03:28 pm
بڑے یورپی ملک میں خطرے کی گھنٹی بج گئی  یلوویسٹ مظاہرین ایک بارپھرسڑکوں پرنکل آئے

بڑے یورپی ملک میں خطرے کی گھنٹی بج گئی یلوویسٹ مظاہرین ایک بارپھرسڑکوں پرنکل آئے

03:28 pm

پیرس(ویب ڈیسک)فرانس میں ییلو ویسٹ تحریک نے ایک بار پھر سراٹھا لیا ہے اور ہزاروں مظاہرین پیرس کی سڑکوں پر نکل آئے ۔غیرملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق ییلو ویسٹ والوں نے کورونا کی بندشوں کے باوجود پیرس کی سڑکوں پر مارچ اور صدر عمانوئیل میکرون کی حکومت کے خلاف زبردست نعرے لگائے ۔ ییلو جیکٹ تحریک منتظمین کی کال پر پیرس میں ایک ہزار کے قریب مظاہرین سڑکوں پر نکلے، تاہم مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپیں بھی ہوئیں ، مظاہرین نے سڑکوں پر توڑ پھوڑ کی اور ایک گاڑی کو بھی آگ لگا دی۔ ، پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے
آنسو گیس کا استعمال کیا۔رپورٹ کے مطابق پولیس نے 250سے زائد افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔ پولیس کی جانب سے کہا گیا ہے کہ مشتعل مظاہرین کے قبضے سے ہتھوڑے، ماسکس، اسکریو ڈرائیورز اور خالی بوتلیں برآمد کر لی گئی ہیں۔ایک سال سے زائد عرصہ سے چلنے والی ییلو ویسٹ تحریک نے کورونا بحران کی وجہ سے احتجاجی مظاہرے روک دیے گئے تھے۔واضح رہے کہ نومبر 2018 سے صدر عمانوئیل میکرون کی مزدور مخالف پالسیوں کے خلاف مظاہرے کیے جا رہے ہیں۔یلوجیکٹ نام سے مشہور ہونے والی اس احتجاجی تحریک کے حامی فرانسیسی شہری صدرعمائوئیل میکرون کی پالیسیوں کو عام لوگوں کی اقتصادی بدحالی اور معاشی دباؤ کی وجہ قرار دیتے ہوئے ان کے استعفے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