01:32 pm
نواز شریف کے ہاتھ میں موجود انتہائی مہنگی گھڑی میں کیا کیا خصوصیات ہیں ؟

نواز شریف کے ہاتھ میں موجود انتہائی مہنگی گھڑی میں کیا کیا خصوصیات ہیں ؟

01:32 pm

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) سابق وزیراعظم نواز شریف کی طبیعت ناساز ہے جس پر ڈاکٹروں نے انہیں اسپتال منتقل ہونے اور اپنا علاج کروانے کا مشورہ دے رکھا ہے لیکن نوازشریف ہیں کہ اسپتال جانے پر آمادہ ہی نہیں ہیں۔ اس حوالے سے کالم نگار منیر احمد بلوچ نے اپنے حالیہ کالم میں اہم انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ نواز شریف کے لیے اسپتالوں میں بہترین کمروں کا انتخاب کیا گیا لیکن چونکہ نواز شریف تین مرتبہ وزیراعظم رہ چکےہیں اس لیے انہیں خدشات ہوتے ہیں کہ اسپتال کے جن کمروں میں انہیں رکھا جائے گا انہیں حکومت کی چند ایک ایجنسیوں نے ان کے وہاں آنے سے پہلے مکمل طور پر انتہائی محفوظ طریقوں سے آڈیو اور ویڈیو ریکارڈنگ کے لیے بگ کر لیا ہو گا۔
یہی وجہ ہے کہ جناح اسپتال لاہور میں جب انہیں تین کمروں پر مشتمل حصے میں لایا گیا تو انہوں نے وہاں رہنے سے انکار کرتے ہوئے گائنی وارڈ میں رہنے کو ترجیح دی۔شاید انہیں وہاں بھی ریکارڈنگ کا خدشہ تھا۔ انہیں یہ شک تھا کہ میڈیکل بورڈ جو انہیں چیک کر رہا ہے اس کی مکمل ریکارڈنگ ایجنسیاں محفوظ کر رہی ہیں۔ لیکن میاں نواز شریف جانتے ہیں کہ ان کے پاس جرمنی کی تیار کردہ ایک انتہائی بیش قیمت ایسی گھڑی ہے جسے ہر وقت اپنے ہاتھ پر باندھ کر رکھتے تھے۔ اس گھڑی کی یہ خصوصیت ہے کہ وہ کمرے میں بیٹھے ہوئے جو چاہے گفتگو کریں اس گھڑی کے اندر ایسے چھوٹے چھوٹے آلات نصب ہیں جو ریکارڈنگ اور ویڈیو بنانے والے مواصلاتی ذرائع کو ناکارہ بنا دیتے ہیں۔ اگر تو ان کے پاس اس وقت وہ گھڑی نہیں ہے تو ان کے خدشات بجا ہیں لیکن اگر یہ گھڑی ان کے پاس موجود ہے یا جب بھی ان سے ملنے کے لیے مریم آتی ہیں تو ان کے پاس بھی اس قسم کی گھڑی کا ہونا ناممکن نہیں کیونکہ اپنی گفتگو کی ایجنسیوں سے ممکنہ ریکارڈنگ جیسے معاملات میں میاں صاحب ہمیشہ سے ہی بہت محتاظ رہتے چلے آرہے ہیں۔

تازہ ترین خبریں