دنیاکوباورکراناہوگااسلام انسانی حقوق کاعلمبرداراورضامن ہے،پیرامین الحسنات
  11  جولائی  2018     |     یورپ

برمنگھم (اوصاف نیوز) عصری تقاضوں سے نبرد آزما ہونے اور نبی کریم حضرت محمد صلی اﷲ علیہ وسلم کی حرمت اور شان کریمی کی بحالی کیلئے عالمی سطح پر مختلف مذاہب اور معاشرتی گروپس کی حمایت سے موثر اقدامات اٹھائے جانے کی از حد ضرورت ہے' ہمیں دنیا کو باور کروایا جانا چاہئے کہ اسلام نہ صرف مسلمانوں بلکہ پوری کائنات کی ہر چیز اور پوری انسانیت کے حقوق کا علمبردار اور ضامن ہے۔ سرزمین یورپ پر مسلمانوں کے پاس اپنی اصلاح' تربیت ' کردار سازی اور زندگی و طرز عمل میں بہترین طریقہ ہے کہ وہ اسلام کی صحیح طور پر ترویج و اشاعت کریں۔ ان خیالات کا اظہار جانشین ضیاء الامت سابق وفاقی وزیر مملکت برائے مذہبی امور پیر محمد امین الحسنات شاہ نے جامعہ الکرم ایٹن روڈ کے سربراہ پیرزادہ محمد امداد حسین کے زیر اہتمام ضیاء الامت حضرت پیر محمد کرم شاہ الازہری کے 20ویں سالانہ عرس مبارک کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ عرس مبارک کی تقریب میں بھارت کے نامور عالم دین علامہ سید محمد ہاشمی میاں' خطیب داتا دربار لاہور پاکستان مفتی محمد رمضان سیالوی' مسلم ہینڈز کے چیئرمین پیر سید لخت حسنین شاہ' خطیب پاکستان مفتی خان محمد قادری' بنگالی شریف پاکستان کے سجادہ نشین پیر محمد مظہر حسین القادری' ہالینڈ سے علامہ افتخار علی چشتی ' خطیب ناروے مفتی محمد زبیر تبسم' دربار عالیہ نیریاں شریف کے علامہ پیر ظہر الدین صدیقی' جامعہ سلطان باہو کے علامہ سید ظفر اﷲ شاہ' علامہ پیر عمران ابدالی' میجر محمد نجیب الرحمن ناز آف ناروے' قاری امیر حسین الازہری' حافظ عبدالرحمن سلطانی' مولانا عمر حیات ہیڈر فیلڈ' صاحبزادہ علامہ غلام جیلانی' امام سلطان محمود الازہری' قاری محمد عاصم آف لیڈز' علامہ افتخار علی چشتی' مفتی محمد رفیق الحسنی' سید طارق مسعود لندن' علامہ ارشد جمیل لندن' قاری حافظ محمد علی شرقپوری' قاری عمر فاروق رادھرم' قاری عبدالحئی شامی' علامہ مفتی محمد اعظم' مفتی محمد اختر علی قادری شفیلڈ' علامہ شبیر حسین ربانی' علامہ حافظ حماد خلیل' علامہ تصدق حسین صدیقی سمیت برطانیہ بھر سے آئے سنی علماء و مشائخ اور جامعہ الکرم برطانیہ کے فارغ التحصیل علماء اور طالب علموں نے بھی خطاب کیا۔ پیر زادہ محمد امداد حسین نے کہا کہ سرزمین یورپ پر جامعہ الکرم واحد سنی ادارہ ہے جو یہاں کے تقاضوں اور ضروریات کے عین مطابق سنی علماء و مشائخ اور علماء کرام کی تشکیل کرکے انہیں جدید علوم سے بہرہ مند کررہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یورپین مسلمانوں کو جہاں بے شمار چیلنجز کا مقابلہ کرنا پڑرہا ہے وہیں پر سنی علماء دین' علماء کرام کی ضرورت بھی ہے برطانیہ میں کوئی ادارہ یا درسگاہ نہیں ہے جو سنی علماء دین پیدا کرے جس کی وجہ سے سنی مسلک کی مساجد اور اداروں کو دوسرے مسالک کے علماء کرام سے خدمات لینی پڑتی ہیں۔ اس لئے ضروری ہے کہ جامعہ الکرم برطانیہ سے تعاون کرنے کے ساتھ اپنے بچوں کو عالم دین بنانے کے لئے اس عظیم دسگاہ سے استفادہ کیا جائے۔ دیگر مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ برصغیر پاک و ہند کے اولیاء اور صوفیاء نے فروغ اسلام کیلئے جو راہیں اور طریقے متعین کئے آج بھی ان پر عمل کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ مرحوم پیر جسٹس کرم شاہ الازہری نے دینی اور مذہبی علوم اور مسلمانوں کی رہنمائی کیلئے ایسا لازوال کردار ادا کیا ہے جس کی نظیر پوری اسلامی دنیا میں نہیں ملتی ہے۔ اسی لئے انہیں ضیاء الامت کا لقب دیا گیا۔ انہوں نے ساری زندگی سنی مسلک اور الام کے تحفظ کے لئے وقف کرکے آنے والی نسلوں کے لئے مثال قائم کردی۔ اس موقع پر مقررین نے ہالینڈ کے جنونی شخص کی جانب سے نبی کریمۖ کی شان میں گستاخانہ خاکے بنانے کا اعلان کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ایسے واقعات اور بیانات مذاہب کے درمیان نفرت اور انتشار کو جنم دیکر تیسری جنگ عظیم کو دعوت دے رہے ہیں۔ عالمی برادری فوری نوٹس لیکر مقدس ہستیوں کے تقدس کیلئے قانون سازی کرے۔ انہوں نے کہا کہ نبی کریمۖ کی شان' مقام اور مرتبے کا مقابلہ کرانا یا خاکے بنانا مسلمانوں کے جذبات سے کھیلنا انتہائی خطرناک ثابت ہوسکتا ہے۔ اسلامی ممالک کو بھی چپ کا روزہ توڑ کر ہالینڈ کے اس جنوبی شخص کے خلاف اٹھ کھڑا ہونا ہوگا۔ اس تقریب میں برطانیہ بھر سے ایک بہت بڑی تعداد نے شرکت کی۔ صاحبزادہ معروف پیرزادہ کی قیادت میں جامعہ الکرم برطانیہ کے طلبہ نے اس تقریب کے جملہ انتظامات سرانجام دیئے اس موقع پر ہر سال کی طرح اس بار کے علماء دین اور عالمات کو اپنی تعلیم مکمل کرنے پر اعزازات سے نوازا گیا 12 سے زائد علماء کی مہمانوں نے باقاعدہ دستار بندی کی جبکہ بارہ عالمات کے والدین نے اپنی بچیوں کے لئے خصوصی چادریں وصول کیں۔ ایک روزہ اس تقریب میں جامعہ الکرم برطانیہ کے سابق طالب علموں اور ان کی فیملز نے بھی شرکت کی۔ تقریب کے اختتام پر پاکستان و برطانیہ کے استحکام' امت مسلمہ کی خوشحالی اور اتحاد بین المسالک کے لئے دعا بھی کروائی گئی۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

یورپ

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved