پیرعلائوالدین کی فکری ،نظریاتی اورعالمگیرسوچ کوزندہ رکھناہوگا،پیرسلطان العارفین
  8  فروری‬‮  2018     |     یورپ

برمنگھم(نمائندہ اوصافربنواز چغتائی) محی الدین یونیورسٹی، محی الدین ٹرسٹ اور دربار عالیہ نیریاں شریف تراڑ کھل آزاد کشمیر کے سجادہ نشین، تحریک تحفظ ناموس رسالت انٹرنیشنل کے سرپرست اور چیئرمین معروف روحانی شخصیت الحاج پیر محمد علاؤ الدین صدیقی کا پہلا عُرس مبارک برمنگھمکی مرکزی جامع مسجد گھکول شریف میں منایا گیا جس میں ہزاروں کی تعداد میں دربار عالیہ نیریاں شریف کے مریدین نے شرکت کی جبکہ سینکڑوں علمائے اکرام و مشائخ عظام نے بھی عرس مبارک میں شرکت کی۔ دربار عالیہ نیریاں شریف کے سجادہ نشین الحاج پیر محمد علاؤ الدین صدیقی کے عظیم الشان عُرس مبارک کی صدارت صاحبزادہ پیر ڈاکٹر سلطان العارفین الازہری نے کی جبکہ نظامت کے فرائض عالمی مبلغ علامہ نصر اللہ نقشبندی نے سرانجام دئے۔ عرس مبارک کا آغاز بعد از نماز ظہر شروع ہوا جبکہ اختتام رات دس بجے ہوا معروف روحانی شخصیت پیر علاؤ الدین صدیقی کے پہلے عرس مبارک سے برطانوی ہاؤس آف لارڈ کے رُکن لارڈ نزیر الرحمٰن اور آزاد جموں و کشمیر کے اپوزیشن لیڈر چوہدری محمد یٰسین نے خصوصی شرکت کی۔ سجادہ نشین دربار عالیہ نیریاں شریف صاحبزادہ ڈاکٹر پیر سلطان العارفین الازہری نے کہا کہ تحریک تحفظ ناموس رسالت انٹرنیشنل کے چیئرمین اور سلسلہ نقشبندیہ پیر طریقت محی الدین اسلامی یونیورسٹی آزاد کشمیر کے چانسلر، نور ٹی وی اور محی الدین میڈیکل کالج میرپور کے بانی، آزاد کشمیر اور برطانیہ میں لاتعداد مساجد اور مدارس کے سرپرست، علم و فضل اور روحانیت، مذہبی،دینی اور روحانی خدمات تاریخ کا حصہ ہیں جو رہتی دنیا تک یاد کئے جائیں گے اور ان کی خدمات سنہری حروف میں لکھی جائیں گی۔ سجادہ نشین دربار عالیہ نیریاں شریف تراڑ کھل آزاد کشمیر ڈاکٹر پیر سلطان العارفین الازہری نے کہا کہ علم و عمل اور روحانی پیشوا پیر علاؤ الدین صدیقی نے جس طرح سے ساری زندگی دین اسلام کے لئے وقف کر رکھی تھی، پوری دنیا میں پیر صاحب کے چاہنے والے لاکھوں کی تعداد میں موجود ہیں، اُن کا دنیا سے پردہ کرنا آزاد کشمیر کا خطہ ایک عظیم سکالر سے محروم ہوگیا انہوں نے کہا پیر صاحب نے مشکل ترین حالات اور آزمائشوں کا سامنا کیا لیکن دین کی خاطر انہوں نے تمام تر مشکلات کا سامنا کیا اور ہمیں ان کے نقش قدم پر چل کر اُن کی محنت اور کاوشوں کو آگے لے کر جانا ہے، پیر صاحب کی فکری نظریاتی اور عالمگیر سوچ کو زندہ رکھنے کے لئے کلیدی کردار ادا کرنا ہوگا۔ ہاؤس آف برطانوی لارڈ، لارڈ نذیر احمد اور حکومت آزاد کشمیر کے اپوزیشن لیڈر چوہدری محمد یاسین نے کہا کہ پیر علا ؤ الدین صدیقی جس طرح سے دین کی تبلیغ کی، دین اور دنیا کی عالمگیر سوچ و فکر اور تعلیمی اداروں کا قیام عمل میں لایا ایک بڑی جدوجہد تھی اُن کی شخصیات ہمارے لئے مشعل راہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ جس جذبہ ایمانی اور نبی آخر الزمان حضرت محمدۖ کی ذات پاک اور تحفظ ناموس رسالت کے لئے تحریک کا اعلان کیا اور اُس پر پوری طرح سے پہرہ دیا ایک تاریخ ساز کارنامہ ہے۔ سالانہ عرس سے جہاں پیر علاؤ الدین صدیقی کے ہزاروں مریدین اور عقیدت مندوں نے شرکت کی اسی جذبہ کے ساتھ ہزاروں کی تعداد میں خواتین نے بھی شرکت کی اور برطانیہ بھر سے قافلے عرس مبارک میں پہنچے۔ عرس کی تقریب سے علماء اور مشائخ عظام عالمی نے روحانی پیشوا پیر علاؤ الدین صدیقی کی دینی اور ملی خدمات کو سراہا اور بہترین الفاظ میں انہیں خراج عقیدت پیش کیا۔ علماء اور مشائخ عظام میں سے پیر محمد جہانزیب بادشاہ موڑھوی، پیر ظہیر الدین صدیقی دربار عالیہ نیریاں شریف، صاحبزادہ حماد صدیقی، صاحبزادہ حسن صدیقی، علامہ قمر الزمان عافمی، علامہ پیرزادہ امداد حسین، علامہ ساجد محمود فراشوی، علامہ پیر محمد عبدالعتیق، مفتی گل رحمن قادری، خلیفہ مفتی عبدالرسول منصور الازہری، علامہ خلیفہ پیر مصباح الماملک لقمانوی، خلیفہ علامہ غلام جیلانی، علامہ قاری طیب نقشبندی، مفتی محمد اسلم نقشبندی خلیفہ علامہ غلام ربانی افغانی، مفتی ایوب اشرفی، علامہ سید تنویر شاہ، علامہ سید لخت حسین شاہ، علامہ اعجاز نیروی، مفتی محمد نظام الدین مصباحی، مفتی عبدالکریم جماعتی، علامہ نیاز احمد صدیقی، علامہ امام عاصم، علامہ پیر طیب الرحمٰن، علامہ عبدالرحمٰن سلطانی، علامہ منظور ربانی، خلیفہ علامہ نواز ہزاروی، علامہ نصر اللہ نقشبندی، علامہ حافظ منیر احمد الازہری، علامہ ثناء اللہ سیٹھی، علامہ قاری محمد حنیف حسانی، علامہ عاطف جبار حیدری، علامہ ڈاکٹر مشرف حسین، امام محمد عادل شہزاد، امام عاصم حسین، علامہ جمیل احمد افغانی، علامہ حافظ طاہر علی الازہری، علامہ حامد قدوس ہاشمی، حافظ عبدالقادر نوشاہی، علامہ عبدالقادر رضا، علامہ قاری انور قمر، علامہ محمد یوسف قمر، قاری آمین نقشبندی، علامہ قاری محمد یونس نقشبندی، علامہ قاری محمد آزاد نقشبندی، علامہ محمد شفیق نقشبندی، مفتی محبوب الرحمٰن قادری، حافظ محمد بلال نقشبندی، قاری منیر احمد نقشبندی، قاری صفوت شہزاد احمد قادری، عمران چوہدری، حافظ قاسم چشتی، علامہ عمر حیات قادری، امام حافظ عثمان ڈار، علامہ سید طارق معسود شاہ، علامہ ریاض احمد سمدانی، علامہ ریاست قادری، علامہ ضیاء الاسلام ہزاروی، علامہ عابد چشتی، علامہ اعجاز احمد نیروی، حافظ مبارک حسین، آفتاب زمان، چوہدری پرویز اختر، کونسلر وسیم ظفر، چوہدری عنصر رحمٰن، راجہ اسد ملک، ملک رحمت اعوان، مرزا پرویز صدیقی، علامہ رضا رضوی، قاری سعید احمد نورانی، خلیفہ عبدالرحمٰن، خلیفہ مظہر اقبال، خلیفہ محمد سبحان، صوفی جاوید اختر، مفتی محمد اسماعیل، حافظ محبوب یوسف، حافظ ساجد ملک، حافظ محمد رمضان اور دیگر علماء اور مشائخ نے بھی خطاب کیا۔ عرس مبارک میں پورا دن لنگر شریف کا بہترین اہتمام کیا گیا تھا جبکہ عرس کی تقریب میں بارگاہ رسالت میں ہدیہ نعت شریف اور علماء اکرام نے پیر علاؤ الدین صدیقی کی زندگی پر روشنی بھی ڈالی۔عُرس مبارک کی لائیو کوریج بھی میڈیا پر دکھائی گئی۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں






آج کا مکمل اخبار پڑھیں

یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved