07:05 am
پاکستان اور بھارت میں کرتارپورراہداری پر اختلافات سامنے آگئے، بھارت 2مطالبات پر اڑ گیا

پاکستان اور بھارت میں کرتارپورراہداری پر اختلافات سامنے آگئے، بھارت 2مطالبات پر اڑ گیا

07:05 am

اسلام آباد(نیوز ڈیسک ) پاکستان اور بھارت کے درمیان کرتاپورراہداری پر اختلافات سامنے آ گئے ہیں، جن کے تحت پہلا معاملہ سکھ یاتریوں کی تعداد اور دوسرا ٹرانسپورٹیشن کا ایشو ہے، پاکستان 500 جبکہ بھارت 5ہزار سکھ یاتری بھیجنا چاہتا ہے، پاکستان بذریعہ بس جبکہ بھارت پیدل سفر کروانے پر بضد ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستان اور بھارت کے درمیان کرتارپور راہداری کامسئلہ تاحال برقرار ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان اختلافات کا پہلا نکتہ یہ ہے کہ پاکستان نے بھارت کو روزانہ کی بنیاد پر 500 سکھ یاتریوں کی آمد کی پیشکش کی ہے۔
جبکہ بھارت روزانہ کی بنیاد پر 5 ہزار سکھ یاتریوں کو پاکستان بھیجنے پر بضد ہے۔لیکن پاکستان نے مئوقف اپنایا ہے کہ اتنی بڑی تعداد میں یاتریوں کی آمد اور انتظامات میں دشواری کا سامنا ہوگا۔ اسی طرح پاک بھارت دونوں ملکوں کے درمیان دوسرامسئلہ سکھ یاتریوں کی ٹرانسپورٹیشن سے متعلق سامنے آیا ہے۔جس کے تحت پاکستان کا مئوقف ہے کہ سکھ یاتری روزانہ بسوں پر کرتارپور آسکتے ہیں لیکن بھارت چاہتا ہے کہ سکھ یاتری بسوں کی بجائے پیدل سفرکرکے کرتارپور جائیں۔ واضح رہے گزشتہ روز کرتار پور راہداری مذاکرات کیلئے بھارت میں پاکستان کے نائب ہائی کمشنر سید حیدر شاہ امرتسر پہنچے۔پاکستانی وفد مذاکرات کیلئے آج امرتسر پہنچا ہے۔ سید حیدر شاہ نے بتایا کہ پاکستان سکھ برادری کے بآسانی پاکستان پہنچنے کیلئے کرتارپور راہداری کھولنا چاہتا ہے۔ امرتسر ائیرپورٹ پہنچنے پر بھارتی میڈیا سے بات کرتے ہوئے سید حیدر شاہ کا کہنا تھا کہ کرتارپور راہداری کا منصوبہ پاکستان کی طرف سے شروع کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان چاہتا ہے کہ سکھ یاتری راہداری کے ذریعے بآسانی پاکستان تک پہنچیں۔

تازہ ترین خبریں