11:29 am
 آزاد کشمیر میں ایک مستحکم قومی جمہوری حکومت قائم کی جائے، ساجد رحمن بھٹی

آزاد کشمیر میں ایک مستحکم قومی جمہوری حکومت قائم کی جائے، ساجد رحمن بھٹی

11:29 am

میرپور(بیورورپورٹ) جموںکشمیر محاذ رائے شماری کے مرکزی نائب صدر دوئم ساجد رحمن بھٹی نے کہا ہے کہ ہندوستان کی طرف سے مودی کے انتخابات جیتنے کے بعد مذاکرات اور مسئلہ کشمیر کے حل کی توقع رکھنا مایوسی اور سیاست سے عاری سوچ کی غماز ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے محمد عظیم دت ایڈووکیٹ سابق صدر محاذ رائے شماری کی رہائش گاہ پر آزاد کشمیر کے سیاسی حالات اور مقبوضہ کشمیر کی صورت حال پر عمائدین علاقہ سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ساجد بھٹی نے کہا گذشتہ ستر سالوں میں ہندوستان نے ایسا کبھی نہیں کیا جب کبھی حالات کی الجھن میں ہندوستان پھنستا ہے تو فوری طور پر
مذاکرات اور مسئلہ کشمیر کے حل کی بات کرتا ہے لیکن جب وہ مشکل حالات سے نکل جاتا تو اپنے اعلانات اور وعدوں سے منحرف ہو جاتا ہے بلکہ یہ کہتا ہے کہ پاکستان کے زیر کنٹرول کشمیر پر مذاکرات کے لئے تیار ہے ساجد بھٹی نے مزید کہا کہ ہندوستان13 اگست1948 کو یو این او میں کشمیری عوام کو حق خود ارادیت کی بنیاد پر رائے شماری کے ذریعے اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے کا موقع دینے کا وعدہ کرنے کے باوجود 71 سالوں سے اس سے انحراف کر رہا ہے انہوں نے کہا اس کے باوجود ہندوستان سے مذاکرات کی امیدیں لگانے کی بجائے حکومت پاکستان آزاد کشمیر حکومت کو پوری ریاست جموں کشمیر کی نمائیندہ حکومت تسلیم کرے اس کی فوج اور وزارت خارجہ بحال کرکے یو این او کی سکیورٹی کونسل میں رائے شماری کرانے کی آفر کرے اور ہندوستان کو سکیورٹی کونسل رائے شماری نہ کرانے کی صورت میں ادارہ اقوام متحدہ کے فیصلوں کی خلاف ورزی اور عالمی امن خراب کرنے کے جرم میں یو این او سے نکال باہر کرے اور ریاست جموں کشمیر کو فوری طور پر ٹرسٹی شپ کونسل کے تحت اپنی تحویل میں لے کر مناسب عرصہ کے بعد رائے شماری کرائے انہوں نے کہا اس وقت تک آزاد کشمیر میں ایک مستحکم قومی جمہوری حکومت قائم کی جائے لو برادری،علاقہ،مذہب، رنگ اور زبان کی بنیاد پر نہ ہوبلکہ قانون اور آئین کی حکمرانی کو یقینی بنایا جائے اور آزاد کشمیر اسمبلی کے ممبر سردار حسن ابراہیم نے جو ریفرنس دائر کیا ہے اس کی تحقیقات کرائی جائے اور عوام میں ایک آزاد عدلیہ کے قیام کو یقینی بنایا جائے

تازہ ترین خبریں