08:04 am
سچ بمقابلہ جھوٹ!

سچ بمقابلہ جھوٹ!

08:04 am

 بھارتی عوام کو یہ مسلسل باور کروایا جا رہا ہے کہ پلوامہ حملے کے بعد مودی سرکار نے پاکستان کو چاروں شانے چت کر کے دنگل جیت لیا ہے! حقیقت اس کے برعکس ہے۔ رات کی تاریکی میں فرار ہوتے بھارتی سورما اپنے بم ویرانے میں پھینک گئے ۔ مودی سرکار نے ساڑھے تین سو آتنک وادی مارنے کا دعویٰ کرڈالا ۔ بی جے پی اور درجن بھر شدت پسند بغل بچہ تنظیموں نے ریلیاں اور جلوس نکال کر جشنِ فتح مناتے ہوئے شری نریندر مودی کو ایسا مہان یودھا بنا کے پیش کیا جو ہزار برس میں پہلی بار بھارت ماتا کے دشمنوں کو دھول چٹا رہا ہے۔ 
 
الیکشن جیتنے ، سیاسی ناکامیوں کو چھپانے ‘ رافیل طیارہ سودے کی کرپشن پر پردہ ڈالنے اور امریکہ و اسرائیل جیسے فتنہ ساز اتحادیوں سے یاری نبھانے کے لیے مودی سرکار کو یہی راستہ سجھائی دیا کہ پاکستان کے خلاف جنگی جنون کی آگ کو سرجیکل سٹرائیک کا تیل چھڑک کے مزید بھڑکایا جائے ۔ مودی سرکار کی بدقسمتی کہیے یا اُس کے جنونی مشیروں کی پاکستان کی دفاعی استعداد کے متعلق خام خیالی۔ساری چالاکیاں اور زہرناک تدبیریں اُلٹی پڑ گئیں ! رات کی تاریکی میں کئے گئے ہومیو پیتھک سرجیکل سٹرائیک کا جشن ابھی بھارت کے گلی کوچوں میں گرم ہو ہی رہا تھا کہ دن کی روشنی میں پاکستان کی قابل فخر فضائیہ نے جارحیت پر آمادہ دو بھارتی طیارے اس شان سے گرائے کہ ایک طیارے کا ملبہ مقبوضہ کشمیر میں جا گرا جبکہ دوسرے کا ملبہ بمعہ ونگ کمانڈر ابھی نندن آزاد کشمیر میں۔ پاکستان کی سیاسی قیادت اور عسکری اداروں نے متانت ، بردباری اور تحمل کا مظاہرہ کرتے ہوئے بھارتی ہواباز کو رہا کر کے ایسا سفارتی طمانچہ مودی سرکار کو رسید کیا کہ جس کا نشان تو گال پر دکھائی نہیں دے رہا لیکن اس کی گونج بھارت کی ریاست سمیت تمام دنیا کو آج بھی سنائی دے رہی ۔ الیکشن جیتنا تو محال مودی سرکار کو ساکھ بچانی مشکل ہوگئی۔ 
بھارت میں سوال اٹھے کہ ساڑھے تین سو آتنک وادی مارے تھے تو اُن کی لاشیں کہاں گئیں ؟ جنازے کب ہوئے ؟ تدفین کب ، کہاں اور کیسے ہوئی ؟ رات کی تاریکی میں کون سی ٹیکنالوجی استعمال کر کے افراتفری میں فرار ہوتے بھارتی سورمائوں نے زمین پر آتنک وادیوں کی لاشیں بھی گن لیں ؟ جھینپ مٹانے اور شرمناک خفت سے جان چھڑانے کے لیے مودی سرکار نے نئی حکمت عملی اختیار کی ۔ اس نئی حکمت عملی کی اساس بھی حسب عادت سفید جھوٹ اور ڈھٹائی پر رکھی ۔ بھارتی عسکری قیادت نے طیاروں کی تباہی اور شری مان ابھی نندن کی ڈرامائی گرفتاری پر پردہ ڈالنے کے لیے یہ مضحکہ خیز دعویٰ کر ڈالا کہ بھارتی مگ اکیس طیارے نے پاکستانی ایف سولہ طیارہ تباہ کیا ہے! شرمناک حد تک ناکام سرجیکل سٹرائیک کے ثبوت دینے سے یہ کہہ کے صاف انکار کر دیا گیا کہ بھارتی افواج خفیہ آپریشنل معلومات ظاہر کرنا مناسب نہیں سمجھتیں۔ ظاہر ہے کہ کوئی ثبوت ہوتا تو پیش کیا جاتا ۔ ارون جیٹلی جیسے کہنہ مشق سیاستدان اور مودی کابینہ کے رکن نے مشہور بھارتی اینکر رجت شرما کے پروگرام آپ کی عدالت میں انٹرویو کے دوران یہی موقف اپنایا کہ سرجیکل سٹرائیک کی آپریشنل تفصیلات عوام کے سامنے لانا مناسب نہیں ۔ اگر بھارت سرکار اور افواج پاکستان پر کامیاب سرجیکل سٹرائیک کا دعویٰ کر رہی ہیں تو دیش بھگتی کا تقاضا ہے کہ ہر بھارتی شہری آنکھیں بند کر کے ان دعوئوں پر یقین کرتے ہوئے کوئی ثبوت طلب نہ کرے ۔ ثبوت طلب کرنے والے دیش بھگت نہیں بلکہ دیش دروہی سمجھے جائیں گے جس کا سادہ زبان میں ترجمہ ہے وطن کے غدار۔ مودی سرکار کی ہزیمت اور رسوائی کا سلسلہ تھما نہیں ۔ 
