سمندروں سے گہرا تعلق او ر محبت کا انمول رشتہ
  27  دسمبر‬‮  2017     |     کالمز   |  مزید کالمز

پاکستانی دفتر خارجہ کے ترجمان نے حوثی باغیوں کی طرف سے سعودی عرب پر کیے جانے والے میزائل حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ''سعودی باغیوں کی طرف سے میزائل حملہ علاقائی امن و سلامتی کے لئے خطرہ ہے … پاکستان ہر قسم کی دہشت گردی کے خلاف سعودی عرب کے شانہ بشانہ کھڑا ہے …پاکستان سعودی عرب کی علاقائی خودمختاری کی خلاف ورزی کی صورت میں اس کے ساتھ ہے۔'' یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ گزشتہ دو ماہ میں سعودی عرب پر تین مرتبہ میزائل حملے ہوچکے ہیں … خوش قسمتی سے سعودی افواج نے تینوں میزائلوں کو راستے میں ہی تباہ کر ڈالا جس کی وجہ سے سعودی عرب نقصانات سے بچ گیا۔ قابل توجہ بات یہ ہے کہ ان تینوں میزائل حملوں کے بعد … پاکستان کی طر ف سے نہ صرف اپنے برادر اسلامی ملک سعودی عرب پر ہونے والے میزائل حملوں کی شدید مذمت کی گئی … بلکہ ہر قسم کی جارحیت اور دہشت گردی کے خلاف سعودی عرب کے شانہ بشانہ کھڑا رہنے کے بیانات جاری ہوئے'صرف ان تینوں مرتبہ ہی نہیں … بلکہ مسلم لیگ (ن) کے ساڑھے چار سالہ دور حکومت میں … جنرل (ر) راحیل شریف جب تین سال تک آرمی چیف رہے تب بھی … اور اب جنرل قمر باجوہ آرمی چیف ہیں تو تب بھی … پاکستان کے صدر ہوں' وزیراعظم ہوں' آرمی چیف ہوں یا دفتر خارجہ کے ترجمان ہوں بار بار اس عزم کا اعادہ کررہے ہیں کہ حرمین الشریفین اور سعودی عرب پر اگر کسی نے حملہ کرنے کی کوشش کی تو اسے براہ راست پاکستان پر حملہ تصور کیا جائے گا' اور ہم کسی صورت میں سعودی عرب کو تنہا نہیں چھوڑیں گے' آخر یہ سب کیا ہے؟ کیوں ہے؟ اگر ان سوالات کا جواب … ہر قسم کے فرقہ وارانہ' علاقائی اور قومیتوں کے تعصبات سے پاک ہوکر تلاش کیاجائے تو یہی تو وہ سعودی عرب اور پاکستان کے درمیان پایا جانے والا سمندروں سے گہرا تعلق … اور محبت کا انمول رشتہ ہے کہ جس کو کوئی ختم کرنابھی چاہے تو ختم کر نہیں سکتا … گزشتہ کئی ہفتوں سے سعودی عرب کی حکومت اور آل سعود کے حوالے سے سوشل میڈیا کے ذریعہ متنازعہ اور اشتعال انگیز کمپیئن چلانے والے ''شرارتی ونگز'' اس طرح کے ہتھکنڈے استعمال کرکے … پاکستانی قوم کے دل و دماغ سے حرمین الشریفین اور سعودی عرب کی محبت کو نکال نہیں سکتے … اس لئے کہ سعودی عرب کے عوام ہوں یا پاکستان کے عوام … دونوں طرف محبت و مودت کے رشتے چٹانوں سے بھی زیادہ مضبوط ہیں … بیت المقدس ہو یا حرمین الشریفین یہ مسلمانوں کے روحانی مراکز ہیں … ترکی کے صدر رجب طیب اردگان نے بھی کہا ہے کہ ''بیت المقدس کے بعد … یہود و نصاریٰ اور انکے ایجنٹوں کا اگلا ٹارگٹ … مکہ و مدینہ ہیں'' یہاں یہ بات ذہن میں رکھنی چاہیے کہ سعودی حکمرانوںکے ویژن سے ہر کسی کو اختلاف کرنے کا حق حاصل ہے … وہاں اگر لبرل ازم یا روشن خیالی کو پروان چڑھانے کی کوششیں ہو رہی ہیں تو اس پر بھی تبصروں اور اختلاف کی پوری گنجائش موجود ہے … لیکن ان چیزوں کو بنیاد بناکر اگر کوئی شیطانی طاقت یا اس کے ایجنٹ سعودی عرب یا حرمین الشریفین کی سالمیت یا تقدس پر حملہ آور ہونے کی کوشش کریں گے … تو ان کا راستہ پوری قوت سے روکا جائے گا۔

