ماسکو،پوٹن اور ٹرمپ شام میں اسلامک اسٹیٹ کو شکست دینے پر متفق
  11  ‬‮نومبر‬‮  2017     |     یورپ

ماسکو(آئی این پی)روسی صدر ولادیمیر پوٹن اور ان کے امریکی ہم منصب ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ شام میں شدت پسند تنظیم اسلامک اسٹیٹ کو مکمل شکست دینے کے لیے کارروائیاں جاری رکھی جائیں گی۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق ہفتے کے روز ماسکو حکومت کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں بتایا گیا کہ دونوں رہنماؤں نے ایپک کے سربراہی اجلاس کے حاشیے جاری کردہ ایک مشترکہ بیان میں شام کی علاقائی سالمیت اور آزادی کو برقرار رکھنے کے عزم کا اظہار کیا۔ دونوں ممالک نے اتفاق کیا کہ شامی تنازعے کا کوئی عسکری حل نہیں ہے اور اسی لیے تمام فریقوں پر اقوام متحدہ کی زیرنگرانی جنیوا امن مذاکرات میں شامل ہونے کے لیے دبا میں اضافہ کیا جائے گا۔ڈونلڈ ٹرمپ اور ولادیمر پوتن نے اس بیان کی منظوری ویتنام میں ایشیا پیسیفک اکنامک کوآپریشن کے اجلاس کے موقع پر دی۔روسی حکام کے مطابق پوتن اور ٹرمپ نے اجلاس کے راہنما کے ساتھ گروپ فوٹو سے قبل گفتگو کی تھی۔وائٹ ہاس کی طرف سے کریملن کے اس اعلان کے بارے میں پوچھے گئے سوال کا فوری طور پر کوئی جواب سامنے نہیں آیا۔بیان کے

مطابق دونوں راہنماں نے شدت پسند تنظیم داعش کو فوری تباہ کرنے کی ضرورت کا اعادہ کرتے ہوئے اتفاق کیا کہ "شام میں امریکی اور روسی فورسز کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے دونوں ملکوں کے مابین فوجی مواصلاتی رابطے کو برقرار رکھا جائے۔ٹرمپ اور پوتن نے شام کی خودمختاری اور آزادی کے احترام کا عزم ظاہر کرتے ہوئے شام کے تنازع کے فریقین پر زور دیا کہ مسئلے کا حل جنیوا مذاکرات کے ذریعے تلاش کیا جائے۔یہ بیان روس کی وزارت خارجہ کی طرف سے جاری کیا گیا اور اس کے بقول یہ اعلامیہ روس اور امریکہ کے ماہرین نے تیار کیا تھا۔گو کہ وائٹ ہاس نے کہا تھا کہ دونوں راہنماں کے درمیان کوئی ملاقات طے نہیں ہے لیکن ٹرمپ اور پوتن نے اجلاس کے اعشایے کے موقع پر مصافحہ کیا اور رسمی گفتگو بھی کی تھی۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved