06:03 pm
4برس میں جواقدامات کئے اسکی مثال نہیں ملتی(وزیراعلیٰ)

4برس میں جواقدامات کئے اسکی مثال نہیں ملتی(وزیراعلیٰ)

06:03 pm

گلگت ( اوصاف نیوز ) وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ گلگت میں ٹریفک کے نظام کو مزید بہتر بنانے کیلئے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کئے جائیں موسم گرما میں سیاحوں کی بڑی تعداد گلگت بلتستان کارخ کرتی ہے ضروری مقامات پر رات کے اوقات میں بھی ٹریفک سارجنٹ کی موجودگی یقینی بنائی جائے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ گلگت میں ٹریفک پولیس کی تعداد 117 سے بڑھاکر 200کی جائے
اور ٹریفک جوانوں کی مانیٹرنگ کی جائے۔ سیف سٹی پروجیکٹ سے بھی ٹریفک کے نظام کو بہتر بنانے میں معاون ثابت ہورہا ہے اس مزید استعفادہ حاصل کیاجائے۔ ان خیالات کااظہار وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے ٹریفک پلان کے حوالے سے منعقدہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے متعلقہ آفیسران کو ہدایت کی ہے کہ کمرشل تعمیرات میں پارکنگ لازمی قرار دی جائے۔ پارکنگ ایریا ز کے بغیر کمرشل تعمیرات پر پابندی عائد کی جائے۔ تمام ٹیکسی گاڑیوں کی رجسٹریشن کی جائے اور کرایوں کا تعین اور مینٹی ننس لازمی چیک کرائی جائے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ شاہراہوں پر غیر ضروری یوٹرن کا خاتمہ کیا جائے۔ضروری مقامات پر ٹریفک سگنل کی تنصیب عمل میں لائی جائے۔ ٹریفک پلان کے حوالے سے پی سی ون کو ایک ہفتے میں متعلقہ فور م میں منظوری کیلئے پیش کیا جائے۔ تمام اضلاع میں ٹیکسی گاڑیوں کی ریگولریشن کا نظام وضع کیاجائے اور عوام میں آگاہی پیدا کرنے کیلئے مہم چلائی جائے۔گلگت ( اوصاف نیوز ) وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان کی تمام آبادی کا مکمل انشورنس کرایا جائے گا اسی سلسلے میں نادار اور مستحق افراد کا انشورنس حکومت گلگت بلتستان کرائے گی۔ حکومت گلگت بلتستان نے مختلف اضلاع میں غریب اور مستحق افراد کو علاج کے مفت اور بہترین علاج کی سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنانے کیلئے اے ایف ڈبلیو اور جرمن حکومت کے تعاون سے ہیلتھ انشورنس سکیم کا آغاز کیا جس کے انتہائی مثبت نتائج سامنے آرہے ہیں۔ ناداراورمستحق مریضوں کو بہترین علاج و معالجے کے سہولیات میسرآرہے ہیںاور ہسپتالوں کی حالت میں بہتری آرہی ہے۔ ضلع سکردواور دیامر میں مسلم لیگ (ن) کے سابق وفاقی حکومت نے وزیر اعظم ہیلتھ انشورنس پالیسی کے تحت انشورنس کارڈ فراہم کئے جس سے عوام مستفید ہورہے ہیں۔ کے ایف ڈبلیو اور حکومت گلگت بلتستان کے باہمی تعاون سے مقامی لوگوں کی ہیلتھ انشورنس کے مثبت تنائج کو مدنظر رکھتے ہوئے بتدریج اس پالیسی کو دیگر اضلاع تک وسعت دیا جارہاہے۔ گلگت بلتستان کی تعمیر و ترقی کیلئے جرمن حکومت اور کے ایف ڈبلیو کا کردار قابل تحسین ہے۔ گلگت بلتستان کے پاور سیکٹر میں کے ایف ڈبلیو ڈیڑھ ارب کا گرانٹ فراہم کررہاہے جس سے نگر اور ہنزہ میں بجلی پیدا کرنے کے منصوبے تعمیر کئے جائیں گے۔ گلگت بلتستان حکومت اس منصوبے کی افادیت کو مد نظر رکھتے ہوئے تمام سہولیات اور درکار سٹاف کی کمی کو پورا کرنے میں مدد کرے گی۔ حکومت گلگت بلتستان کی ترجیحات میں صحت کا شعبہ شامل ہے اسی لئے محکمہ صحت میں خصوصی اصلاحات متعارف کرائے گئے جس کے مثبت نتائج سامنے آرہے ہیں۔ ڈاکٹر کی کمی کا مسئلہ حل ہوا ہے۔ کارڈک اور کینسر ہسپتال جیسے منصوبے تعمیر کئے جارہے ہیں۔ صوبے میں دو سو مزید اضافی ڈاکٹرز مزید درکار ہیں جس کیلئے ڈاکٹروں کی آسامیاں تخلیق کی جائیں گی۔ گلگت بلتستان کی مکمل آباد ی ہیلتھ انشورنس کیلئے قانون سازی کی جائے گی پہلے مرحلے میں سرکاری ملازمین کی ہیلتھ انشورنس کیلئے درکار قانون سازی کی جاچکی ہے۔ ان خیالات کا اظہار وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کے ایف ڈبلیو کے ہیلتھ آف مشن سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہاکہ گلگت بلتستان کی تعمیر و ترقی کیلئے بین الاقوامی سرمایہ کاری اور گرانٹ چار سالوں میں ملا ہے اس کی مثالی ماضی میں نہیں ملتی۔

تازہ ترین خبریں