05:11 pm
غذرمیں پرائیویٹ سکولزمالکان کی من مانیاں،فیسیں بڑھادیں،والدین پریشان

غذرمیں پرائیویٹ سکولزمالکان کی من مانیاں،فیسیں بڑھادیں،والدین پریشان

05:11 pm

غذر(بیورو رپورٹ)غذر میں بعض پرائیوٹ سکولز مالکان اپنی مرضی کے مالک بن گئے سکولز انتظامیہ کی طرف سے ماہانہ سکولوں کی فیس بڑھانے سے والدین سخت پریشان ہیں ان پرائیوٹ سکولوں کی کسی قسم کی حکومتی سطح پر نگرانی نہ ہونے سے یہ لوگ اپنی مرضی کے مالک بن گئے ہیں جبکہ گرمیوں اور سردیوں کی چھٹیوں میں بھی والدین سے بچوں کی پوری فیس وصول کرتے ہیں مگران پرائیوٹ سکولز مالکان کو لگام دینے والا کوئی نہیں ہے
محکمہ ایجوکیشن کے زمہ داروں نے بھی انکھیں بند کرلی ہے غذر میں سینکڑوں کی تعداد میں پرائیوٹ سکول کھل گئے ہیں اور ان سکولوں میں بچوں کی فیس سکول انتظامیہ اپنی مرضی سے مقرر کر رہی ہے اور ماہانہ سکول کی فیس بڑھا دیا جاتا ہے مگر غریب والدین کا کوئی پرسان حال نہیں گرمیوں کی چھٹیوں کی بھی پوری فیس وصول کی جاتا ہے حالانکہ سکولوں میں تعلیم کے معیار کو دیکھتے ہوئے فیس مقر ر ہونا چاہئے مگر یہاں جس کی جو مرضی ائے فیس بڑھا دیتا ہے اس حوالے سے محکمہ تعلیم کے حکام بھی ان پرائیوٹ سکولوں کی فیس بڑھانے پر کوئی ایکشن نہیں لیتے جس باعث یہ لوگ اپنی مرضی کے مالک بن گئے ہیںغذر میں پرائیوٹ سکولوں کی بھر مار متعدد سکول سرکاری ریکارڈ میں رجسٹرڈ بھی نہیں اس کے باوجود بھی ہر محلے میں سکوکوں کو کھول دیا گیا ہے اور اس طرح کی صورت حال غذ ر میں بھی جہاں جگہ پرائیوٹ سکولوں کی بھر مار ہے بعض سکولوں میں بہترین تعلیم دی جاتی ہے جبکہ اب تو ہر دوسرے دن ایک نیا سکول کھول دیا جاتا ہے اور والدین پریشان ہیں کہ وہ اپنے بچوں کو کس سکول میں داخلہ کرادیں محکمہ ایجوکشن کے زمہ دران بھی کبھی ان سکولوں کا دورہ کرنا مناسب نہیں سمجھتے ہیں جس باعث یہ بھی معلوم نہیں ہوسکتا کہ روز روز نئے سکول کھولنے والے افراد کے پاس حکومت کی طرف سے این او سی بھی ہے یا نہیں اور ماہانہ فیسں بڑھانے والوں سے بھی کوئی پوچھنے والا نہیں جس باعث والدین ماہانہ ہزاروں روپے بچوں کے سکول فیسوں کی مد میں ادا کرتے ہیں علاقے میں بیروزگار عام ہونے کی وجہ سے اب پرائیوٹ سکول کھولنا ایک منافع بخش کاروبار بن گیا ہے ذرائع کے مطابق اس وقت غذر میں درجنوں ایسے سکول بھی ہیں جو کسی بھی سرکاری ادار ے سے رجسٹرڈ نہیں اس کے باوجود ان سکولوں کا چلا جارہا ہے اس حوالے سے محکمہ تعلیم کو باقاعدہ نوٹس لینا چائیے کہ بغیر این او سی کے چلائے جانے والے سکولوں کے خلاف کارروائی عمل میں لایا جائے اور زائد فیس وصول کرنے والے سکولوں کے خلاف بھی کارروائی عمل میں لایا جائے۔

تازہ ترین خبریں