پاکستان نے بھارتی جھوٹ کے مقابل سچائی پر مبنی واضح موقف اپناتے ہواعلان کیا کہ نہ تو بھارت کے خلاف ایف سولہ طیارے استعمال ہوئے اور نہ ہی پاکستان کو کوئی ایف سولہ طیارہ تباہ ہوا ۔ بھارت کا دعویٰ جھوٹ پر مبنی ہے! پاکستان کے تما م ایف سولہ طیارے محفوظ ہیں اور ضرورت پڑنے پر بلاجھجھک دفاع وطن کے لیے کسی بھی دشمن کے خلاف استعمال بھی کیے جائیں گے۔ پاکستان نے ایف سولہ طیاروں کے معائنے اور گنتی کی دلیرانہ پیشکش بھی کر ڈالی۔ ہفتوں کے انتظار کے بعد بھارتی فضائیہ نے پریس کانفرنس میں پاکستانی ایف سولہ طیارے کی تباہی کے متعلق کم و بیش وہی مضحکہ خیز موقف اپنایا جو کہ ارون جیٹلی نے اپنایا تھا ۔ فضائیہ کے ترجمان کی گفتگو کا لب لباب یہی تھا کہ بھئی جب ہم کہہ رہے ہیں کہ پاکستانی ایف سولہ طیارہ گرا دیا گیا ہے تو آپ سوال کئے بنا یقین کر لیں اور کسی ثبوت کی توقع نہ رکھیں کیونکہ وہ کسی کو بھی سمجھ میں نہ آنے والی حکمت کے کارن بھارتی افواج عوام یا میڈیا کو نہیں دکھا نا چاہتی ۔ ڈھٹائی پر مبنی سفید جھوٹوں کی نہ ختم ہونے والی سیریز پر ابھی مودی سرکار پر تھو تھو جاری تھی کہ فارن پالیسی میگزین کی رپورٹ نے رہی سہی کسر پوری کرکے بھارتی جھوٹ کے تابوت میں آخری کیل ٹھوک دیا ۔
 امریکی دفاعی اہلکاروں کے انٹرویو کی روشنی میں فارن پالیسی میگزین نے پورے یقین سے یہ بیان کیا کہ پاکستان کے تما م ایف سولہ طیارے محفوظ ہیں لہٰذا بھارت سرکار کا پاکستانی ایف سولہ طیارہ تباہ کرنے کا دعویٰ جھوٹا ہے۔ مودی سرکار کے جھوٹ کو بے نقاب کرتی اور پاکستان کے سچائی پر مبنی موقف کی تائید کرتی یہ وضاحت پینٹاگون جیسے اہم امریکی دفاعی ادارے کے اہلکاروں کی زبانی ایسے حالات میں آئی ہے جبکہ پاک امریکہ دو طرفہ تعلقات پر کشیدگی اور تنائو کے بادل چھائے ہیں۔ دوسری جانب مودی جی جنوبی ایشیا میں ٹرمپ کے مصاحب بن کے اتراتے پھر رہے ہیں ۔
 پلوامہ حملے کے بعد بھارت کی جانب سے جنگی کشیدگی کی بھڑکائی جانے والی آگ پر پاکستان کی جانب سے تدبر کا ٹھنڈا پانی ڈالنے کے اقدام کو عالمی برادری میں پذیرائی ملی ہے۔ امریکہ جیسا بھارتی اتحادی بھی مودی جی کی چالاکیوں اور عیاریوں سے دامن جھاڑ کے وقتی طور پر دور جا کھڑا ہوا ہے۔ سینٹ کام کے نئے سربراہ نے پاکستانی سیاسی و عسکری قیادت سے ملاقاتوں کے دوران خطے میں امن کی بحالی کے لیے پاکستان کی مثبت کاوشوں کا برملا اعتراف کیا ہے۔ وقت نے ایک بار پھر ثابت کیا ہے کہ پاکستان کشمیر‘ افغانستان اور مشرق وسطیٰ میں جاری تنازعات کے پرامن حل کے لیے کوشاں ہے۔ اس کے برعکس بھارت سرکار مودی جیسے شدت پسند کی قیادت میں سرحد پار دہشت گردی ، عسکری جارحیت ‘کشمیریوں کی نسل کشی‘ علاقائی بالا دستی اور پڑوسی ممالک کے خلاف اعلانیہ و خفیہ جنگیں چھیڑنے کی حکمت عملی پر کار بند ہے ۔ حالیہ کشیدگی نے بھارتی جھوٹ پرپاکستان کے سچ کی فتح ثابت کر دی ہے ۔ آئی ایس پی آر کے سربراہ نے بھی بھارت سرکار کو سچ پر مبنی موقف اپنانے کا صائب مشورہ دیا ہے جو کہ یقینا مودی جی کی ردی کی ٹوکری کی نظر ہی ہوتا دکھائی دے رہا ہے ۔ دیکھتے ہیں ۔ اب مودی سرکار کی پٹاری سے کون سے جھوٹ کا سانپ برآمد ہوتا ہے۔ 

تازہ ترین خبریں