02:52 pm
ایک نوجوان جواللہ کی راہ میں شہیدہوامگرقبرنے  اسے قبول کرنے سے انکارکردیااورباہرپھینک دیا

ایک نوجوان جواللہ کی راہ میں شہیدہوامگرقبرنے اسے قبول کرنے سے انکارکردیااورباہرپھینک دیا

02:52 pm

مفتی طارق مسعودنے اپنے بیان کیاکہ بعض اوقات میں دیکھنے میں آیاہے اورمیں نے بھی دیکھاہے کہ شہداء کاجسم خراب نہیں ہوتاکئی کئی مہینے بعدقبرکھودکرنکالاگیاتودیکھاگیاکہ جسم اسی طرح پڑاہے یہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے کرامت ہوتی ہے لیکن موت کے بعدجسم کاخراب ہوناایک فطری عمل ہے چاہے کوئی طبعی موت مراہویااس کی شہادت ہوئی ہوجسم کے گلنے کاہرگز یہ مطلب نہیںکہ اس بندے کے اعمال ٹھیک نہیں تھے۔میں نے ایسے بھی شہداء دیکھے ہیں کہ ایک شہیدبہت نیک تھا
لیکن شہادت کے بعداس کے جسم سے بوآنے لگی اورایک شہیدکم نیک تھالیکن اس میت محفوظ رہی۔اللہ تعالیٰ دکھادیتے ہیں کہ خوشبواورجسم کے محفوظ ہونے کاتعلق کرامت سے ہوتاہے اللہ تعالیٰ جب چاہتاہے کرامت کوظاہرکردیتاہے۔مفتی طارق مسعود نے کہاکہ میں ایک دفعہ ایک عالم سے پوچھاکہ ایک شہیدجوکم درجے کانیک تھااس کی شہاد ت کے بعداس کے جسم سے خوشبوآنے لگی اورایک شہیدجوبہت نیک تھااس کی شہادت کے بعداس کے جسم سے بدبوآنے لگی تویہ کیابات ہے توان عالم نے ایک بہت خوبصورت بات کی اورکہاکہ جس کے جسم سے بدبوآرہی ہے اس کواللہ تعالیٰ نے کامل درجے کی شہادت دی ہےاس کاجسم بھی اپنی راہ میں قبول کرلیا۔وہ قیامت میں کہے گاکہ اے اللہ میرے جسم کوکیڑوں نے کھایا۔مفتی طارق مسعو دنے کہاکہ عالم کایہ کہناتھاکہ مجھے احادیث میں موجودایک واقعہ یادآیا،عبداللہ ابن مبارک نے ایک واقعہ ذکرکیاہےکہ تابعین کی ایک جماعت جہادمیں گئی اللہ کی راہ میں لڑتے ہوئے ایک نوجوان شہیدہوگیاجب اس کودفن کرنے کے لیے قبرمیں رکھتے توقبراٹھاکرباہرپھینک دیتی۔ظاہراً تویہ ایک بہت بری علامت ہے بعض ایسے واقعات ہوئے ہیں جس میں قبرمردے کوقبول نہیں کرتی اورباہرپھینک دیتی ہے۔وہ لوگ پریشان ہوگئے اوراس کی والدہ سے جاکرپوچھاکہ اس نے ایساکونساعمل کیاتھاکہ جس کی وجہ سے قبراس کوقبول نہیں کررہی ۔اس نوجوان کی والدہ نے کہاکہ میرابیٹاجانےسے پہلے دعاکرکے گیاتھاکہ اےاللہ مجھے تیری راہ میں ایسی شہادت چاہیے کہ قبرمجھے قبول نہ کرے میں جنگل میں پڑاہوں اوردرندے مجھے نوچ کرکھاجائیں اورقیامت کے دن میراحشردرندوں کے پیٹ سے ہو۔

تازہ ترین خبریں