10:48 am
میرا شوہر اپنے ساتھی کیساتھ مل کرکس طرح میری عصمت دری کرتا رہا

میرا شوہر اپنے ساتھی کیساتھ مل کرکس طرح میری عصمت دری کرتا رہا

10:48 am

لاہور(نیوز ڈیسک) پنجاب کے مرکزی شہر لاہور میں چینی لڑکے سے پاکستان لڑکی کی شادی کا ایک اور کیس سامنے آ گیا ہے۔اس حوالے سے میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ چینی باشندے کی جانب سے دھوکہ دہی سے پاکستانی لڑکی سے شادی کا ایک اور کیس سامنے آ گیا ، متاثرہ لڑکی نے کارروائی کیلئے پولیس کو درخواست دیدی ۔ بتایا گیا ہے کہ آمنہ نامی لڑکی مغلپورہ کی رہائشی ہے جس سے چینی باشندے نے خود کو مسلمان ظاہر کر کے عبد الخالق کے نام سے شادی کی ۔ابتداء میں چینی باشندے کا نام عبدالخالق بتایا گیا تھا۔
متاثرہ خاندان کے مطابق ارشد اور ہما نےشادی کرائی جو نصیر آباد میں ہوئی ۔ لڑکی کے مطابق شادی کے بعد چینی باشندے نے ساتھی کے ساتھ مل کر زیادتی کا نشانہ بنایا ۔متاثرہ خاندان کے مطابق پولیس کو درخواست دیدی ہے لیکن تاحال کوئی کارروائی عمل میں نہیں لائی گئی ۔واضح رہے چینی شہریوں کی جانب سے پاکستانی لڑکیوں سے شادی کرنے اور ان پر ظلم ڈھانے کے کئی واقعات حال ہی میں سامنے آئے ہیں جو باعث تشویش ہیں کہ کس طرح چینی باشندے پاکستانی لڑکیوں سے جعلی شادیاں کرکے انہیں اپنے ساتھ چین لے جاتے ہیں اور وہاں انہیں جسم فروشی اور اعضا فروشی پر مجبور کیا جاتا ہے۔چینی باشندے سے چنگل سے بھاگ نکلنے میں کامیاب ہونے والی فیصل آباد کی رہائشی ایک لڑکی مہک نے اس حوالے سے کئی ہولناک انکشافات کیے۔ سماجی رہنما سلیم اقبال نے اس حوالے سے انکشاف کیا ہے کہ مہک نے مزید انکشافات کرتے ہوئے کیا کہا کہ اس کام میں ریٹائرڈ ڈی ایس پی پرویز بٹ کا بیٹا انس بٹ اس گینگ کا سرغنہ تھا ۔ چونکہ اس میں بہت پیسہ ہے اسی لیے کافی لوگ اس میں شامل ہوتے گئے۔اب تک تقریباً ایک ہزار سے 1200 لڑکیوں کی شادی ہو چکی ہے جس میں سے 300 کے قریب لڑکیاں مسلمان تھیں۔ اس حوالے سے ایف آئی اے کو شکایات موصول ہوئی ہیں اور ایف آئی اے کے مطابق چینی نوجوان پاکستانی میرج بیور اور ایجنٹس سے مل کر پاکستانی لڑکیوں سے شادی کر تے تھے۔ شادیکے بعد ان لڑکیوں سے جسم فروشی کا دھندہ کروایا جاتا تھا، اس بات کے بھی شواہد ملے ہیں کہ لڑکیوں کے اعضا بھی نکالے گئے۔ایف ائی اے اس سکینڈل میں اب تک مجموعی طور پر 10 چینی لڑکوں کو گرفتار کر چکی ہے اور مزید تحقیقات جاری ہیں۔