مقبوضہ بیت المقدس میںاسرائیلی دارالحکومت نامنظور ،لندن میں ہزاروں افراد کا امریکی سفارتخانے کے باہر مظاہرہ
  7  جنوری‬‮  2018     |     یورپ

لندن (رپورٹ: شیراز خان)امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے مقبوضہ بیت المقدس یروشلم کو اسرائیل کا درالحکومت قرار دئیے جانے کے اعلان کے خلاف لندن میں قائم امریکن سفارت خانے کے باہر ہزاروں افراد نے پرامن مظاہرہ کیا مظاہرین میں برطانوی مسلمانوں کی بڑی تعداد سمیت یہودیوں، عیسائیوں اور دیگر مذاہب کے نمائندہ افراد نے شرکت کی مظاہرین نے بینرز اور کتبے اٹھا رکھے تھے جن پر امریکہ اور اسرائیل کے خلاف نعرے لکھے ہوئے تھے مظاہرین کے نمائندوں نے اپنے اپنے خطاب میں امریکہ کا اعلان یکطرفہ قرار دیتے ہوئے اسے سرا سر اسلام اور مسلمان دشمنی قرار دیا اور خاص کر کے ڈونلڈ ٹرمپ کی پالیسیوں کو عالمی امن کے مترادف قرار دیا مظاہرین نے یہ اعادہ کیا کہ امت مسلمہ بیت المقدس اپنا قبلہ اول تسلیم کرتی ہے اور مسلمانوں کو یہ قطعی قبول نہیں کہ امریکہ جانب داری برتتے ہوئے یکطرفہ طور پر اسرائیل کی حمایت میں فیصلہ دے اس موقع پر مقررین نے برطانوی وزیراعظم ٹریسا مے کا بھی شکریہ ادا کیا جنھوں نے یروشلم کو اسرائیل کا دار الحکومت تسلیم کرنے سے انکار کردیا مظاہرین کا مطالبہ تھا کہ وہ زیادہ منظم ہوکر بڑے بڑے مظاہرے کریں گے اور برطانیہ کے دیگر شہروں میں بھی مظاہروں کا داہرہ کار بڑھائیں گے اور امریکہ کو مجبور کریں گے کہ وہ اپنا فیصلہ واپس لے مظاہرے میں عورتیں اور بچے بھی شامل تھے جو فلسطین کی آزاد ریاست کے حق میں نعرے لگا رہے تھے مظاہرے کا اہتمام تحریک تحفظ بیت المقدس نامی تنظیم جماعت اہل سنت لندن اور پاکستان ملی تحریک نے اور دیگر تنظیموں نے مل کر کیا تھا مظاہرے میں برطانیہ بھر سے ہزاروں افراد نے شرکت کی برمنگھم سمیت دیگر شہروں سے پاکستانی اور کشمیری کمیونٹی کی تعداد کوچز کے زریعے لندن پہنچی تھی جماعت اہل سنت کے صدر علامہ اعجاز تیروی کا کہنا تھا ڈونلڈ ٹرمپ مسلمانوں کے خلاف اپنی زہر افشانی میں انتہا پسندی کے مرتکب ہو رہے ہیں برطانوی مسلمان اس پر سراپا احتجاج ہیں تحریک تحفظ بیت المقدس کے کنونیئر راجہ امجد خان جنھوں نے مظاہرے کو کامیاب بنانے کے لئے ایک ماہ سے زائد وقت تک سخت محنت کی تھی روزنامہ اوصاف سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ اللہ تعالی کا شکر ہے پاکستانی اور کشمیری کمیونٹی نے مظاہرے کو کامیاب بنانے کے لئے اپنی غیرت ایمانی کا بھرپور مظاہرہ کیا انہوں نے کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ نے پاکستان کے خلاف بھی ہرزہ سرائی کی ہے اور برطانوی مسلمان بھی ڈونلڈ ٹرمپ کی اسلام دشمنی کا نشانہ بن رہے ہیں انہوں نے بریٹن فرسٹ کی حمایت کی ہے جس سے اسلاموفوبیا بڑھا ہے حاجی منر العاصم، مفتی احمد قادری، صاحبزادہ محمد رفیق سیالوی، مولانا طارق مسعود، علامہ سجاد، خواجہ محمد سلیمان، بیرسٹر قربان حسین اور دیگر نے مطالبہ کیا ڈونلڈ ٹرمپ کا برطانیہ کا سرکاری دورہ ملتوی کیا جائے، اسرائیلی مصنوعات کا بائیکاٹ کیا جائے فلسطین پر اسرائیلی قبضے سے آزاد کیا جائے فلسطین کے مسلمانوں کو مزہبی آزادی دی کاے دنیا امریکہ اور اسرائیل کی دھمکیوں میں نہیں آی گی ظلم کو ختم کروانے کے لئے برطانوی حکومت اقدامات اٹھائے چوہدری منظور حسین، صاہمہ سلیمان ڈاکتر خرم محمد امین عمران خان کونسلر زاکراللہ چوھدری ظفر،علامہ غفور احمد چشتی، لیاقت گورسی ،میاں اتحاد گڈو، راجہ جاوید انکروی، قاری اظہار احمد، عبدالجبار حیدری، سید تنویر حسین شاہ، حاجی بشیر آرائیں اور دیگر بھی شامل تھے۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مینں
loading...

 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






آج کا مکمل اخبار پڑھیں

یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved