ایران کے پُرتشدد مظاہروں کے پیچھے کون ہے؟
  7  جنوری‬‮  2018     |     کالمز   |  مزید کالمز

فرانسیسی زبان میں بے حد مشہور اصطلاح ہے، Deje Vu یعنی یہ منظر پہلے دیکھا ہوا ہے۔ آج کل ایران میں جو پُر تشدد مظاہرے ہورہے ہیں انہیں دیکھ کر 1953کا وہ زمانہ یاد آتا ہے جب منتخب وزیر اعظم ڈاکٹر مصدق کی حکومت کا تختہ الٹنے کے لئے امریکی سی آئی اے نے برطانوی خفیہ ایجنسی کے اشتراک سے سازش تیار کی تھی اور اس مقصد کے لئے ایران کے سیاست دانوں ، سکیورٹی اور فوج کے اعلی حکام کو رشوتیں دی تھیں اور مصدق کی حکومت کے خلاف بڑے پیمانہ پر پروپیگنڈے کی مہم چلائی تھی۔ سی آئی اے نے ساٹھ سال بعد اعتراف کیا تھا کہ مصدق کی حکومت کا تختہ الٹنے کی کارروائی کی منظوری امریکی حکومت کی اعلیٰ سطح پر دی گئی تھی اشارہ وائٹ ہائوس کی جانب تھا۔ پچھلے ایک ہفتہ کے دوران ایران کے مختلف شہروں میں پُر تشدد مظاہروں میں اکیس سے زیادہ افراد جاں بحق ہو چکے ہیں اور پانچ سو افراد کو تہران میں گرفتار کیا گیا ہے۔ ایر ان کے رہبر اعلیٰ آیت اللہ علی خامنہ ای نے کہا ہے کہ حالیہ دنوں میں ایران کے دشمنوں نے اسلامی جمہوریہ میں شورش برپا کرنے کے لئے رقومات ، اسلحہ ، سیاست اور انٹیلی جنس کے مختلف ذرایع استعمال کئے ہیں۔ ان مظاہروں کا سلسلہ جب 28دسمبر سے ایران کے دوسرے بڑے شہر مشہد سے شروع ہوا تھا تو اس وقت مبصرین کا تجزیہ تھا کہ ان مظاہروں کے پیچھے سخت گیر موقف کے حامی آیت اللہ ابراہیم رئیسی کاہاتھ ہے۔ ابراہیم رئیسی نے گزشتہ دور میں میانہ رو آیت اللہ روحانی کے خلاف صدارتی انتخاب لڑا تھا اور ناکام رہے تھے۔ ابراہیم رئیسی امام رضا کے روضہ کے نگہبان ہیں۔ مشہد ، ابرہیم رئیسی کا گڑھ مانا جاتا ہے جہاں صدارتی انتخاب میں انہیں صدر روحانی کے 6 لاکھ 88ہزار کے ووٹوںکے مقابلہ میں 9لاکھ 3ہزار ووٹ ملے تھے۔ نائب صدر اسحاق جہانگیری کا کہنا ہے کہ یہ مظاہرے در اصل صدر روحانی کی حکومت گرانے کے لئے شروع ہوئے ہیں ۔ یہ امر قابل ذکر ہے کہ شروع میں حکومت کے خلاف مظاہروں کا زیاد تر زور اقتصادی مشکلات پر تھا جو پچھلے کئی برسوں سے ایران کے خلاف امریکا اور دوسرے مغربی ممالک کے اقتصادی پابندیوں کی وجہ سے سنگین صورت اختیار کر گئی ہیں۔ افراط زر میں زبردست اضافہ ہوا ہے اور بے روزگاروں کی تعداد 12فی صد تک پہنچ گئی ہے۔ دیہی علاقوں میں خراب فصلوں اور گرانی کی وجہ سے عوام سخت مشکلات کا شکار ہیں ۔یہی وجہ ہے کہ مظاہروں کا زور زیادہ تر تہران سے باہر چھوٹے شہروں اور دیہی علاقو ں میں رہا ہے۔ بیشتر مبصرین کو اس پر سخت تعجب ہوا ہے کہ شروع میں اقتصادی مشکلات کے بارے میں نعروں کے بعد مرگ بر خامنہ ای اور آمریت مردہ باد کے نعرے گونجنے لگے۔ اس سے زیادہ یہ باعث حیرت بات تھی کہ کئی جگہ 1979ء کے اسلامی انقلاب کے بعد پہلی بار سابق شاہ ایران رضا شاہ کے حق میں بھی نعرے لگائے گئے۔ صدر ٹرمپ نے بڑھ چڑھ کر ایران کی حکومت کے خلاف ان مظاہروں کی حمایت کی ہے ایسا معلوم ہوتا ہے کہ وہ ان مظاہروں کے انتظار میں بیٹھے تھے اور ان مظاہروںکے شروع ہوتے ہی ان کی حمایت میں ٹیوٹر لے کے میدان میں آگئے۔ اس پر کسی کو تعجب نہیں ہوا ہے۔ ٹرمپ نے اپنے ٹیوٹ میں کہا ہے کہ صدر اوباما سے جوہری سمجھوتہ کرنے کے بعد بھی ایران کی حکومت ہر سطح پر ناکام ہوگئی ہے اور اب وقت ہے تبدیلی کا ۔ اسی کے ساتھ امریکی وزارت خارجہ کے ایک عمل دار نے اعتراف کیا ہے کہ امریکی حکومت ایران میں حکومت کے خلاف مظاہرین سے مختلف انداز کے روابط میں ہے جس کے پیش نظر خطرہ ہے کہ کہیں لیبیا کی طرح ایران میں فوجی مداخلت کی آگ نہ بھڑک اٹھے۔ یہ صورت حال بالکل ویسی ہی ہے جب 65سال پہلے ، ایران میں منتخب وزیر اعظم ڈاکٹر مصدق کا تختہ الٹنے کے لیے امریکی حکومت نے مظاہرے بھڑکائے تھے۔ اس وقت اصل وجہ یہ تھی کہ ڈاکٹر مصدق نے ایران کے تیل کو قومی ملکیت میں لینے کا انقلابی اقدام کیا تھا۔ اس وقت ایران کے تیل پر برطانیہ کی اینگلو ایرانین آئیل کمپنی کا قبضہ تھااور اس کی آمدنی کا بڑا حصہ برطانوی تیل کمپنی کے خزانے میں جاتا تھا اور شاہ ایران کو خوش کرنے کے لئے تھوڑا بہت حصہ شاہی تجوری میں جاتا تھا۔ امریکا کو خوف تھا کہ کہیں مصدق کی حکومت سویت یونین سے نہ ہاتھ ملائے اور فوجی اہمیت کے اس علاقہ میں سویت یونین اپنااثر نہ جما لے ۔ امریکا اور برطانیہ نے جب دیکھا کہ مصدق کی سیاسی قوت کے سامنے شاہ ایران اور فوج بے بس ہے تو انہوں نے مصدق کا تختہ الٹنے کے لئے راست اقدام کا فیصلہ کیا اور شاہ ایران سے کہا کہ وہ مصدق کی برطرفی کے فرمان جاری کردیں، لیکن جب شاہی گارڈس کے سربراہ یہ فرمان لے کر وزیر اعظم کے دفتر گئے جہاں ڈاکٹر مصدق رہتے تھے تو مصدق کے حامیوں نے شاہی گارڈز کے سربراہ اور ان کی سپاہ کو حراست میں لے لیا۔ تہران کے عوام کو جب اس کا علم ہوا تو وہ دیوانہ وار سڑکوں پر نکل آئے اور مصدق کی حمایت میں زبردست مظاہرے کئے ۔ عوام کے جذبات اتنے شدید تھے کہ ان سے خایف ہو کر شاہ ایران، ملک سے فرار ہوگئے اور اٹلی میں پناہ لی۔ اس دوران امریکی سی آئی اے اور برطانوی خفیہ ایجنسی MI6نے فیصلہ کیا کہ اب جیسے تیسے مصدق کی حکومت کا تیا پانچا کرنا بہت ضروری ہے ۔ ان دونوں اداروں نے ''ایجکس'' کے نام سے ایک خفیہ منصوبہ تیار کیا اور اس کے تحت 17اور18اگست 1953ء کو تہران کے بدنام زمانہ علاقہ شہر نو کے غنڈوں اور دوسرے شر پسندوں کو جمع کیا اور چند مذہبی رہنماوں اور فوجی کی مدد سے ڈاکٹر مصدق کے گھر پر ہلہ بول دیا ۔ کئی گھنٹے تک فایرنگ اور گولہ باری اور خونریز جھڑپوں کے بعد یہ حملہ آوار مصدق کے گھر میں گھسنے میں کامیاب ہوگئے اور انہوں نے گھر کو نذر آتش کر دیا۔ ڈاکٹر مصدق اور ان کے ساتھیوں نے پڑوس کے مکان میں پناہ لی اور اپنی جان بچا لی۔ لیکن دوسرے روز انہوں نے اپنے آپ کو شاہ ایران کے مقرر کردہ نئے وزیر اعظم جنرل زاہدی کے حوالہ کردیا۔ ڈاکٹر مصدق کی حکومت کے خاتمہ کے چند روز بعد شاہ ایران ڈرتے ڈرتے وطن لوٹے اور تخت پر دوبارہ براجمان ہوگئے ۔ ڈاکٹر مصدق کے خلاف مقدمہ چلایاگیا اور انہیں تین سال قید کی سزا دی گئی۔ سزا کے خاتمہ پر ڈاکٹر مصدق 4 مارچ 1967ء میں اپنے انتقال تک گھر میں نظر بند رہے۔

شاہ ایران نے تخت پر دوبارہ قبضہ کے بعد 25سال تک سخت آمرانہ انداز سے حکمرانی کی اور ایران کو مشرق وسطی میں سیاسی اور فوجی اعتبار سے امریکا اور برطانیہ کے مفادات کا قلعہ بنا دیا۔ جو 1979ء کے اسلامی انقلاب نے مسمار کر دیا۔ یہی وجہ ہے کہ جب سے ایران اور امریکا کے درمیاں در پردہ جنگ جاری رہی ہے اور اب ٹرمپ کے بر سر اقتدار آنے کے بعد کھلم کھلا محاذ آرائی شروع ہو گئی ہے۔ ایران کی حکومت کے خلاف پُر تشدد مظاہروں نے ٹرمپ کے عزایم کی راہ کھول دی ہے۔ یہ کیسی ستم ظریفی ہے کہ ٹرمپ امریکا میں تو اپنی حکومت کے خلاف مظاہرون کے خلاف ہیںلیکن ایران میں آیت اللہ علی خامنہ ای اور صدر روحانی کی حکومت گرانے کے لئے مظاہروں کی کھلم کھلا حمایت کر رہے ہیں ۔یہ ہے ٹرمپ کا دو ہرا چہرہ۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز

کالمز

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved