؤ ہو گا، البتہ بعض اعلیٰ شخصیات ممبر نہ ہونے کے باوجود ڈومیسٹک افیئرز کمیٹی کی سربراہی شکیل شیخ کو ہی سونپنا چاہتی ہیں،وہ گیم ڈیولپمنٹ کمیٹی کے بھی ممبر ہیں، اس حوالے سے گزشتہ میٹنگ میں آواز بھی اٹھائی گئی تھی۔ نجم سیٹھی نے شہریارخان کو زیادہ طاقتور چیئرمین نہ بننے دینے کیلیے اپنی زیرسربراہی ایگزیکٹیو کمیٹی بھی تشکیل دی تھی مگر اب یہ اطلاعات ہیں کہ وہ بورڈ کے سربراہ بن کر اسے برقرار نہیں رکھیں گے، اگر رکھا بھی گیا تو اس کا کردار علامتی ہو گا، اس بار سابق وزیر اعظم نے جانے سے قبل نجم سیٹھی کے ساتھ عارف اعجاز کو گورننگ بورڈ میں شامل کیا تھا،یہ بھی ممکن ہے کہ انھیں ایگزیکٹیو کمیٹی کی سربراہی سونپ دی جائے۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

سپورٹس

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved