اتوار‬‮   21   جنوری‬‮   2018
یواین قراردادوں پرعمل نہ کرنے کی سزاکشمیریوں کونہ دی جائے،چوہدری سعید
  8  جنوری‬‮  2018     |     یورپ

ہائی ویکمب (مسرت اقبال) اقوام متحدہ کشمیر کو ایک آزاد و خودمختار ریاست تسلیم کرے' قراردادیں آسمانی صحیفہ نہیں ان کا مزید انتظار کیا جائے کشمیری قراردادوں سے مایوس ہوگئے ہیں یہ ایک فریم ورک تھا جسے بدقسمتی سے پاکستان اور بھارت عمل کر نہ سکے ان کی سزا کشمیریوں کو نہ دی جائے ۔ ان خیالات کا اظہار جموں کشمیر لبریشن فرنٹ وٹفورڈ برانچ کے سینئر نائب صدر سعید احمد چوہدری نے برانچ کے مشترکہ اجلاس میں کیا۔ دوران اجلاس انہوں نے کہا کشمیر پر اقوام متحدہ کی قراردادیں غلامی کا پزندہ بن کر رہ گئی ہیں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کا مظلوم کشمیری عوام کا قتل عام جاری ہے جبکہ سوائے تشویش کے کچھ نہیں کررہی ہے۔ انہوں نے کہا اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل میں اتنی بھی اخلاقی جرات نہیں کہ وہ کشمیر میں ہونے والی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر بھارت کے خلاف جنگی جرائم کے تحت مقدمہ چلائے۔ چوہدری محمد سعید نے کہا یہ آزاد کشمیر حکومت کے لئے شرم کا مقام ہے کہ اس نے بھارت کے خلاف جنگی جرائم کے تحت مقدمہ چلانے کے لئے عدالت سے رجوع نہیں کیا آزاد کشمیر حکومت نے اندرونی حالات سے عوام کی توجہ ہٹانے کے لئے کشمیر فوبیا پالیسی اختیار کررکھی ہے۔ چوہدری محمد سعید نے کہا کہ کشمیر کے حالات اور بھارت امریکہ گٹھ جوڑ نے خطے کی صورتحال نے مسئلہ کشمیر کو عالمی برادری کی توجہ سے ہٹا دیا ہے ایسے اہم نازک موقع پر آزاد کشمیر کی سیاسی جماعتوں اور حکومت پاکستان کے درمیان وزارتی سطح پر مشترکہ اجلاس لندن میں بلایا جائے تاکہ قومی سطح پر مشترکہ قومی حکمت عملی اختیار کی جائے اس میں تاخیر نہ کی جائے۔ چوہدری محمد سعید نے کہا بھارت اقوام متحدہ اور سکیورٹی کونسل کی قراردادوں سے انحراف کرتے ہوئے کشمیر کے پاکستان اور بھارت کے ساتھ الحاق سے انکار کرچکا ہے اس وقت کشمیر کے مسئلے پر پاکستان اکیلا رہ کر رول ادا کررہا ہے۔ انہوں نے کہا یہ وقت ہے کہ ممبران اسمبلی آزاد کشمیر اور حکومت آزاد کشمیر مقبوضہ کشمیر کی سنگین ترین صورتحال کو سنجیدگی سے لیں۔ اپنی قومی ذمہ داریاں ادا کریں اور پاکستان پر دبائو ڈالیں کہ وہ اقوام متحدہ و سلامتی کونسل کا اجلاس فوری بلائے تاکہ وہ کشمیر کو ایک آزاد ریاست تسلیم کرنے کے لئے ٹھوس و مثبت کردار ادا کرے۔ آزاد کشمیر کا پارلیمانی نظام حکومت کشمیر میں ایک بااختیار گورنمنٹ کا مطالبہ کرتا ہے۔ اگر گورنمنٹ پاکستان آزاد کشمیر کو ایک متحدہ ریاست کو ایک بااختیار حکومت تسلیم نہیں کرتی یہ عوام کے مقدس ووٹ کی توہین ہے۔ انہوں نے کہا ایسا بھی ہوسکتا ہے کہ مسئلہ کشمیر حل ہونے تک اقوام متحدہ کشمیر کے دونوں حصوں پر مشتمل ایک عبوری حکومت اقوام متحدہ کی زیر نگرانی قائم کی جائے۔ ریاست کے اندر غیر ملکی افواج کے بجائے اقوام متحدہ کی امن آرمی تعینات کی جائے تاکہ کشمیری عوام بھارت کی ریاستی دہشت گردی سے محفوظ رہ سکیں۔ چوہدری محمد سعید نے کہا کہ یہ انتہائی دکھ کی بات ہے برطانوی ممبران پارلیمنٹ مسئلہ کشمیر پر صرف زبانی حمایت کرتے ہیں مگر برطانوی حکومت ان کے بیان نظر انداز کردیتی ہے۔ برطانوی حکومت کو معلوم ہے کہ مسئلہ کشمیر تاج برطانیہ کا پیدا کردہ ہے وہ اپنے مفادات کی خاطر بھارت کو نظر انداز نہیں کرسکتی۔ اس طرح کے خیالات کا اظہار محمد اقبال' چوہدری محمد نعیم' شمیم احمد' چوہدری جاوید' سید عتیق شاہ دیگر رہنمائوں نے بھی کیا۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

  قائد اعظم محمد علی جناح  
  اسکندر مرزا  
  لیاقت علی خان  
  ایوب خان  
آج کا مکمل اخبار پڑھیں

کار ٹونز


یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved