04:46 pm
 ڈاکٹر ارشاد کی اچانک رحلت، موصوف کی یادمیں تعزیتی اجلاس

ڈاکٹر ارشاد کی اچانک رحلت، موصوف کی یادمیں تعزیتی اجلاس

04:46 pm

سکردو(اوصاف نیوز) بلتستان یونیورسٹی کے رجسٹرار، آئی ٹی ڈیپارٹمنٹ کے ہیڈ ،اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر ارشاد کی اچانک رحلت پر موصوف کی یادمیں ایک تعزیتی اجلاس ہوا جس میں بلتستان کے اساتید، طلاب ، لواحقین جن میں ان کی اہلیہ اور بیٹو ں اور بیٹی، بڑے بھائی کے علاوہ کثیر تعداد میں علمی و ادبی شخصیات نے شرکت کی۔اس اجلاس میں مرحوم کے درجات کی بلندی کے لئے فاتحہ خوانی کی گئی
اور ان کی علمی،تعلیمی اورسماجی خدمات کو خراج تحسین پیش کیاگیا۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے بلتستان نیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر محمد نعیم خان نے کہا کہ تعلیمی میدان میں ڈاکٹر ارشاد کی بہت بڑی خدمات ہیں۔ گلگت بلتستان کے تعلیمی میدان میں ڈاکٹر ارشاد کی خدمات ہمیشہ یاد رکھی جائے گی۔ قراقرم انٹر نیشنل یونیورسٹی بلتستان کیمپس کے انچارج کی حیثیت سے نیزبلتستان یونیورسٹی کے ایڈمنسٹریٹریارجسٹرار کی حیثیت سے ان کا کردار مثالی ہے۔ گلگت بلتستان میں ڈاکٹر ارشادکا اپنے شعبے میں کوئی ثانی نہیں تھا۔انہوں نے مختصر مدت میں سینکڑوں شاگرد پیداکئے۔یونیورسٹی آف بلتستان کے مستقبل کے حوالے سے وہ ایک جامع پلان رکھتے تھے۔ڈاکٹر ارشادتوچلے گئے اب ہمیں ایک ارشاد کی جگہ پر سینکڑوں ارشاد پیداکرنے کی ضرورت ہے۔محمد قاسم نسیم نے کہا کہ مرحوم ایک باکردار،فرض شناس،ملنسار، دیانت دار،مخلص اورماہر استاد تھے۔ان کی رحلت نہ صرف بلتستان یونیورسٹی اور ان کے لواحقین کے لئے بلکہ پورے گلگت بلتستان اور ملت کے لئے ایک سانحہ ہے۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے یونیورسٹی کے اساتذہ ڈاکٹر زاکر حسین، ڈاکٹر غلام رضا، ڈاکٹر حاجی کریم، مس حَسین بانو اور لیکچرار عبدالرحمٰن میر نے مرحوم کی بے پایاں قربانیوں پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹر ارشاد علی خود اپنی ذات میں ایک جامعہ تھے۔ جنہوں نے ملک و ملت کی خاطر اپنی جان کا نظرانہ پیش کیا۔ جس کے لئے ہم انہیں خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ہمیں مرحوم کے لواحقین پر فخر ہے اور انہیں سلوٹ کرتے ہیں۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے محمد حسن حسرت نے مرحوم کی تعلیمی خدمات اور طرز زندگی پر تبصرہ کرتے ہوئے مجلس کو سوگوار کر دیا۔ہر آنکھ اشک بار اور پر نم تھے۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے عمران ندیم نے کہا مرحوم ایک ملنسار اور پرخلوص دوست تھے اور ان کی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے یونیورسٹی کے نو منتخب رجسٹرار وسیم اللہ جان نے مرحوم کے ساتھ گزرے لمحات کو یاد کرتے ہوئے مجلس کے ماحول کو غمگین اور سوگوار کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ میں مرحوم ڈاکٹر ارشاد کے ویژن اور مشن پر مکمل عمل کرتے ہوئے ادارے کی بہتری کے لئے کام کرنے کی بھرپور کوشش کرونگا۔

تازہ ترین خبریں