06:08 pm
واٹر مینجمنٹ کو ایگریکلچر سے الگ کرکے با اختیار محکمہ بنائیں ،قائمہ کمیٹی کی سفارش

واٹر مینجمنٹ کو ایگریکلچر سے الگ کرکے با اختیار محکمہ بنائیں ،قائمہ کمیٹی کی سفارش

06:08 pm

گلگت (اوصاف نیوز) اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے محکمہ زراعت نے حکومت گلگت بلتستان کو سفارش کی ہے کہ واٹر مینجمنٹ کو ایگریکلچر سے الگ کرکے با اختیار محکمہ بنائیں ۔کمیٹی نے کہا ہے کہ واٹر مینجمنٹ ایک علیحیدہ شعبہ ہے جسکو ایگریکلچر کے ساتھ ملا کر چلانے سے دونوں شعبے متاثر ہورہے ہیں کمیٹی کا اہم اجلاس ڈپٹی سپیکر جعفراللہ خان کی صدارت میں گزشتہ روز اسمبلی کے کانفرنس ہال میں منعقد ہوا
اجلاس میں ممبر اسمبلی راجہ جہانزیب، محکمہ زراعت ، واٹر مینجمنٹ ، جی ڈی اے ، محکمہ ورکس ، ایفاد گلگت بلتستان ،ڈیزاسٹر مینجمنٹ اور محکمہ بلدیات کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔ اجلاس میں واٹر مینجمنٹ کی جانب سے کمیٹی کو تفصیلی بریفنگ دی گئی جس میں بتایا کہ واٹر مینجمنٹ کا ایک الگ شعبہ ہے جس کو چلانے کیلئے ٹیکنکل لوگوں کی ضرورت ہوتی ہے گلگت بلتستان میں اسکو ایگریکلچر کے ساتھ ملایا گیا جس سے ان شعبوں کی ترقی متاثر ہورہی ہے اس پر کمیٹی نے واٹر مینجمنٹ کی بریفنگ پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے حکومت سے سفارش کی کہ واٹر مینجمنٹ کو جلد ایگریکلچر سے الگ کرکے بااختیار ادارہ بنائیں ۔ کمیٹی کے اجلاس میں ڈپٹی سپیکر جعفراللہ خان نے کہا کہ واٹر مینجمنٹ اور ایگریکلچر دونوں اہم شعبے ہیں ان کی ترقی کیلئے سنجیدہ اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے انہوں نے کہا کہ ان شعبوں کو ترقی دیکر علاقے کو معاشی طور پر مضبوط بنایا جاسکتا ہے اور علاقے سے غربت کا خاتمہ ان شعبوں پر توجہ دیکر کرنا ممکن ہے اس موقع پر محکمہ قانون اور دیگر محکموں نے واٹر مینجمنٹ کو بااختیا رعلیحیدہ محکمہ بنانے کی حمایت کی ہے ان کا کہنا تھا کہ اس سے واٹر مینجمنٹ اور ایگریکلچر دونوں شعبوں کی ترقی ہوگی اور ان شعبوں پر کام مزید بہتر انداز میں ہوگا۔ڈپٹی سپیکر نے اس موقع پر مزید کہا کہ کمیٹی کے سفارشات کو اسمبلی کے آیندہ اجلاس میں پیش کرینگے تاکہ اسمبلی سے جلد منظور ہوسکے اور بروقت ان شعبوں کی ترقی کے لیے اقدامات کیے جاسکے۔