صحابہ کی زندگیاںحضرت محمدۖکی حیات طیبہ کی عکاس ہیں،مولاناعبدالاعلیٰ
  10  اکتوبر‬‮  2017     |     یورپ

بریڈفورڈ(پ ر) مرکزی جمعیت اہل حدیث برطانیہ کے سیکرٹری اطلاعات مولاناحافظ عبدالاعلی درانی نے کہارسول خاتم النبین صلی اللہ علیہ وازکی التسلیم کی سیرت طیبہ امت میں اتفاق واتحادکی سب سے مضبوط بنیاد ہے اسلام ہمیں بڑوں کاادب اورگزرے ہوئے اسلاف کی عزت کا حکم دیتا ہے ،جامع محمدی مسجد کیتھلے میں جماعتی وابستگی کے موضوع پرخطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاجماعت کی کامیابی کے تین بنیادی اصول ہیں اللہ کی رضا، رسول اکرم کی نافرمانی سے گریزاورباہمی خلوص و محبت ۔ سیرت طیبہ کی صحیح تصویر جماعت مصطفی ۖ میں نظرآتی ہے ، اس لیے جماعت صحابہ کی عظمت دل میں ہوگی تو دنیا و آخرت میںعزت و سرفرازی نصیب ہوگی ،عظمت اصحاب رسول جاننے کیلئے دو باتوں کاعلم ہونا چاہیے ایک توقرآن اوراحادیث صحیحہ نے صحابہ کرام کی تصویر رحماء بینھم یعنی باہمی پیار و محبت کی پیش کی ہے ۔ ان سب کی خونی رشتہ داریاں بھی تھیں باہمی الفت و محبت کی بھی کوئی حد نہ تھی ۔لیکن اسلام کے دشمنوں نے عظمت محمدی کوگہنانے کے منصوبے سے ان کی تصویرقرآن و حدیث کی پیش کردہ تصویرکے برعکس جنگ و جدال اور ایک دوسرے کے خلاف سازشیں کرتے رہنے کی پیش کی ہے جونہ صرف غلط ہے بلکہ نامعقول بھی ہے ،اس لیے اہل ایمان صرف قرآن وحدیث کی پیش کردہ تصویر کواجاگرکریں ،دوسری اصولی بات یہ ہے کہ صحابہ کرام پر تنقیدسے خود رسول محتشم کی بے مثال جدوجہد اورتربیت پر سوالیہ نشان لگ جاتاہے کہ کائنات کے سب سے زریں عہدمیں سب سے عظیم نبی نے یہ جماعت پیدا کی جن میں سوائے چندایک کے باقی سب راہ راست چھوڑ بیٹھے تھے اور ہروقت لڑائی میں لگے رہتے تھے؟ نعوذ باللہ، اسی لیے اہل الحدیث اس قسم کی مباحث میں پڑتے ہی نہیں ہیں بلکہ ان کا متفقہ اصول ہے کہ صحابہ سب کے سب عادل وامین ہیں ،اور ان کی زندگی رسول اکرم کی حیات طیبہ کی عکاس ہے ،مولاناعبدالاعلےٰ نے کہا باہمی الفت کو برقرار رکھنے کااصول یہ ہے کہ رفقاء کی کمزوریوں کودیکھنے کی بجائے اچھائیاںدیکھیں ، ہرکام کااگرمنفی پہلودیکھیں تو اچھائیاں چھپ جایاکرتی ہیں اسی سے تصادم اورنفرت جنم لیتی ہے ،اللہ کامعیاراس کے برعکس ہے وہ اچھائیاں برائیاں سب دیکھتا ہے یہ نہیں کہ برائیاں دیکھ کراچھائیاں مٹادے ۔بلکہ وہ ایک اچھائی سے ہزار برائیاں مٹادیتاہے،انہوں نے کہادنیاکوپیار ومحبت کے پھولوں کی ضرورت ہے، نفرت وعداوت کے کانٹوں کی نہیں ۔جماعت کی اہمیت پر بیان جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہااگریہ سوچاجائے کہ جماعت کام نہیں کررہی میں بہت کام کررہاہوں یاجماعت فلاں کام نہیں کرسکتی میں کرسکتاہوں،جماعت بہت سست ہے میں بہت تیزہوں اسی سوچ کے ساتھ وہ جماعت سے علیحدگی اختیارکرلیتاہے تواس بھیڑ کی طرح ہوجاتاہے جوریوڑسے الگ ہوجائے تواسے بھیڑیا آسانی سے اچک لیتاہے ۔بیان کے آخرمیں مولانادرانی نے کہاہرکام میں اللہ کی رضاسے برکت دنیامیں عزت اور آخرت میں مغفرت کاوعدہ ہے جس کی ہم سب کو ضرورت ہے ۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved