01:16 pm
ترکی پر پابندیاں زیر غور،یورپی کونسل کا اجلاس 24ستمبر کو طلب

ترکی پر پابندیاں زیر غور،یورپی کونسل کا اجلاس 24ستمبر کو طلب

01:16 pm

پیرس(ویب ڈیسک)ترک صدر رجب طیب اردوان کو خبردار کیا گیا ہے کہ ترکی کو یونان اور قبرص کے ساتھ بڑھتے ہوئے تنازعے کی وجہ سے یورپی یونین کی پابندیوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے،طیب اردوان جارحانہ قوم پرستی کی سیاست پر عمل پیرا ہیں،خطہ تصادم کی جانب بڑھ رہا ہے، اردوان جانتے ہیں کہ ہمارے پاس آپشنز کی کمی نہیں ہے۔  بین الاقوامی میڈیاکے مطابق فرانس کے وزیر خارجہ ژاں یوز لا ڈریاں کا اتوار کو کہنا تھا کہ یورپی وزرا پہلے ہی 'ترکی کے حوالے سے مختلف ممکنہ اقدامات' پر تبادلہ خیال کر چکے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ 'یہ تنازع رواں ماہ یورپی کونسل کے
اجلاس کے دوران ایجنڈے پر سرفہرست ہوگا۔ترکی نے گذشتہ ماہ یونان کے پانیوں کی حدود میں زیرِ زمین تیل اور گیس کے ذخائر دریافت کرنے کے لیے ایک تحقیقی جہاز اور اس کے ساتھ نیوی کا بھی ایک جہاز روانہ کیا تھا۔عرب نیوز کے مطابق صدر رجب طیب اردوان جارحانہ قوم پرستی کی سیاست پر عمل پیرا ہیں جس سے خطے میں تصادم کا خطرہ بڑھ گیا ہے۔ فرانس کے وزیر خارجہ نے ترک صدر پر زور دیا ہے کہ وہ مشرقی بحیرہ روم میں اپنے عزائم پر مذاکرات شروع کریں اور حوالے سے یورپی کونسل کا اجلاس 24 ستمبر کو بلا لیا گیا ہے۔'اب یہ ترکوں پر منحصر ہے کہ وہ دکھائیں کہ اس معاملے پر۔۔۔ بات چیت ہو سکتی ہے۔انہوں نے کہا کہ 'اگر ایسا ہوتا ہے تو ہم مذاکرات کی میز پر تمام مسائل پر گفتگو کر سکتے ہیں۔'بصورت دیگر اردوان کو 'اقدامات کے پورے سلسلے' کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔فرانسیسی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ 'ہمارے پاس آپشنز کی کمی نہیں ہے اور وہ یہ بات اچھی طرح جانتے ہیں۔

تازہ ترین خبریں