04:34 pm
دنیاکی کوئی طاقت پاکستان کی طرف میلی نگاہ سے نہیں دیکھ سکتی،طاہرہ ناہید

دنیاکی کوئی طاقت پاکستان کی طرف میلی نگاہ سے نہیں دیکھ سکتی،طاہرہ ناہید

04:34 pm

گلگت(اوصاف نیوز)فاطمہ جناح ڈگری کالج برائے خواتین میں یوم پاکستان کی تقریب پرجوش طریقے سے منعقد کی گئی۔ تقریب منعقدہ میں مختلف طبقہ ہائے فکر سے تعلق رکھنے والی خواتین اور شہداء کی بیواوں نے شرکت کی۔ تقریب کی مہمان خصوصی پرنسپل فاطمہ جناح ڈگری کالج برائے خواتین محترمہ پروفیسر طاہرہ ناہید صاحبہ تھی۔ تقریب کا باقاعدہ آغازتلاوت کلام پاک سے ہوا۔ تلاوت کلام پاک کی سعادت تھرڈ ائیرکی طالبہ افسانہ نے حاصل کی۔
تلاوت کلام پاک کے بعد ہدیہ نعت کا گلدستہ طالبہ نے پیش کیاگیا۔ پرنسپل فاطمہ جناح ڈگری کالج محترمہ طاہرہ ناہید صاحبہ نے یوم پاکستان کے تاریخی پس منظر پر تفصیل سے روشنی ڈالی۔ یوم پاکستان کے اہم پہلووں کو اجاگر کرتے ہوئے انھوں نے دو قومی نظرئے کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی بنیاد دو قومی نظرئے پر رکھی گء تھی۔ یہی وہ نظریہ تھا جو حصول پاکستان کی جدوجہد میں سنگ میل ثابت ہوا۔ اور آخر کار انگریزوں اور ہندووں کو مسلمانوں کے الگ وطن کے مطالبے کے آگے گھٹنے ٹیکنے پڑے اور یوں اکابرین اور مسلمانوں کی انتھک جدوجہد کے نتیجے میں 23 مارچ 1940 کو قرارداد پاکستان منظور ہوا۔انھوں نے مزید کہا کہ پاکستان ایک نظریاتی ملک ہے۔ اور جن نظریات پر یہ قائم ہوا ہے اس کی اساس دین اسلام کے بنیادی اصولوں پر قائم ہے۔ ان نظریات کی پاسداری ہم سب کا بنیادی فرض ہے۔ جب تک ان نظریات کی پاسداری رہے گی دنیا کی کوء بھی طاقت ہمیں میلی آنکھ سے نہیں دیکھ سکتی۔ اگر کوء پھر بھی ایسی گستاخی کرنے کی کوشش کرینگے تو ہمارے جانباز سپاہی اور غیور قوم اسے منہ توڑ جواب دیگی اور اس کی حالیہ مثال انڈیا کے بزدلانہ حملے کی ہے۔ جس کا پاک فوج کے شاہینوں نے منہ توڑ جواب دے کر انڈیا کے عزائم کو خاک میں ملا دیا۔ پرنسپل صاحبہ نے دعائیہ کلمات کے ساتھ اپنی تقریر کا اختتام کیا۔آج کی اس تقریب میں تقریری مقابلے کا بھی انعقاد کیا گیا۔ تقریری مقابلے کا عنوان تھا ایمان ، اتحاد اور تنظیم آج کے دور کے تناظر میں۔ طالبات نے فن خطابی کے خوب جوہر دکھائے۔ تقریری مقابلے کے ججزز محترمہ لعل بیگم صاحبہ اسسٹنٹ پروفیسر، محترمہ حسن آرا صاحبہ، اسسٹنٹ پروفیسراور محترمہ گل نسرین صاحبہ لیکچرر تھی۔ محترمہ حسن آرا صاحبہ نے تقریری مقابلے کے نتائج کا اعلان کیا۔ پہلی پوزیشن طالبہ ثمن یونس نے حاصل کی۔ دوسری پوزیشن کی حقدار طالبہ ایمن فلک ٹھری جبکہ تیسری پوزیشن تھرڈ ائیرکی طالبہ علشبہ نے اپنے نام کر لیا۔ شہید کی بیوہ محترمہ سوسن صاحبہ نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اپنیجذبات کا اظہار ان الفاظ میں کیا۔"یہ وطن اللہ پاک کا ایک انمول تحفہ ہے اور اس تحفے کی قیمت ہماری جان سے بھی بڑھ کر ہے۔ میرے شوہر 2016 میں اسکردو میں دوران ڈیوٹی شہید ہوے۔ مجھے اپنے شوہر کی شہادت پر فخر ہے۔ میرا ایک ہی بیٹا ہے۔ اور وہ بھی آرمی آفیسر بن کر اپنے وطن کی خدمت کرنا چاہتا ہے۔ آج کے اس دن کے توسط سے میں آپکو یہ پیغام دینا چاہتی ہوں کہ بحیثیت طالب علم آپ سخت محنت کریں اور اپنے ملک کا نام روشن کرے۔ یہی اپنے وطن کے لئے آپکی صحیح معنوں میں خدمت ہوگی۔ میری دعا ہے کہ اللہ پاک اس ارض پاک کو ہمیشہ پائندہ و تابندہ رکھے یوم پاکستان کے حوالے سے طالبات نے ایک ٹیبلو بھی پیش کیا جس میں 1857 کی جنگ آذادی کے بعد مسانوں کی بدحالی، سر سید احمد خان کی مسلمانوں کو پھر سے یکجا اور متحد کرنے کے لئے جدوجہد، الگ وطن کا مطالبہ، اور آخر کار قائداعظم کی سربراہی میں الگ وطن کے حصول میں کامیابی کے سفر کی صحیح معنوں میں عکاسی کی گئ۔ جسے شرکائ￿ نے بہت سراہا اور خوب داد دی۔ طالبات کے ساتھ ساتھ اساتذہ کرام نے بھی وطن سے اپنے گلہائے عقیدت کا اظہار ملی نغمے کی صورت میں کیا جس کے بول تھے"یہ وطن تمھارا ہے تم ہو پاسباں اس کے ۔آخر میں پرنسپل صاحبہ اور معز ز مہمان گرامی نے شرکاء میں انعامات تقسیم کئے اور یوں قومی ترانے کے ساتھ یہ رنگا رنگ تقریب اپنے اختتام کو پہنچی۔

تازہ ترین خبریں