بھارت جان لے آزادی کی تحریک بزورطاقت دبائی نہیں جاسکتی،افضل خان
  10  اکتوبر‬‮  2017     |     یورپ

مانچسٹر(محمد فیاض بشیر) مقبوضہ کشمیر میں نہتے، بے گناہ اور اپنے پیدائشی حق خودارادیت کے لئے آزادی کی جنگ لڑنے والے لوگوں پر بھارتی سیکورٹی اداروں کی وحشیانہ، انسانیت سوز کارروائیاں نہ صرف قابل مذمت ہیں بلکہ عالمی برادری اور اقوام متحدہ کے لئے تشویشناک اور لمحہ فکریہ ہے کہ انسانی بنیادی حقوق کی کھلے عام پامالی پر وہ مجرمانہ لب کشائی کئے ہوئے ہیں اس سے بھی بڑا المیہ یہ ہے کہ عالمی میڈیا اور انسانی حقوق کی تنظیموں کو بھی اصل صورتحال جاننے کے لئے وادی کشمیر جانے کی اجازت نہیں ہے۔ ان خیالات کابرملا اظہار برطانوی پارلیمنٹ کے رکن و شیڈو وزیر برائے امیگریشن افضل خان نے جموں وکشمیر تحریک حق خودارادیت یورپ کے وائس چیئرمین حاجی امجد حسین مغل کی جانب سے رکھی گئی ایک تقریب کے موقع پر کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ بحیثیت رکن برطانوی پارلیمنٹ وہ اپنی حکومت پر اس سلسلے میں مسلسل بات چیت کرتے رہتے ہیں کہ دنیا میں چاہے کشمیر ہو یا پھر برما کے مسلمان، مذہب کے نام پر ظلم و ستم انسانیت کی تذلیل ہے۔ برطانیہ کی سب سے زیادہ ذمہ داری ہے کہ وہ تقسیم پاک و ہند کے وقت کشمیر کے چھوڑے گئے ادھورے ایجنڈے کو مکمل کروانے کے لئے کردار ادا کرے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کو یہ جان لینا چاہئے کہ طاقت کے بل بوتے پر آزادی کی تحریک دبائی نہیں جاسکتی بلکہ مزید شدت اختیار کرے گی لہٰذا اسکا واحد حل کشمیریوں کو انکا پیدائشی حق دینا ہے۔ جموں و کشمیر تحریک حق خودارادیت کے وائس چیئرمین حاجی امجد حسین مغل نے کہا کہ ہم اس سلسلے میں برطانیہ اور یورپ بھر میں اپنا کردار ادا کرتے ہوئے کشمیری کمیونٹی اور سیاسی رہنماؤں پر دباؤ ڈال رہے ہیں کہ وہ بھارت کو مذاکرات کے میز پر بٹھائیں اور اقوام متحدہ اپنا فعال کردار ادا کرتے ہوئے کشمیریوں کو حق خودارادیت دلوئے تاکہ وہ اپنے مستقبل کی منزل کا تعین کرسکیں۔ آزاد کشمیر کے ضلع کوٹلی کی بار کونسل کے چیئرمین محمد شبیر مغل نے کہا کہ پاکستان و ہندوستان ایٹمی طاقتیں ہیں اپنے بجٹ کا بیشتر حصہ مسلح افواج پر خرچ کرکے وہ اپنی غریب عوام کو مزید اندھیروں میں دھکیل رہے ہیں انہیں سنجیدگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے مذاکرات کے ذریعے کشمیریوں کو اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے دینا چاہئے وگرنہ خطہ میں کبھی بھی امن قائم نہیں ہوسکتا۔ اس موقع پر محمد ادریس مغل، ہارون کھٹانہ، احسان احمد، بشارت حسین، صغیر احمد، عابد حسین، محمد صابر و دیگر افراد بھی موجود تھے۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved