10:05 am
پاک بھارت کشیدگی ۔۔۔ اگر ایٹمی حملہ ہو  جائے تو بچا کیسے جا سکتا ہے ؟ بڑی خبرآگئی

پاک بھارت کشیدگی ۔۔۔ اگر ایٹمی حملہ ہو جائے تو بچا کیسے جا سکتا ہے ؟ بڑی خبرآگئی

10:05 am

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) پاک بھارت کشیدگی آج کل عروج پر ہیں ، پاکستان کو ایٹمی قوت بنے لگ بھگ 21 سال ہو چکے ہیں۔ 28 مئی 1998ء کو پاکستان اسلامی دنیاکی باضابطہ پہلی ایٹمی طاقت بنا تھا۔ اس دن پاکستان سمیت پوری اسلامی دنیا میں خوشیاں منائی گئیں۔ ایٹمی قوت بننے کے بعد پاکستان کا نام ،مقام دنیا میں بلند ہوا اوراس کے وقار میں اضافہ ہوا ۔اس وقت سے اب تک ہر سال 28 مئی کا دن یوم تکبیر کے طور پرجوش وخروش سے منایا جاتا ہے۔بلا شبہ ایٹمی ٹیکنالوجی دور حاضر کی اہم ترین ایجاد ہے
اس کے جہاں بہت سے فائدے ہیں وہاں اس کے بہت زیادہ نقصانات بھی ہیں۔ضروری ہے کہ اس کے فوائد سے مستفید ہوا جائے اور نقصانات سے بچا جائے۔ اس وقت دنیا میں جتنے ملک بھی ایٹمی صلاحیت سے لیس ہیں ان میں سب امریکہ ،روس ،برطانیہ ،دیگر یورپین ممالک نے ایٹمی ٹیکنا لوجی سے مستفید ہونے کے ساتھ ساتھ اس بات کی پیشگی تیاریاں کر رکھی ہیں کہ اگر دشمن ملک ایٹمی حملہ کردے تو کیا کیاحفاظتی تدابیر اختیار کی جاسکتی ہیں اور کسی بڑے نقصان سے کیسے بچا جا سکتا ہے؟ پاکستان ایک ایسا ملک ہے جو ایٹمی صلاحیت سے تو لیس ہے لیکن اگر خدانخواستہ پاکستان پر ایٹمی حملہ ہو جائے تو ایسی صورت میں اس کے نقصانات سے کیسے بچا جائے اس موضوع پر کوئی نہ تو بات کرتا ہے اور نہ ہی اس حوالے سے آج تک کوئی بات کی گئی ہے۔اس موضوع پر اگر کوئی قابل قدر کام ہوا ہے تو وہ ڈاکٹر سلطان بشیر محمود نے کیا ۔ڈاکٹر سلطان بشیر کا شمار پاکستان کے ایٹمی پروگرام کے اولین معماروں ہوتا ہے۔ انہوں نے اس موضوع پر ایک کتاب بعنوان ’’کیمیائی،بیکٹیریائی اور ایٹمی ہتھیاروں کی تباہی سے بچائو کی حفاظتی تدابیر‘‘ تصنیف کی۔ ڈاکٹر سلطان بشیر نے اس کتاب میں ایٹمی حملہ سے بچائو کے لئے جامع حفاظتی تدابیر جمع کر دی ہیں ۔ڈاکٹر سلطان اپنی شہرہ آفاق کتاب میں لکھتے ہیں کہ ہیروشیما اور ناگاساکی پر ایٹم بموں کا گرایاجانا۔۔پہلا تجربہ تھا یہی وجہ تھی کہ جب جاپان نے ہتھیار ڈال دیئے توسائنسدان ان بموں سے ہونے والی تباہی کے تجزیاتی مطالعہ میں مصروف ہوگئے۔ا نہوں نے ایک ایک پہلو کو بہت غورسے جانچا اور پرکھا دونوں شہرو ں میں ہونے والی تباہی کا تجزیہ وموازنہ کیا یہاں تک کہ ان دوحملوں میں جو لوگ مارے گئے یا زخمی ہوئے ان کی لاشوں اور زخموں کے تجزیئے بھی کئے گئے ۔چنانچہ سائندان اس نتیجے پر پہنچے کہ اگر مناسب حفاظتی تدابیر اختیار کی جاتیں توآدھے سے زیادہ لوگ تباہی سے بچ سکتے تھے۔ حملہ سے پہلے اور حملہ کے بعد کی حفاظتی تدابیر، محفوظ حفاظتی پناہ گاہوں کے ڈیزائن، بلڈنگ کوڈ اور مہلک ایٹمی شعاعوں سے محفوظ رہنے کے طریقوں پر سائنسدانوں نے کا م کئے۔ امریکہ اور برطانیہ وغیرہ میں ایٹمی حملوں سے بچاؤ کے لئے اقدات کئے گئے۔جس کے تحت لوگوں کو ایٹمی حملوں کی نوعیت سے آگاہ رکھا جاتا ہے اور حفاظتی ٹریننگ دی جاتی ہے۔احتیاطی تدابیر اور کتابچے تقسیم کئے جاتے ہیں۔اسکولوں اور کالجوں میں ایٹمی حملوں سے بچاؤ کے لئے سول ڈیفنس کی تعلیم دی جاتی ہے۔بڑے بڑے شہروں کے اندر زیرزمین خصوصی حفاظتی پناہ گاہیں بنائی گئی ہیں۔اسپتالوں میں ایٹمی جنگ کے دوران زخمی ہونے والوں کے علاج کے لئے ڈاکٹروں اور نرسز کی تربیت کا اہتمام کیا جاتا ہے۔افواج اور عام لوگوں کو حفاظتی ٹیکے لگائے جاتے اور ویکسینشن فراہم کی جاتی ہے ایٹمی حملہ کے متعلق اطلاعی وارننگ سگنل کا ہمہ وقت انتظام کیا گیا ہے ۔ایٹمی حملہ کے بعد دوسرا شدید ترین خطرہ جو انسانوں لاحق ہوتا ہے وہ تابکاری کا ہے۔جب ایٹمی دھماکہ ہوتا ہے تو اس میں جو گردو غبار شامل ہو وہ شدید طور پر تابکار ہوجاتا ہے۔یہ تابکار گردو غبارپھیپڑوں میں پہنچ جائے۔

تازہ ترین خبریں