الحمدللہ یہ خبر پاکستان کے لئے کسی خوشخبری سے کم نہیں… کہ پاکستان میں کسی بھی سطح پر سعودی عرب کی حمایت کے حوالے سے کوئی تضاد موجود نہیں ہے … بلکہ جتنی فرقہ وارانہ ہم آہنگی آج پاکستان میں موجود ہے اتنی اس سے قبل کم کم ہی دیکھنے کو ملی ہے … مذہبی جماعتوں کا اتحاد متحدہ مجلس عمل کے نام سے معرض وجود میںآچکا ہے … اس اتحاد میں بریلوی' دیوبندی' اہلحدیث' شیعہ اور جماعت اسلامی ایک ہی جھنڈے اور ایک ہی انتخابی نشان کے نیچے مل بیٹھے ہیں… جبکہ اس سے قبل غالباً گزشتہ بیس سالوں میں پہلی مرتبہ اہلسنت و الجماعت (سپاہ صحابہ) اہل تشیع کے نمائندہ اکابر کے علاوہ اہلحدیث' بریلوی' دیوبندی اکابرین پر مشتمل ایک بیٹھک بھی ہوچکی ہے … اسلام آباد میں ہونے والی اس پانچ گھنٹہ بیٹھک میں ایک عسکری ادارے کے اعلیٰ آفیسر بھی موجود رہے… جو اس بات کی دلیل ہے کہ پاکستان انشاء اللہ اب دن بدن فرقہ وارنہ ہم آہنگی کی طرف بڑھتا ہوا نظر آرہا ہے … صرف پاکستان ہی نہیں بلکہ پوری امت مسلمہ کو جتنی فرقہ وارانہ اور سیاسی ہم آہنگی کی آج ضرورت ہے اتنی شاید اس سے قبل کبھی نہ تھی … لیبا ہو' عراق ہو' شام ہو ' یمن ہو یا افغانستان ہر طرف مسلمانوں کا لہو پانی کی طرح بہایا جارہا ہے … مسلمان کے ہاتھوں مسلمان قتل ہو رہے ہیں … اغیار کی سازشیں عروج پر ہیں … سعودی عرب اور پاکستان کو بھی ڈرایا اور دھمکایا جارہا ہے … مسلمان ملکوں میں نئے نئے فتنے کھڑے کرنے کی کوششیں ہو رہی ہیں … کہیں سیکولر ازم کا فتنہ ہے ' کہیں لبرل ازم کا فتنہ ہے ' کہیں داعش کا فتنہ ہے اور کہیں مختلف ناموں کی آڑ میں دہشت گردی کا فتنہ ہے۔ ان تمام فتنوں کا علاج صرف ایک ہی ہے … ہم سب آپس میں متحد ہو جائیں … سعودی عرب اور پاکستان پہلے سے بھی بڑھ کر ایک دوسرے کے ساتھ جڑ جائیں تاکہ فتنہ پروروں کے پھیلائے ہوئے فتنوں کا مقابلہ کیا جاسکے۔وما توفیقی الا باللہ


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
100%
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مینں
loading...

 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved