08:06 am
23 مارچ، مسلح افواج کی پریڈ، مہاتیرمحمدمہمان خصوصی

23 مارچ، مسلح افواج کی پریڈ، مہاتیرمحمدمہمان خصوصی

08:06 am

٭متعدد ممالک کے وزرائے خارجہ، برطانیہ کے وزیر دفاع کی آمدO لاہور، ہر طرف گندگی کے ڈھیر، ہرچوک میں گداگروں کی بھیڑO پنجاب اسمبلی کے ارکان کی تنخواہوں میں اضافہ کا بل، 60 کروڑ سالانہ کا اضافہ، حکومتی اور اپوزیشن ارکان کی جپھیاںO سندھ اسمبلی کے سپیکر کے تمام اہل خانہ مفرور! بزنس کلاس میں امریکہ پہنچ گئے O سندھ بنک نے اومنی گروپ کو جعلی اکائونٹس میں 24 ارب روپے دیئے O اُردو سائنس بورڈ اور اُردو لغت بورڈ کا خاتمہ O امریکہ اور طالبان میں معاہدہ۔
 
٭ملک سے فرار ہونے والوں کی تعداد میں خاصا اضافہ ہو رہا ہے۔ الطاف حسین، بابر غوری، جنرل (ر) پرویز مشرف، عشرت العباد، حسین نواز، حسن نواز، اسحق ڈار، حسین حقانی اور ایان علی کے بعد اب سندھ اسمبلی کے سپیکر آغا سراج درانی کی اہلیہ، بیٹا، بہو اور دو بیٹیاں اچانک ملک چھوڑ گئے۔ انہیں ناجائز اثاثوں کی تحقیقات کے سلسلے میں نیب نے طلب کیا تھا مگر وہ نیب کے پاس جانے کی بجائے کراچی کے ہوائی اڈے سے ایک نجی کمپنی کے طیارے میں امریکہ چلے گئے۔ ان کے لئے طیارے میں بزنس کلاس کی نشستیں ریزرور تھیں (فی ٹکٹ یکطرفہ کرایہ دو لاکھ روپے) نیب منہ دیکھتا رہ گیا۔
٭ اہم خبر: امریکی نمائندہ زلمے خلیل زاد نے اعلان کیا ہے کہ قطر میں امریکہ اور طالبان کے 16 روزہ مذاکرات مکمل ہو گئے اور چار نکاتی اتفاق رائے ہو گیا ہے۔ ابھی مزید مذاکرات ہونگے۔ اتفاق رائے اس بات پر ہوا ہے کہ افغانستان میں دہشت گردی ختم کی جائے گی، غیر ملکی فوجیں نکل جائیں گی، وہاں امن قائم کیا جائے گا، افغان سرزمین کسی کے خلاف استعمال نہیں ہو گی اور یہ کہ اس سلسلے کو مزید مستحکم کرنے کے لئے مزید مذاکرات ہوں گے۔ زلمے خلیل زاد نے بات چیت کی اس کامیابی میں پاکستان کے کردار کی تعریف کی ہے۔
٭برطانیہ کے ایک اخبار کی خاتون صحافی کے انکشاف نے امریکی فوجی و سماجی حلقوں میں تہلکہ مچا دیا ہے کہ طالبان کے امیر ملا عمر افغانستان میں امریکہ اور برطانیہ کے ایک فوجی اڈے سے صرف تین میل دور مقیم رہے۔ وہ کبھی کسی دوسرے ملک میں نہیں گئے اور یہ کہ ان کی وفات کی خبر دو سال تک چھپائی گئی تھی۔
٭پیپلزپارٹی کے ذرائع کے مطابق میاں نوازشریف کی خواہش پرعنقریب بلاول زرداری اور مریم نوازشریف میں ملاقات ہو گی اس میں نوازشریف اور بے نظیر بھٹو کے درمیان طے شدہ میثاق جمہوریت پر نظرثانی کر کے نیا میثاق تیارکیا جائے گا۔
٭ایک خبر: اسمبلی کا الیکشن ہارنے والے مظفر گڑھ کے سیاسی رہنما جمشید دستی ایل ایل بی فرسٹ ایئر کے تمام امتحانی پرچوں میں فیل ہو گئے ہیں۔ پتہ نہیں اس خبر کو نمایاں کیوں شائع کیا گیا ہے؟ قانون کے امتحان میں فیل ہونے سے کیا فرق پڑے گا؟ چپڑاسی بننے کے لئے میٹرک ہونا ضروری ہے مگر کسی اسمبلی کا رکن بننے کے لئے کسی بھی قسم کی کسی تعلیم، تجربہ، میرٹ یا ذہانت کی کوئی ضرورت نہیں۔ پنجاب اسمبلی میں بالکل ناخواندہ رکن سینئر وزیر رہے، انہوں نے دستخط کرنا البتہ سیکھ لیا تھا۔ پچھلے دور میں ایک میٹرک پاس خاتون وزیر رہیں۔ ایک بی اے پاس رکن اعلیٰ تعلیم کے وزیر رہے۔ ایک دلچسپ واقعہ ایوب خان کے دور کا! جنرل ایوب خان نے اپنے آبائی علاقہ ہری پور کے اپنے ایک وفادار ناخواندہ شربت فروش جلال الدین کو نہ صرف قومی اسمبلی کا رکن بلکہ وزیر مملکت بھی بنا دیا۔ وہ وزیرکی گاڑی اور سرکاری افسروں کا عملہ دیکھ کر حواس باختہ ہو گیا۔ گاڑی میں بیٹھ کر حکم دیا کہ دفتر کی بجائے ہری پور چلو۔ وہاں اپنی شربت کی دکان کے سامنے کھڑے ہو کر آواز لگائی، دیکھو! دیکھو، اس نے ایک شربت بیچنے والے کو وزیر بنا دیا ہے۔ اسی طرح 1972ء میں پیپلزپارٹی مارشل لا کے ذریعے برسراقتدار آئی اور وزیروں کی بجائے مشیروں کی کابینہ بنائی۔ پنجاب کے شہر نارووال سے ایک دوسرے کے سخت خلاف دو بڑے امیدوار مشیر بننے کے لئے سامنے آ گئے۔ بالآخر دونوں کو روک کر اسمبلی کے رکن نارووال کی غلہ منڈی کے ایک پرائمری پاس آڑھتی کو مشیر بنا دیا۔ اسے جیلوں کا محکمہ مل گیا۔ کچھ عرصے بعد مارشل لا ختم ہو گیا اور باقاعدہ وزیر آگئے۔ اس سے مشیر کا عہدہ چھن گیا۔ O اس صدمہ سے اس کاذہنی توازن بگڑ گیا۔ وہ نارووال کے نزدیک اپنے گائوں میں چلا گیا۔ روزانہ پینٹ کوٹ اور ٹائی لگا کر مکان کے باہر تھڑے پر آ کر حکم جاری کرتا کہ ڈرائیور سے کہو گاڑی نکالے، جیل کے معائنہ پرجانا ہے۔ تھوڑی دیر کے بعد اندر جا کر سو جاتا۔ آخری وقت تک یہی حالت رہی۔
٭اہم خبر: بھارت کی جنگی دھمکیوں کے باوجود پاکستان میں 23 مارچ کو اسلام آباد میں مسلح افواج کی تاریخی پریڈ ہو گی۔ ملائیشیا کے وزیراعظم مہاتیر محمد مہمان خصوصی ہوں گے اور صدرپاکستان عارف علوی کے ساتھ پریڈ کی سلامی لیں گے۔ اس پریڈ میں سعودی عرب اور بحرین کے فوجی دستے بھی شرکت کریں گے۔
٭ایک خبر میرے لئے حیرت انگیز ثابت ہو رہی ہے یہ کہ اخراجات کم کرنے کے نام پر ایک سرکاری ٹاسک فورس نے علم و ادب کی ترویج کے لئے اہم خدمات انجام دینے والے دو بڑے علمی اداروں، اُردو سائنس بورڈ لاہور اور اُردو لغت بورڈ کراچی کو اسلام آباد کے ’ادارہ فروغ قومی زبان‘ میں ضَم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ان دونوںاداروں نے اب تک نہایت قدر خدمات انجام دی ہیں، ان کا وجود ختم کر کے ایک ایسے ادارے میں شامل کیا جا رہا ہے جس کی 1979ء میں اپنے قیام کے بعد 40 برسوں میں اُردو زبان کے فروغ کی کارکردگی یہ ہے کہ ہر طرف، ہر ادارے میں انگریزی زبان پھیل گئی ہے اور سپریم کورٹ کی ہدایات کے باوجود چھوٹے چھوٹے سکولوں میںبھی انگریزی ذریعہ تعلیم بن گئی ہے۔ ان اداروں کا مختصر تعارف یہ ہے: 
اُردو لغت بورڈ 1958ء میں کراچی میں اُردو زبان کی جامع لغت تیار کرنے کے لئے قائم ہوا۔ اس سے مولوی عبدالحق، مشفق خواجہ، جمیل الدین عالی اور اُردو کے نامور اساتذہ وابستہ رہے۔ اس ادارے نے 22 ضخیم جلدوں پر مشتمل جامع لُغت تیار کی ہے۔ اس میں اضافہ جاری ہے۔ اُردو سائنس بورڈ 1962ء میں مرکزی اُردو بورڈ کے نام سے لاہور میں قائم ہوا۔ 1982ء میں اسے اُردو سائنس بورڈ کا نام دے دیا گیا۔ ادارے نے اب تک اُردو میں مختلف سائنسی علوم کے چھ بڑے انسائیکلوپیڈیا، سائنسی موضوعات پر ایک ہزار سے زیادہ علمی کتابیں شائع کی ہیں جو یونیورسٹیوں اور سائنسی و ٹیکنیکل اداروں میں پڑھائی جا رہی ہیں اس ادارے کو متعدد بین الاقوامی اداروں کا تعاون بھی حاصل ہے۔ ان اداروں کو ختم کرنے کے فیصلہ سے ان میں کام کرنے والے بے شمار کارکن سخت پریشان ہیں۔ کوئی نئی اتھارٹی بننے سے وہ نہ صرف پنشن بلکہ ملازمت سے بھی محروم ہو جائیں گے اور علم و ادب کے فروغ کا ایک بہائو اور پھیلائو رک جائے گا۔ اس قسم کے فیصلے کرنے والے افسر شاہی بزر جمہروں کو میرا مشورہ ہے کہ اس انداز میں اخراجات کم کرنے ہیں تو ملک بھر میں اکادمی ادبیات، لوک ورثہ، آرٹس کونسلیں اور علم و ادب کو ترقی دینے والے تمام ادارے بند کر دیئے جائیں۔ بہت فائدہ ہو گا۔
٭بھارت کے جنگی عزائم کو ناکام بنانے پر پاکستان کا عالمی سطح پر تاثر بہتر ہوا ہے اس پر اس سلسلے میں اب تک پاکستان میں ایران، سعودی عرب، عرب امارات، ملائیشیا، جرمنی، چین، جاپان،ترکمانستان اور ترکی کے وزرائے خارجہ اور برطانیہ کے وزیر دفاع پاکستان آ چکے ہیں اور پاکستان کے ساتھ دفاعی، سیاسی اور تجارتی معاہدے بہتر بنانے کے معاہدے کئے جا رہے ہیں۔

تازہ ترین خبریں