استنبول،ترکی میں افغان حکومت اور طالبان گروپوں کے درمیان امن مذاکرات شروع
  14  جنوری‬‮  2018     |     یورپ

استنبول(آئی این پی)ترکی میں افغان حکومت اور طالبان گروپوں کے درمیان امن مذاکرات شروع ہوگئے ، حزب اسلامی نے بات چیت کی تصدیق کردی، طالبان ترجمان کا کہناہے کہ ہیبت اللہ گروپ شریک نہیں ہوا۔افغان میڈیا کے مطابق افغانستان میں گزشتہ کئی دہائیوں سے جاری خانہ جنگی کے خاتمے اور امن قائم کرنے کے لیے ترک حکومت کی جانب سے استنبول میں چار فریقی مذاکراتی عمل کا انعقاد کیا گیا۔ 3 روزہ مذاکراتی عمل کا آغاز ہفتے سے ہوا جو پیر تک جاری رہے گا۔ بات چیت میں افغان طالبان، ملا محمد رسول گروپ، حزب اسلامی افغانستان اور افغان حکومت کے نمائندگان شریک ہیں۔افغان نیوز ایجنسی کا کہنا ہے

کہ ترک حکومت نے افغان طالبان کو ملک میں سیاسی سرگرمیوں کے لیے آفس کھولنے کی بھی پیشکش کی ہے۔حزب اسلامی نے بات چیت کی تصدیق کردی۔ طالبان ترجمان کا کہناہے کہ ہیبت اللہ گروپ شریک نہیں ہوا۔ مذاکرات میں ملک میں قیام امن سے متعلق تبادلہ خیال ہوگا۔بق مذاکرات میں قطر میں طالبان دفتر کے نمائندے،افغان حکومت کا نمائندہ اور حزب اسلامی افغانستان کے نمائندے شریک ہیں۔ طالبان ہیبت اللہ گروپ کے ترجمان نے ترکی میں جاری امن بات چیت کی تصدیق تو کی لیکن کہاکہ ان کاگروپ اس میں شامل نہیں۔واضح رہے کہ افغان حکومت اور طالبان دھڑوں کے درمیان کئی بار مذاکرات ہوچکے ہیں تاہم ہر بار بات چیت میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا اور مذاکرات بغیر کسی نتیجہ کے ختم ہوگئے۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مینں
loading...

 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






آج کا مکمل اخبار پڑھیں

یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved