میرا پیمبر عظیم تر ہے
  25  ‬‮نومبر‬‮  2017     |     کالمز   |  مزید کالمز

غالب جیسا عظیم اور قادرالکلام شاعر جس کی نظروں میں اعجاز مسیحا محض اک بات ہے اور دنیا کی وسعتوں اور رنگینیوں کووہ شب و روز کا تماشہ قرار دے کر کوئی اہمیت نہیں دیتا۔ اُسے اپنے اہل زباں ہونے پر نہ صرف فخر ہے بلکہ وہ اپنے آپ کو ریختہ کا استاد بھی قرار دیتا ہے۔ لیکن اَسی غالب کے سامنے جب مدح شاہ دوعالم کا موقع آیا تو اسی غالب کو اپنی کم مائیگی کا احساس ہوا۔ جس کے سامنے الفاظ باندی کی طرح کھینچے چلے آتے تھے اور وہ انہیں جیسے چاہے استعمال کرتا تھا اُسے مجبور ہوکر کہنا پڑا غالب ثنائے خواجہ بہ یزداں گذشتیم کاں ذاتِ پاک مرتبہ داں محمدۖ است ایک غالب ہی کیا دنیا کی عظیم ہستیاں بھی بارگاہ رسالت کے سامنے سر تسلیم خم کرنے پر مجبور ہیں۔ فیض احمد فیض نے جنہیں یوںخراج عقیدت پیش کرنے کی سعادت حاصل کی اے تو کہ بست ہر دِل محزوں سرائے تو اوردہ ام سرائے دِگر از برائے تو خواجہ بہ تخت بندئہ تشویش مُلک و مال بر خاک رشکِ خسروِ دوراں گدائے تو جس ذاتِ گرامی کی تعریف و توصیف خود رب کائنات انسانیت کے نام آخری پیغام میں کررہا ہو کہ بے شک آپ ۖاخلاق کی بلندیوں پر فائز ہیں اور 'ورفنالک ذکرک '' اور یہاں تک کہ'' ولسوف یرضی'' ۔ مقام مصطفیۖ کا اعلان کرنے کے ساتھ ساتھ حرمت اور تعظیم رسولۖ بھی صحابہ اکرام جیسی عظیم ہستیوں کوبتا دی کہ حضور ۖ کی مجلس میں بیٹھ کر آپس میں سرگوشیاں نہ کرو اور نہ انہیں ایسے مخاطب کرو جیسے آپس میں ایک دوسرے کو کرتے ہو اور مزید یہ کہ آپۖ کی آواز پر اپنی آواز بلند نہ کرو وگرنہ تمہارے تمام اعمال ضائع ہوجائیں اور تمھیں خبر تک بھی نہ ہوگی۔ اسی لیے حضورۖ سے بے پناہ محبت کرنے والے دم بخود ہو کر کہہ اٹھتے ہیں کہ ادب گاہست زیر آسماں از عرش نازک تر نفس گم کرہ می آئید جنید و بایزید ایں جا عارف کھڑی میاں محمد بخش بھی حضور ۖ کے نامِ نامی کی حرمت اور تعظیم کو کیا خوب بیان کیا ہے کہ جے لکھ واری عطر گلابوں دھویے نت زباں شان اوہناں دے لائق ناہیں کی کلمے دا کاناں اس قدر بے پناہ عقیدت و محبت کیوں نہ ہوجب خود خدا نے فرمادیا کہ میری محبت چاہتے تو میرے حبیبۖ کی پیروی کرو۔ اور پھر آپۖ کی ذات وجہ تخلیق کائنات ہے حضرت مجدد الف ثانی اپنے مکتوبات میںلکھتے ہیں کہ میں خدا کو اس لیے خدا مانا ہے کہ اس کی خبر مجھے رسول پاکۖ نے دی ہے۔اسی حقیقت کو غالب نے بہت خوب صورت انداز میں پیش کیا بلکہ قرآن کی آیت وما امیت اذ امیت ولکن اللہ رمی کی تفسیر یوں کی کہ تیر قضا ہر آئینہ در ترکشِ حق است لیکن کشود آں از کمان محمدۖ است

خدا کے تیر بھی اُسی وقت ٹھیک نشانے پر جا کر لگتے ہیں جب وہ محمد مصطفے ٰ ۖ کی کمان سے نکلتے ہیں۔یہ وہی سماں ہے کہ بدر میں تلواریں تو حضورۖ اور آپۖ کے صحابہ اکرام چلا رہے تھے لیکن خدا نے کہا کہ قتل ہم کررہے تھے۔ اُس عظیم ہستی کے دِن کو پوری دنیا کے انسانوں کو منانا چاہیے اور اِسے صرف مسلمانوں تک محدود کرنا مناسب نہیں کیونکہ وہ بلا شبہ محسن انسانیت ہیں۔ انہوں نے اعلان کیاکہ رنگ و نسل اور زبان و ملک کی کوئی تخصیص نہیں اور تما م انسان محض آدم کی اولاد ہونے کے ناطے قابل عزت ہیں۔ انہوں نے انسان کو اس کے اصل مقام سے روشناس کراتے ہوئے اُسے شرف عظمت بخشا اور حقوق انسانی کا درس دیا۔ انہوں نے اعلان کردیا کہ رنگ و نسل اور ذات پات کے تمام بُت پاش پاش کردیے گئے ہیں ۔ کوئی انسان کسی دوسرے کوانسان پر اپنا حکم نہیں چلا سکتا۔ حاکمیت صرف خدا کی ہے جو اُس کی کتاب کے ذریعہ ہے اور یہی انہوں نے قیامت تک آنے والوں کے لیے رہنما ئی کے لیے چھوڑی جس کا واضع اعلان اپنے آخری خطبہ میں بھی کیا۔آپۖ کی بدولت انسانیت کو قرآن ملا جس کے ملنے پر سورہ یونس میں جشن مسرت منانے کا حکم ہے جس کی پیروی میں ربیع الاول میں صاحب قرآن کی آمد پر اور رمضان میں لیلة القدر کے موقع پر جشن نزول قرآن منایا جاتا ہے کیونکہ قرآن کو صاحب قرآن سے الگ کیا ہی نہیں جاسکتا۔اس حقیقت کی وضاحت حضرت عائشہ نے آپۖ کو مجسم قرآن کہہ کر کیا۔ آپ ۖ نے مروجہ نظریات میں جکڑے ہوئے انسانوں کو سوچنے سمجھنے اور غوروفکر کا پیغام دیا جس کی بدولت انسان آج ترقی کی منازل طے کررہا ہے۔ آپ کے اُس نقلاب کا پوری دنیا نے اعتراف کیا ہے ۔حضورۖ نے جو انقلاب بھرپا کیا تھاہمیں اُس کی روح کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔ محبت رسولۖ کا ثبوت اپنے کردار سے ہونا چاہیے ۔ اسوہ حسنہ اور قرآن حکیم کو مشعل راہ بنا کر زندگی کے ہر شعبہ میں اس سے رہنمائی لینا ہوگی۔عشق مصطفی ۖ کا تقاضا ہے کہ ہمارے کردار سے اسوہ حسنہ کی خوشبو آنی چاہیے۔ بشر نہیں، عظمت بشر ہے میرا پیمبر عظیم تر ہے


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
100%
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مینں
loading...

 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved