جمہوریت بہترین انتقام؟
  3  ‬‮نومبر‬‮  2017     |     کالمز   |  مزید کالمز

مسلم لیگ (ن) کے آخری مہینوں میں ٹماٹر 120 روپے' پیاز 80روپے سے لے کر 100 روپے' شلجم60روپے' مولی 40روپے' آلو درجہ اول 50روپے' دیسی ادراک 240روپے' چینی 54 روپے ' دال مونگ 140روپے فی کلو کے حساب سے بک رہی ہے... جبکہ اس کے علاوہ بھی جتنی بھی اشیائے خوردونوش ہیں... ان سب کی قیمتیں آسمان سے باتیں کر رہی ہیں... پاکستان کے عوام انسانی زندگی اور بنیادی اشیاء خوردونوش کی قیمتوں کو... بلندیوں تک پہنچانے پر وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور ان کی پوری کابینہ کے انتہائی مشکور و ممنون ہیں... کیونکہ انہوں نے قیمتوں کو ''بلندیوں'' پر پہنچا کر... ان حکومتی ناقدین کے منہ بند کر دئیے ہیں کہ جو حکومت پر قوم کو پستیوں میں گرانے کے الزامات عائد کیا کرتے تھے۔ قوم کو بھی اشیاء خوردونوش کی قیمتوں کی ''بلندیاں'' مبارک ہوں' چند دن پہلے تک جو ''ٹماٹر'' ڈھائی سو روپے کلو بک رہے تھے ... اب 120روپے کلو تک مل جاتے ہیں ... ''ٹماٹروں'' کی قیمت'' بلندیوں'' سے جو پستی کی طرف آئی... اس پر ہمیں نہایت افسوس ہے۔ ہمارے حکمران بلندیوں کے قائل ہیں... اس لئے ان سے گزارش ہے کہ کوشش کریں کہ ٹماٹروں کی قیمت کو پستیوں سے نکال کر ایک دفعہ پھر اوج ثریا کی بلندیوں تک پہنچا دیا جائے... تاکہ ''ٹماٹر شریف'' بے حرمتی سے بچ جائیں... اگر ''ٹماٹر'' اسی طرح پست قامت ہوتے چلے گئے... تو کہیں یہ نہ ہو کہ لوگ حکومت پر ہی اعتماد کرنا چھوڑ دیں۔ مسلم لیگ (ن) کو پاکستان کے عوام نے 30 سالوں میں 3دفعہ اقتدار کی دولت سے مالا مال کیا تھا... اس لئے لیگی حکومت کا فرض بنتا ہے کہ ... وہ ملک و قوم کو بلندیوں تک لے جائے... اگر ملک و قوم بلندیوں تک نہیں پہنچ سکتے تو اشیاء خوردونوش اور جان بچانے والی... ادویات کے علاوہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کو تو بلندیوں تک پہنچا ہی سکتے ہیں... شاید اسی لئے وزیراعظم عباسی کی حکومت کی وزارت خزانہ نے یکم نومبر سے پٹرولیم کی مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کرکے انہیں بلندیوں تک پہنچا دیا۔ ہمارے ایک مری کے دوست ہیں... ان سے حالیہ دنوں میں میری جب بھی گفتگو ہوئی ... وہ سینے پر ہاتھ مار کر کہتے تھے کہ ہاشمی صاحب! اب یہ وزیراعظم ہماری مری کا عباسی ہے... مسئلہ ہی کوئی نہیں... دیکھنا اب عوامی مسائل چٹکی بجاتے ہی حل ہو جائیں گے۔ گزشتہ روز اسی دوست کا ''مری'' سے فون آیا... کہنے لگا ہاشمی صاحب سنائو کیا حال ہے؟ میں جو آلو' پیاز' شلجم ' ادرک اور لہسن خریدنے کے بعد ''کراہ'' رہا تھا... اسے فوراً جواب دیا کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھانے پر ہم آپ مری والوں کے بڑے شکر گزار ہیں... میرے جملے میں چھپا ہوا طنز میرا دوست سمجھ گیا... مگر ڈھیٹ تھا... بجائے شرمندگی محسوس کرنے کے پوری ڈھٹائی سے بولا کہ جس طرح ''مری'' کے پہاڑ سربلند ہیں... ہم اشیاء خوردونوش ہوں یا پٹرولیم مصنوعات ... ان سب کی قیمتوں کو مری کے پہاڑوں سے بھی بڑھ کر سربلندی بخشیں گے۔ ایک طرف تم عوام روتے ہوئے بلندی' بلندی پکارتے ہو... اور دوسری طرف قیمتوں کو جب ہم بلندی پر لے جاتے ہیں تو پھر تمہاری چیخیں نکلنا شروع ہو جاتی ہیں... جب ہمارے نواز شریف پوچھتے پھریں گے کہ ''مجھے کیوں نکالا؟'' ''مجھے کیوں نکالا؟'' مگر تم انہیں جواب دینے کے لئے بھی تیار نہیں ہوگے... تو پھر ہم بھی جمہوری حکومت ہیں... اور جمہوریت کا اصل حسن ہی یہ ہے کہ عوام روتے رہیں' بلکتے رہیں' شور مچاتے رہیں' پستے رہیں اور حکمران گلچھرے اڑاتے ہیں' میں جو پہلے ہی ''کراہ'' رہا تھا۔ اپنے دوست کی منطق سن کر مزید کراہنے پرمجبور ہوگیا۔ ویسے یہ میرا اندازہ ہی ہے... لیکن پاکستان کے عوام اب تیار رہیں... مسلم لیگ (ن) کی حکومت ... جاتے جاتے عوام کے سارے کس بل نکال کر جائے گی... ''مجھے کیوں نکالا؟'' '' مجھے کیوں نکالا؟'' میرے کانوں میں صدائیں گونج رہی ہیں' جیسے جیسے یہ صدائیں بڑھتی جائیں گی' اور ان صدائوں کا جواب نہیں آئے گا... تو ویسے ویسے حکمران لیگ کا غیض و غضب بڑھتا رہے گا... جب مجھے کیوں نکالا؟ کا جواب نہیں آئے گا تو پھر اس کا جواب... عوام کی جیبیں خالی کروا کر لیا جائے گا... مجھے کیوں نکالا؟ کا جواب عوام کی ہڈیاں چٹخا کر بھی لیا جائے گا۔

''مجھے کیوں نکالا؟'' کا جواب عوام پر مہنگائی کے بم گرا کر لیا جائے گا۔ ''عوام'' کو چاہیے کہ وہ اب ثابت قدم رہیں... جب عوام نے اپنے ووٹوں کی دولت سے مسلم لیگ (ن) کو اقتدار سونپا ہے تو پھر مہنگائی کا شکوہ کیسا؟ پھر عوام چلائی کیوں ہے؟ کہ ٹماٹر مہنگے ہوگئے' گوشت مہنگا ہوگیا' کوکنگ آئل مہنگا ہوگیا' پٹرول اور ڈیزل مہنگا ہو گیا' آخر ووٹ دیکر اقتدار سونپنے کا کچھ تو بدلا ہونا ہی چاہیے' کیا انہوں نے مفاہمت کے بادشاہ آصف علی زرداری کا یہ قول نہیں سنا کہ ''جمہوریت بہترین انتقام ہے'' مہنگائی کے جن کو بوتل سے نکال کر قوم پر مسلط کرنا یہی تو جمہوریت کا اصل انتقام ہے۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

کالمز

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved