چوہدری محمد سعید نے سٹے آرڈر کے باوجود محکمہ میں تقرری کر ڈالی
  7  دسمبر‬‮  2017     |     یورپ

بریڈ فورڈ(افتخار پوٹھی) مسلم لیگ ن کی حکومت اب آزاد کشمیر میں بھی توہین عدالت کرنے لگی۔ منگلا ڈیم ہاؤسنگ اتھارٹی کے وزیر چوہدری محمد سعید نے عدالتی سٹے آرڈر کے باوجود محکمہ میں تقرری کر ڈالی۔ جبکہ مزید تقرریوں کے لئے بھی اپنے چہیتے اور کارکنوں کو ایڈجسٹ کرنے کے لئے پلاننگ جاری ہے۔ تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ن کی حکومت نے آزاد کشمیر میں بھی عدالتی احکامات کو ماننے سے انکار کردیا۔ اور منگلا ڈیم ہاؤسنگ اتھارٹی میں عدالت کے سٹے آرڈر کے باوجود تقرری کردی۔ سٹے آرڈر منگلا ڈیم ہاؤسنگ اتھارٹی کے برطرف ملازمین نے عدالت سے لیا ہوا تھا۔ ان ملازمین کو مسلم لیگ ن کی حکومت نے آزاد کشمیر میں اقتدار ملتے ہی نوکریوں سے بلاجواز اور سیاسی انتقام کا نشانہ بناکر بیک جنبش قلم فارغ کردیا تھا۔ ان ملازمین نے بھوک ہڑتالیں بھی کیں اور وزیراعظم آزاد کشمیر کو بھی اس ناانصافی کے متعلق باضابطہ طورپر آگاہ بھی کیا۔ مگر مسلم لیگ ن کی حکومت نے ہٹ دھرمی کو برقرار رکھتے ہوئے ان ملازمین کی ایک نہ سنی۔ تب مجبور ہوکر انصاف کے لئے ان ملازمین نے عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا اور عدالت کی طرف سے فیصلہ آنے تک اپنی پوسٹوں پر سٹے آرڈر لے لیا۔ مگر اب مسلم لیگ ن کی حکومت نے عدالتی احکامات کو نظر انداز کرنے کی روایات کو برقرار رکھتے ہوئے متعلقہ محکمہ میں تقرری کردی۔ اور مزید تقرریوں کے لئے بھی مشاورت کی جارہی ہے۔ مسلم لیگ ن اور چوہدری محمد سعید کے اس عمل پر اہلیان میرپور اور تارکین وطن نے تشویش کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ اگر محکمہ میں مزید بھرتیاں کرنی تھیں تو ان ملازمین کو نوکریوں سے کیوں فارغ کیا ہے اور ان ملازمین کو بے روزگار کرکے انکے حقوق پر شب خون مارا گیا ہے۔ میاں نواز شریف حکومت آزاد کشمیر کی طرف سے متاثرین منگلا ڈیم اور نوجوانوں کو بے روزگار کرنے کی پالیسی کا فوری نوٹس لیں۔ اور متاثرہ ملازمین کی بحالی کے فوری احکامات جاری کریں۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved