مودی دہشت گرداورقاتل،برطانیہ آنے کی اجازت نہ دی جائے،فہیم کیانی
  12  جنوری‬‮  2018     |     یورپ

برمنگھم(پ ر) تحریک کشمیر برطانیہ کے صدر راجہ فہیم کیانی نے کہا ہے برطانیہ میں ہونے والی 16 اپریل کو کامن ویلتھ سربراہ کانفرنس میں بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی شرکت کے موقع پر بھر پوراحتجاج کیا جائے گا برطانوی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیںکہ وہ مودی جیسے دہشتگرد ظالم اور قاتل کوبرطانیہ آنے کی اجازت نہ دی جائے انسانیت کے قاتل اور دشمن کے ہاتھ کشمیریوں کے خون سے رنگے ہوئے برطانیہ جیسے جمہوری اور انسانی حقوق کے علمبردار ملک میں مودی جیسے لوگوں پر پابندی ہونی چاہئے مودی دنیا کے امن کے لیے شدید خطرہ ہے اور ایسے لوگوں کو گلے لگانا دہشت گردی کی حوصلہ افزائی کرنے کے مترادف ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کشمیر ہاوس برمنگھم منعقدہ ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ برطانوی ممبران پارلیمنٹ ممبرز ہاوس آف لارڈز، کونسلرز اور انسانی حقوق کی تنظیموں سے رابطہ بھی کیا جائے گا کہ مودی کو برطانیہ داخلے پر پابندی عائد کرنے کے لیے حکومت پر دبائو ڈالا جائے اس طرح کے قاتلوں کے لیے برطانیہ کی سرزمیں پر قدم رکھنے کی اجازت نہ دی جائے بھارت کی درندہ صفت فوج ہر روز کشمیریوں کا قتل عام کر رہی ہے عالمی انسانی حقوق کی تنظیموں پر مقبوضہ کشمیر میں داخل ہونے پر پابندیاں عائد کر رکھی ہیں اور کشمیر میں ظلم اور بربریت پر پردہ ڈالا جا رہا ہے بھارت کے اندر اقلیتوں پر ظلم کے پہاڑ توڑے جارئے ہیں اور برطانیہ میں وآباد کشمیری اور پاکستانی کمیونٹی کے اندر مقبوضہ کشمیر کے حالات پر گہری تشویش پائی جاتی ہے ۔ راجہ فہیم کیانی نے کہا کہ مودی کے خلاف ملک بھر میں مہم شروع کی جائے گی تما م کشمیری اور پاکستانی جماعتوں کے قائدین اور علماء کرام اور کونسلروں کے ساتھ رابطہ کیا جائے گانے مودی کے خلاف شدید رد عمل کا اظہار کیا جائے گا برطانوی کی پارلیمانی سیاسی جماعتوں کے ساتھ بھی رابطہ کیا جائے گا سکھ ، دلت، آسامی اور بھارتی مظالم کا شکار تمام طبقوں کو اس موقع پر مودی کے خلاف کھڑا کیا جائے گا اور مودی کا گھنائونا کردار اور دہشت گردی کو بے نقاب کیا جائے گا کہ اس کا مکمل بائیکاٹ کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ کامن ویلتھ ممالک کا سربراہ اجلاس برطانیہ میں ہو رہا ہے اس موقع پر مسئلہ کشمیر کی اہمیت کو بھی ایجنڈے میں شامل کیا جائے بھارت پر سیاسی، سفارتی اور اقتصادی دبائو ڈالا جائے کہ وہ اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عمل درآمد کرئے تاکہ خطے میں پائی جانے والی کشیدگی ختم ہو اور دو ایٹمی قوتوں کے درمیان کسی بھی تصادم کو روکا جا سکے برطانیہ مسئلہ کا اہم فریق ہے اور اس کے پُرمن حل پر توجہ دی جائے۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved