06:35 pm
معاشی خودکفالت کے بغیرترقی ممکن نہیں(وزیراعلیٰ)

معاشی خودکفالت کے بغیرترقی ممکن نہیں(وزیراعلیٰ)

06:35 pm

گلگت(اوصاف نیوز)وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے 3.5 میگاواٹ بگروٹ پاور پروجیکٹ کے سنگ بنیاد رکھنے کے حوالے سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ نئے پاکستان والوں کی طرح صرف تختیاں نہیں لگارہے ہیں بلکہ منصوبے مکمل کررہے ہیں۔ بگروٹ روڈ کا سنگ بنیاد رکھا آج پورا ہورہاہے۔ بگروٹ 3.5 میگاواٹ پاور پروجیکٹ کو بھرپور فنڈز فراہم کریں گے
اور اس منصوبے کو ایک میں مکمل کیا جائے گا۔ ماضی کی حکومتوں نے منصوبہ بندی نہیں کی جس کی وجہ سے بجلی کا بحران موجود ہے۔ ہماری حکومت نے 70 میگاواٹ سے زیادہ بجلی سسٹم میں شامل کیا ہے۔ طلب کو مدنظر رکھتے ہوئے لانگ ٹرم پالیسی بنائی ہے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہاکہ گلگت اور سکردو کے علاوہ کہیں بھی بجلی کا بحران نہیں ہے۔ حکومت بننے کے بعد بتدریج سردیوں میں بھی بجلی کی لوڈشیڈنگ میں کمی کی ہے۔ معیشت کا انحصار بجلی پر ہے اس لئے پاور کے منصوبوں کو مقررہ مدت سے قبل مکمل کرانے پر خصوصی توجہ دے رہے ہیں۔ قوم کو پاوں پر کھڑا کرنا ہے۔ وسائل میں اضافے کی چند لوگ مخالفت کرتے ہیں۔ معاشی حوالے سے خودکفالت کی منزل حاصل کئے بغیر ترقی ممکن نہیں ہوتی۔ مصنوعی تبدیلی نہیں بلکہ حقیقی ترقی کیلئے کام کررہے ہیں۔ سمارٹ میٹرز کی بات کرنے پر لوگوں کو تکلیف ہوتی ہے جو منفی سیاست کرتے ہیں تاکہ گلگت بلتستان میں بجلی بحران کا مسئلہ حل نہ ہو۔وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ منصوبوں کی منظوری کا اختیار صرف عوام کی منتخب حکومت کے پاس ہے۔ چند سیاسی مخالفین کا حفیظ الرحمن کی مخالفت کرنا ہے۔ ہم لوگوں کو گالیاں نہیں اپنی کارکردگی بتاتے ہیں۔ حراموش ترقی کے سفیر میں پیچھے رہ گیا ہے جس کی ذمہ داری ماضی کے سیاستدانوں پر عائد ہوتی ہے جنہوں نے مسلکی اور برادری کی سیاست کی۔ گلگت میں الیکشن کے دوران میری مخالفت میں ایسے بندے کو ووٹ دیئے جنہوں نے گلگت بلتستان میں فرقہ واریت کی بنیاد رکھی۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ گلگت بلتستان میں جو بھی منصوبے بنائے ہیں صرف مسلم لیگ (ن) کے دور حکومت میں بنے ہیں۔ مذہب، قومیت کے نام پر سیاست کرنے والے یہاں بھی ہیں۔ قومیت، مسلک سے بالاتر ہوکر میرٹ پر اہل لوگوں کو سپورٹ کرنا ہے۔ چیف انجینئرز فیلڈ وزٹ کریں تاکہ منصوبے میعار کے مطابق تعمیر ہوسکیں۔ آئندہ سال سردیوں میں بھی 2گھنٹے اور گرمیوں میں مکمل لوڈشیڈنگ کا خاتمہ ہوگا۔گلگت(اوصاف نیوز)وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے دنیور ویسٹ مینجمنٹ کمپنی کے افتتاح اور دنیور1میگاواٹ پاور پروجیکٹ کے سنگ بنیاد رکھنے کے حوالے سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ پہلی مرتبہ دنیور سے مسلم لیگ (ن) کو سیٹ ملی ۔ جو تعمیر و ترقی اس دور میں ہوئی ہے ماضی میں اس کا تصور بھی نہیں کیا جاسکتا تھا۔ حلقہ3 کا امن وامان کے حوالے سے مثالی کردار رہا ہے۔ 4 سال سے گرین اینڈ کلین گلگت بلتستان پر کام کررہے ہیں۔ بڑے دعوے کرنے والوں کو پانچ سال حکومت ملی ایک منصوبے مکمل نہیں کیا۔ عوام کی ذمہ داری ہے کہ ویسٹ مینجمنٹ کمپنی کے ملازمین کیساتھ تعاون کریں۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہاکہ ہمارے دین میں صفائی کو نصف ایمان کا درجہ دیا گیا ہے۔ مساجد میں علماء کو صفائی اور حقوق العباد پر بات زیادہ کرنے کی ضرورت ہے۔ سماجی ڈھانچے کو ٹھیک رنے میں علماء کر بہت بڑا کردار ہے۔ پہلے ملازمتیں فروخت ہوتی تھی لیکن ہماری حکومت نے میرٹ پر بھرتیاں عمل میں لائی۔ مخالفین ایشوز پر سیاست کرنے کی بجائے پسند نا پسند پر بات کرتے ہیں۔وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہاکہ کمیونٹی کے تعاون کے بغیر ترقی ممکن نہیں۔ پبلک پرائیویٹ پارنٹر شپ سے وسائل پر عوام کا حق ہوتا ہے ۔ سول سوسائٹی میں آگاہی لازمی ہے تاکہ عوامی مفاد کے منصوبوں کی تحفظ کیلئے سول سوسائٹی اپنا کردار ادا کرے اور عوامی نوعیت کے منصوبوں کیخلاف سازشیں کرنے والوں کیخلاف سول سوسائٹی بات کرسکے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ سیاسی وابستگیوں سے بالاتر ہوکر عوامی منصوبوں اور تعمیر و ترقی کی پہرہ داری کرنی ہے۔ آئندہ ہماری حکومت آتی تو ترقی کے سفر کو آگے بڑھائیں گے اور ملازمتیں فروخت کرنے والے آئے تو ترقی کی پہرہ داری لازمی کرنی ہوگی۔محمد آباد میں 50بیڈ ہسپتال بنائیں گے۔ دنیور کا علاقہ سیوریج میں شامل ہے۔ ٹریٹمنٹ پلانٹ صوبائی حکومت نے بنایا ہے لیکن موجودہ وفاقی حکومت نے سیوریج کا منصوبہ روکا ہے۔ اگر وفاق سے فنڈز نہ ملے تو صوبائی حکومت بنائے گی۔گلگت(اوصاف نیوز)وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ کینیڈا حکومت نے گلگت بلتستان کی ترقی میں اپنا کردار ادا کیا ہے۔ حکومت تمام اداروں کے ساتھ پارنٹر شپ کے تحت کام کررہی ہے۔ دیرپا ترقی اور کمیونٹی کو آرگنائز کرنے کیلئے جی بی آر ایس پی کا قیام عمل میں لایا ہے ۔ گلگت بلتستان میں ہزہائنس پرنس کریم آغا خان کی خدمات اور شعیب سلطان کا کردار قابل تحسین ہے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ حکومت بہت سے منصوبے اے کے آر ایس پی کے اداروں کے تعاون سے مکمل کررہی ہے۔ کمیونٹی کو بہتر کرنے کیلئے ایفاد پروجیکٹ شروع کیاگیا ہے۔ خودکفالت کی منزل حصو کرنے میں یہ منصوبہ معاون ثابت ہوگا اس منصوبے کی لاگت 18 ارب روپے ہے جس سے 8 لاکھ کنال زمین کو قابل کاشت بنا کر عوام کو دے رہے ہیں۔ اس منصوبے کو بتدریج تمام اضلاع تک وسعت دی جاچکی ہے۔ زرعی شعبہ انتہائی اہم ہے ۔وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ حکومت 2020ء تک گلگت بلتستان کو پلاسٹک فری صوبہ بنائے گی۔ جس کا آغاز ضلع ہنزہ سے کیا گیا ہے تاکہ ماحولیاتی چیلنجز کا مقابلہ کیا جاسکے۔ کاغذ اور کپڑے کے تھیلے بنانے والوں کو بلاسود قرضہ فراہم کریں گے۔ ان خیالات کا اظہار وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے لوکل سپورٹ آرگنائزیشنز (ایل ایس او) کے سالانہ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہاکہ عوام کی معاشی حالت بہتر بنانے کیلئے وزیر اعلیٰ بلاسود قرضے کی سکیم شروع کی ہے جو انتہائی کامیاب رہاہے۔ اس ملک کو سرمایہ دارانہ نظام سے نکال کر عوام کو خودمختار بنانا ہے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہاکہ ملک میں بدقسمتی سے بڑے قرضے کم سود پر ملنا ہے لیکن چھوٹے قرضے زیادہ سود پر دیئے جاتے ہیں۔ ہم نے بلاسود قرضے فراہم کئے ہیں جس کے انتہائی مثبت نتائج سامنے آرہے ہیں۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہاکہ کمیونٹی آرگنائزیشن کا ترقی میں اہم کردار ہے۔ کلین اینڈ گرین گلگت بلتستان ہماری حکومت کا ایجنڈا ہے۔ حکومت تمام پرائیویٹ سیکٹر کے اداروں کے ساتھ مل کر ترقی کو یقینی بنائیں گے۔

تازہ ترین خبریں